ایم اے تبسمتازہ ترینکالم

جمہوریت صرف ایک سلوگن

ملک کے وجود میں آنے کے66 سال بعد آج بھی ہم ایک منتشر قوم ہیں۔اخلاقی اقدار کا تو ویسے ہی جنازہ نکل گیا ہے ‘ مگر با ت یہا ں ختم نہیں ہو تی معشیت‘ معاشرت‘ طبقاتی تقسیم‘ کرپشن ‘ تمام قدرتی وسائل کے باوجود توانائی کا بحران‘ لو ٹ مار ‘ تعلیم و صحت کے مسائل ‘ عدل کی عدم فراہمی‘ وڈیرا کلچر ‘ لسانی و مذہبی منافرت‘ بے روزگاری‘ اور غربت جیسے بے شمار مسائل ابھی بھی منہ کھولے بیٹھے ہیں۔ ہم سے بعد میں آزاد ہو نے والے ممالک ترقی میں آج ہم سے کہیں آگے ہیں یقیناًان کے پاس بھی وسائل محدود تھے ‘ تو پھرایسا کیوں ہے کہ وہ ہم سے آگے نکل گئے اور ہم آج بھی زوال کا شکارہیں؟؟ اس کی سب سے اہم اور بنیادی وجہ ہے کرپٹ نظامِ انتخاب اور جعلی ڈگریوں والے نام نہاد عوامی نمائندے۔پاکستان میں رائج موجودہ نظامِ انتخا ب کسی بھی طرح اسلام کے دیئے ہوئے تصورات کے مطابق نہیں اور نہ ہی یہ عوام کی حقیقی نمائندگی و حقیقی جمہوریت کی عکاسی کر تا ہے بلکہ یہ تو بدمعاشوں‘ چوروں‘ لٹیروں‘ وڈیروں کا نظام ہے جو مل بیٹھ کے کھانے کو’’مفاہمت‘‘ کا نام دیتے ہیں اور اپنی اپنی باری پر خوب سیر ہو کر کھاتے ہیں۔الیکشن کے قریب آتے ہی ہر امیدوارفریب کا لبادہ او ڑھے ہوئے جھوٹے ہتھکنڈے استعمال کر تے‘ جھوٹی تشہیر کر تے ‘ اور زور و شو ر سے نعر ے لگاتے ہوئے حریف کے مقابل زیادہ ووٹ حاصل کر نے کے لیے عوام کو بے وقوف بناتا ہے۔ اور اس کے لیے بھاری رقم خرچ کرتا ہے اورجو سب سے اونچا داؤ لگا کر یہ کھیل کھیلتاہے وہ کامیا ب ہو جا تا ہے۔ ایسا نظامِ انتخاب سراسر غیر مؤثرہے جہاں نہ تو کو ئی رکن اور نہ ہی کو ئی حکو مت عوام کی اکثریت سے آگے آتی ہے۔ ایسا نظامِ انتحاب صر ف سرما یہ داروں اور جاگیرداروں کے مفادات کا تحفظ کر تا ہے اورصر ف وہ ہی منتخب ہو سکتے ہیں کیو نکہ مو جو دہ نظامِ انتحاب کے تحت کسی امیدوار کو قو می اسمبلی کا الیکشن لڑ نے کے لیے 10 سے 20 کروڑ جبکہ صوبائی اسمبلی کا الیکشن لڑنے کے لیے 10سے 15کروڑ روپے در کا ر ہیں۔اس ملک کی 98% فیصد عوام محنت کش ہے پڑھے لکھے اور شعور رکھنے والے ان حالات میں آگے نہیں آسکتے اور اس صورت میں پھر عوام کی تقدیر کا فیصلہ وہ 2% لو گ کر تے ہیں جنہیں غریب کے مسائل اور اس کی تکالیف سے کو ئی سروکار نہیں ہوتا۔ اراکینِ پارلیمنٹ میں سے 90%ایسے ہیں جنہوں نے آج تک اپنا مائیک آن نہیں کیا بلکہ اب تو میڈیا بھی یہ دکھا چکا ہے کہ کیسے اکثراراکین دورانِ اجلاس بھی نیند کے مزے لے رہے ہو تے ہیں۔ ایسے لو گو ں سے بہتری کی امید کہا ں کی جا سکتی ہے۔اسی کا نتیجہ ہے کہ ملک کی تقدیر کا اختیار غیر ملکی قوتوں کو دے دیا گیا ہے۔آئے دن کوئی نہ کوئی اہل کار ایسا کارنامہ سر انجام ضرور دے دیتا ہے کہ اسے نااہل قرار دے دیا جاتاہے مگر اس کے باوجود در حقیقت وہ نااہل نہیں ہوتے ایسا توبچاری عوام کوتسلی دینے کے لیے د کھاوے کوکیا جاتا ہے۔ کرپشن کی بدولت پاکستان پر موجودہ قرض اربوں ڈالر ہو گیاہے ،مہنگائی کئی سو گنا بڑھ گئی ہے ، لوگ مر رہے ہیں، کراچی ‘َکوئٹہ’ کی حالت قابلِ رحم ہے۔لوگ بجلی ،سوئی گیس اور پانی کی بنیادی ضروریات سے محروم ہیں۔ہر طرف عجیب افراتفری ہے پتہ نہیں حکومت کن مفادات پر قائم کی گئی ہے۔ ایک صوبے تک میں تو امن و سکون قائم نہیں کر سکے پوراملک کیا سنبھالیں گے یہ لوگ۔اب اس ساری صورتِ حال کو دیکھتے ہوئے یہ بات مانناکہ حکومت کو عوام کا خیال ہے یا وہ اپنے فرائض سے آگاہ ہے تو یہ عقل سے بالاتر بات ہو گی۔ ہمارے ملک کی پارلیمینٹ پر اٹھنے والے اربوں کے اخراجات غیر معمولی ہیں مگر ان سے غریب عوام کو کیا فائدہ ہوا؟؟ ہارس ٹریڈنگ، رشوت، غبن لوٹ مار، خیانت اور ناجائز طریقوں پر کروڑوں اربوں روپے کے قرضے لینا اور دھوکہ دہی سے ان قرضوں کو معاف کروانا ان اراکین کا معمول رہاہے۔اسی طرح عوام کی خدمت کی خاطر کروڑوں روپے کے منصوبے منظور کروائے گئے اور انھیں اپنے ذاتی مفادات کے لیے استعمال کیا گیا۔ ملک کے تمام سنگین مسائل کی جڑ کرپٹ نظامِ انتخاب ہے۔اس کرپٹ نظامِ انتخاب نے قو م کو اس کی حقیقی نمائندگی سے محروم کر دیا ہے اور عوام کے 98%فیصد غریب و متوسط طبقات سے کسی امیدوار کا منتخب ہونا عملاََ نا ممکن ہو چکا ہے۔ اگر 1934کے زمانے کا مطالعہ کریں جب سندھ ممبئی کا حصہ تھاتو جو لوگ اس ممبئی کی حکومت کے وزیر تھے سندھ کی سیاست تب سے آج تک اسی لائن پر چل رہی ہے انہی خاندانوں کی اجارہ داری رہی اور انہی کو منتقل ہوئی۔یہی حال بہاول پور ، بلوچستان اور دیگر حلقہ جات کا ہے۔ ہر دفعہ الیکشن ہوتے رہے،حکومتیں بدلتی رہیں،مگر اسمبلیاں اور اقتداران خاندانوں سے باہر نہیں گیا۔ یہاں جمہوریت صرف ایک سلوگن ہے۔اس ملک میں کتنے حکمران احتساب کے نا م پر بھی آئے ، اسلام کے نام پر بھی آئے، جمہوریت کے نام پر بھی آئے مگر کیا کوئی تبدیلی آئی؟ کو ئی جمہوریت آئی؟ اجارہ دارانہ نظام کا خاتمہ ہوا؟ عوام کو بنیادی سہولیات مہیا کی گئیں؟ ہر گز نہیں۔ بلکہ سب عوام کو جموریت کے نام پر فریب دے کر چلتے بنے۔ کروڑوں روپے لگا کر اقتدار میں آنے والاعوا م کا ، محنت کشوں کا،کسانوں کا، تاجروں کا،اس ملک کا نمائندہ ہو بھی کیسے سکتا ہے؟ وہ تو صرف اپنے ذاتی مفادات کا نمائندہ ہو گا۔ پارلیمنٹ سے ذرا کوئی پوچھے انھوں نے اس قوم کو دیا کیا ہے ؟ 18 کروڑعوام کو بجلی نہیں مل رہی، پانی نہیں مل رہا، آٹانہیں مل رہا، کھانا نہیں مل رہا، گیس نہیں مل رہی،روزگار نہیں مل رہا، لوگوں کی جان ومال کا کوئی تحفظ نہیں ہے۔متذکرہ بالا تمام مسائل کی جڑ کرپٹ نظامِ انتخاب ہے جب تک اس س
ے قوم کی جان نہیں چھوٹ جاتی ان مسائل سے چھٹکارا ملنا بھی نا ممکن ہے۔ ذرا سو چئیے! کیا ہم ترقی یافتہ قوموں کے درمیان ایسے ہی ایک ناکام ریاست کے طور پر تسلیم کیے جاتے رہیں گے؟ کیا ہم ہمیشہ ایسے ہی مہنگائی، گیس، بجلی،معاشی،سماجی،سیاسی،مذہبی، قانونی اورتعلیمی طور پر پسماندہ ہی رہیں گے؟؟ اگر ہم ایسا نہیں چاہتے توپھر یہ وہ وقت ہے کہ جہاں ہمیں "لوگوں”سے "قوم”بنناہے اور اپنے حقو ق کے لیے آواز بلند کرنی ہے تب ہی ممکن ہے کہ کوئی حقیقی تبدیلی آسکے اور ہمارا شماربھی ترقی یافتہ اور خو شحال اقوام میں شمار ہونے لگے۔ورنہ تو پھر یہ تمام مسائل ہماری آنے والی نسلوں تک بھی جوں کے توں ہی رہیں گے اور ہمیشہ کی طرح اس کی زد میں کوئی اور نہیں بلکہ عوام ہی آئے گی۔

یہ بھی پڑھیں  ٹیکسلا :پنجاب کی طرح واہ کنٹونمنٹ بورڈ میں بھی پیر کے روز سیاسی گہما گہما عروج پررہی

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker