تازہ ترینعلاقائی

جھنگ:تحصیل جھنگ کاایک بڑا شہر منڈی شاہ جیونہ کا ایک تعارف

jhangجھنگ((تحصیل رپورٹر)ضلع جھنگ سے چالیس کلو میٹر دور دریائے چناب اور دریائے جہلم کے درمیان تحصیل جھنگ کا ایک بہت بڑا شہر منڈی شاہ جیونہ آباد ہے جو سیاسی طور پر بھی یہ شہر ایک اہمیت کا حامل ہے کیونکہ قیام پاکستان سے لے کر آج تک اس شہر سے تعلق رکھنے والے تمام سیاست دان جن میں سابقہ وزیر داخلہ و صدرپاکستان فٹ بال فاؤنڈیشن سید فیصل صالح حیات ،سابق چئیر مین کرکٹ بورڈ سید ذوالفقار علی بخاری،سابق وفاقی وزیر سید افتخار علی بخاری ،سابق سفیر و وزیر محترمہ سیدہ عابدہ حسین ،سابق پریس سیکرٹری وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف رائے ریاض حسین ڈھڈی ،سابق ڈپٹی قائد حزب اختلافات پنجاب اسمبلی سید محمد چراغ اکبر ،سابق پارلیمانی سیکرٹری مزہبی امورحاجی افتخار احمد خان بلوچ لیکن چاہتے تو یہ معروسی سیاست دان منڈی شاہ جیونہ کی تقدیر بدل دیتے مگر نہ جانے یہ شہر آج بھی چراغ تلے اندھرے کی مانند ہے تھانہ قادر پور میں ٹاوٹ مافیا کا راج دیہی مرکز صحت میں عملہ نہ ہونے کے برابر ،قبضہ مافیا کا راج ،سرکاری ملازمین کی اجارہ داری ،سرکاری درختوں کی اونے پونے داموں کٹائی قائم ودائم ہے تھانہ قادر پور اور پولیس چوکی منڈی شاہ جیونہ میں ٹاوٹوں کا راج قائم ودائم ہے ایس ایچ او قادرپور مہر واجد بھروانہ اور انچارج پولیس چوکی منڈی شاہ جیونہ اشفاق انجم عوام کے مسائل سننے کی بجائے ٹاوٹوں میں گھرے رہتے ہیں اور ماتحت ملازمین سائلوں سے نذرانہ لینے میں مصروف ہوتے ہیں جو مدعی نذرانہ نہ دے ان کو بیرک میں بند کر دینا انہوں نے اپنا وطیرہ بنا لیا ہے اس علاقہ میں چوری ڈکیتی فحاشی کے اڈے جوا مافیا کا راج منشیات فروشی شرعام ہے اور پولیس زیادہ تر ڈکیتی اور زنا کے مقدماے بھی درج کرنے سے گریزاں ہے چند دن قبل گھوڑی والا کا رہائشی سکندر حیات کے گھر سات مسلح ڈاکوؤں نے لاکھوں روپے کی ڈکیتی کی جب سکندر حیات چوکی منڈی شاہ جیونہ رپورٹ درج کروانے آئے تو محرر چوکی چوہدری افضال مدعی سکندر کو بیرک میں بند کر دیا اور بارہ گھنٹے اپنی حراست میں رکھنے کے بعد آٹھ ہزار نذرانہ لے کر رہا کیا گیا اور آج تک ان کی ڈکیتی کا مقدمہ بھی درج نہ ہو سکا نہ جانے یہ کالی بھیڑیں عوام کی خدمت اور انصاف فراہم کرنے کی بجائے ان کی کھال اتارنے میں کیوں مصروف ہیں اسی طرح دیہی مرکز صحت منڈی شاہ جیونہ میں عرصہ دراز سے ڈاکٹر تعینات نہ ہے اور یہ دیہی مرکز صحت ڈسپینسر کے سپرد ہے جو سار سارا دن عوام کی کھال اتارنے میں مصروف ہے اور دی پرچی ایک روپے کی بجائے دس روپے وصول کر رہا ہے منڈی شاہ جیونہ میں قبضہ مافیا کا راج ہے ساٹھ فٹ کے بازار سکڑ کر اب دس فٹ تک آ گئے ہیں باقی رہی سہی کسرریڑی بانوں اور چھابڑا فروشوں نے کر دی ہے ان بازاروں میں اب ٹریفک تو کیا پیدل چلنا بھی دشوار ہو کر رہ چکا ہے فیسکو سب دویثرن اکڑیانوالہ اور فیسکو شاہ جیونہ میں لوٹ مار کا بازار گرم ہے عملہ اور چا رجنگ ڈی بل اور نئے زرعی کنکشن اور ان کے سامان کے نام پر روزانہ لاکھوں روپے نذرانہ بٹورا جاتا ہے سرکل شاہ جیونہ کے عملہ نے لاکھوں روپے مالیت کے سرسبز سرکاری درخت اونے پونے داموں کٹائے جاتے ہیں اب یہ علاقہ کسی نئے مسیحا کی تلاش میں ہے جو آئے اور ا ن کے تمام مسائل حل کرے ۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button