پاکستانتازہ ترین

سانحہ راولپنڈی جیسے واقعات ملک کیخلاف ایک گھناؤنی سازش ہے،مخدوم جاوید ہاشمی

javid hashmiملتان(بیورو رپورٹ)پاکستان تحریک انصاف کے صدر مخدوم جاوید ہاشمی نے کہ ہے کہ سانحہ راولپنڈی چشتیاں اور ملتان جیسے واقعات ملک کیخلاف ایک گھناؤنی سازش ہے ،غیر ملکی طاقتیں پاکستان کو غیر مستحکم کرنا چاہتی ہیں تاہم ہمارے علماء کرام کے مثبت طرز عمل کے باعث راولپنڈی سمیت تمام شہروں میں امن قائم ہوا ہے مگر انتظامیہ ناکام ہوئی ہے اور حکمرانوں کو اپنے غیر ملکی دوروں سے فرصت نہیں ، یہ بات انہوں نے منگل کی شام اپنے دورہ امریکہ کے بعد ملتان ائرپورٹ پہنچنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے کہا کہ امریکی قوم بحیثیت اچھے لوگ ہیں مگر ان کی حکومت ، انتظامیہ ، سی آئی اے ، پینٹاگون امریکہ کو تباہی کی طرف لے کر جارہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ ایک ناکام ریاست بن چکا ہے اس کی معیشت دیوالیہ ہوچکی ہے امریکہ مقروض ہوچکا ہے مگر وہ یہودی لابی کی ایماء پر پاکستان سمیت تمام اسلامی ممالک کو تباہ و برباد کرنا چاہتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ نے افغانستان سے واپس جانے کا اعلان کیا ہے اور وہ اب پا کستان کو ایسے ماحول میں ڈالنا چاہتا ہے کہ پاکستان سکھ کا سانس نہ لے سکے حالانکہ امریکہ کو پاکستان کے راستے سے ہی واپس جانا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ خود طالبان سے مذاکرات کرنا چاہتا ہے مگر پاکستان کو اس کی اجازت نہیں دیتا ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ کے ماسٹر آف دی شو کی حیثیت ختم ہوچکی ہے اور وہ اب صرف ایک دھونس اور دھاندلی کے ذریعے حکمرانی کرنا چاہتا ہے ۔ مشرف کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہا کہ یہ ایک الگ ایشو ہے اور ملک میں رونما ہونے والے واقعات الگ ایشو ہیں اور ان واقعات میں حکومت وقت نے بڑی نااہلی کا مظاہرہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ عوام مہنگائی کے علاوہ اب مذہبی منافرت میں بھی پھنس گئے ہیں انہوں نے کہا کہ پہلے پاکستان میں فرقہ ورارانہ وارداتیں چھپ کر ہوتی تھیں مگر اب مذہبی منافرت میں اضافہ ہوگیا ہے اور سرعام یہ کام جاری ہے جس کو علماء کرام مل کر دور کرسکتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ مشرف کیخلاف جو آرٹیکل چھ کے تحت قدم اٹھایا گیا ہے وہ آئین کے مطابق ہے اور پرویز مشرف کے دور میں جو کارروائیاں ہوئی تھیں یا ایف آئی آرز درج ہوئی تھیں وہ غلط تھیں ۔ انہوں نے کہا کہ مشرف کا جرم ثابت ہوجائے گا اس نے پاکستان کا آئین دو بار توڑا ہے اب یہ حکومت وقت پر منحصر ہے کہ وہ 1999ء سے کارروائی کرتی ہے یا بعد میں تاہم یہ پہلا کیس ہے ملک میں جو آئین توڑنے والوں کیخلاف ہوگا اور اس میں اگر حکومت دو نمبر کرے گی تو نتائج بھگت لے گی اب مشرف کو کیا سزا ہوتی ہے کیا نہیں میں کچھ نہیں کہتا مگر مشرف کو آئین کے آرٹیکل چھ کے تحت سزا ہوگی اور اس کے علاوہ کوئی راستہ نہیں ہے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button