تازہ ترینروہیل اکبرکالم

کپتان کے نام

تحریر۔روہیل اکبر

کپتان عمران خان نے جب سے وزارت اطلاعت میں تبدیلی کی ہے اس وقت سے کچھ سکون سا محسوس ہورہا ہے اب پہلے جیسی لفظوں کی گولہ باری بھی نہیں ہورہی اور حکومتی معاملات بھی درست سمت میں چل رہے ہیں شبلی فراز کے والد احمد فراز کی قربانیاں بے مثال ہیں انہی روایات کو قائم رکھتے ہوئے وزیر اطلاعات بھی اپنے کام میں مصروف ہیں پنجاب کی وزارت اطلاعات تو پہلے ہی بہت اچھی چل رہی ہے امید ہے کہ اب اس میں تبدیلی نہیں ہوگی جبکہ حکومت نے ملک سے کرونا وائرس کے خاتمہ کے لیے بہت اچھے اقدامات کیے خاص کر پنجاب حکومت نے اپوزیشن کی مخالفت اور ڈاکٹروں کی ہڑتال کے باوجود صوبہ میں کرونا وائرس کی روک تھام کے لیے موثرکام کیا اور اس سلسلہ میں فیاض الحسن چوہان کی سرپرستی میں محکمہ تعلقات عامہ نے بھی اپنا تاریخی کردار ادا کرتے ہوئے عوام میں شعور اجاگر کیا یہی وجہ ہے کہ اتنی زیادہ سختی اور پابندی کے باوجود عوام نے وزیراعظم عمران خان اور وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار کی طرف سے لاک ڈاؤن کی حمایت کرتے ہوئے اپنے اپنے گھروں میں رہ کر کرونا کو شکست دی اگر عوام میں یہ شعور پیدا نہ کیا جاتا تو آج ہمارے ہاں صورتحال مختلف ہوتی اور اس سلسلہ میں سیکریٹری اطلاعات پنجاب راجہ جہانگیر انور اور ڈی جی پی آر اسلم ڈوگر کی وجہ سے میڈیا کے زریعے عوام کی آگاہی کے لیے جو کام کیا گیا وہی پنجاب حکومت کا اصل امتحان تھا جس میں وہ کامیاب رہی اور عوام نے گھروں میں رہ کر اپنے بہترین مفاد میں کام کیا اور اگر اسی طرح باقی صوبے بھی کام کرتے تو کسی کو کوئی مشکل پیش نہ آتی آج میں اپنے دوست شاکر عمر گجر کا ایک خط بھی شامل کرونگا جنہوں نے ملک میں دودھ کی پیداوار بڑھانے کے حوالہ سے حکومت کو چند تجاویز پیش کی ہیں اگر ان پر عمل ہوجائے تو اس سے نہ صرف یہ انڈسٹری بھی اپنے پاؤں پر کھڑی ہو جائیگی بلکہ عوام کو صاف ستھرا اور خالص دودھ بھی ملے گا کیونکہ دودھ ہماری زندگی کا ایک اہم حصہ ہے بلخصوص نونہالوں کی تو خوراک ہی دودھ ہے اگر بچوں کو ملاوٹ اور کیمیکل سے پاک دودھ ہی نہ ملے تو ہمارا مستقبل کیسے پروان چڑھے گا اس لیے حکومت کو اس پر خصوصی توجہ دینی چاہیے شاکر عمر گجر کے طویل خط کو مختصر کرتے ہوئے آپ کی خدمت میں پیش کررہا ہوں۔جناب وزیراعظم پاکستان عمران خان صاحب،  اس خط کا فائدہ اٹھاتے ہوئے، میں آپ کی ٹیم کے ساتھ پاکستان میں موجودہ کوویڈ 19 حالت کو جس طریقے سے سنبھال رہا ہوں اس کی تعریف کرنا چاہتا ہوں، امید ہے کہ ہم جلد ہی اس صورتحال پر قابو پالیں گے“انشاء اللہ”۔  پاکستانی قوم تازہ دودھ کے استعمال کی عادت ہے جو تغذیہ اور صحت سے بھرپور ہے، پاکستان کو دنیا کا چوتھا بڑا دودھ تیار کرنے والا ملک قرار دیا گیا ہے، ہمارا معیاری تازہ دودھ ضروری اجناس ہے جو بچوں، بزرگ شہریوں اور مجموعی طور پر پاکستان کے لئے قدرتی غذائیت کا ذریعہ ہے، اس مشکل وقت میں، یہ قوم کو صحت مند رکھنے اور ان کے مدافعتی نظام کو مضبوط بنانے کے ل natural قدرتی سستا قدرتی وٹامن ذریعہ فراہم کرتا ہے۔  دوسری طرف مویشیوں اور دودھ کا شعبہ زرعی جی ڈی پی میں اہم کردار ادا کرتا ہے اور دیہی علاقوں میں روزگار کا 40٪ سے 50٪ تک احاطہ کرتا ہے اور شہری علاقوں کی اچھی طاقت کا انحصار مویشیوں اور دودھ دینے والے جانوروں کی کھیتی پر ہے۔  دوسری طرف، ڈیری سیکٹر میں مانگ میں ڈرامائی کمی کے ساتھ شدید چوٹ پہنچی کیونکہ کراچی سے زیادہ تر رہائش اپنے دیہات، شہر یا ملک منتقل کردی گئی ہے اور ہوٹلوں، شادی ہال، آئس کریم، جوس شاپس اور انڈسٹری کینٹینوں کا تجارتی کاروبار بند ہے۔ روزانہ اڈوں پر بہت سے کسان ڈیفالٹ ہوکر اندرون سندھ، پنجاب اور ملک کے دیگر مقامی علاقوں میں منتقل ہو رہے ہیں۔ ڈیری اینڈ کیٹل فارمرز ایسوسی ایشن پاکستان پورے پاکستان کا احاطہ کرتا ہے اور ماہرین اور بزنس مین جیسے ڈاکٹروں، غذائیت سے متعلق ماہر، پروسیسنگ ماہر، فیڈ پروسیسر فارمنگ کمیونٹی، ریسرچ اینڈ ڈویلپمنٹ آرگنائزیشنز اور زراعت کاشتکاروں کے سلسلے میں مستقل طور پر محیط ہے۔ حالیہ صورتحال میں ڈیری سیکٹر کو خسارے کی صورتحال کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے لیکن وہ خدمات کی فراہمی، ان کے کاروبار اور ملازمت کو برقرار رکھنے کے لئے پرعزم ہیں جو ایک اچھی علامت ہے، تاہم ہم مستقبل کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لئے مندرجہ ذیل معاملات پر حکومتی مدد اور ریلیف پیکیج کی تلاش کرتے ہیں۔ ڈیفالٹ سے پہلے طے شدہ کاشتکاروں کی امداد کے لئے فنڈ مختص کیا جانا چاہئے۔ صفر سود کی شرح پر قرض فراہم کریں۔ ڈیری اور مویشی کالونیوں کے لئے نئی اراضی مختص کی جانی چاہئے اور موجودہ اراضی لیز کو 30 سال تک بڑھایا جانا چاہئے جو ڈیری فارمنگ کے مقصد پر جاری کیا جاتا ہے۔ دودھ پینے اور ان کے بچھڑے کی انوکھی نسلوں کی بچت ہماری ذمہ داری ہے جو صرف حکومت کے تعاون سے ہی ممکن ہے، اس سلسلے میں ہم آپ سے درخواست کرتے ہیں کہ شہروں کے قریب دیہی علاقوں میں زرعی اراضی فراہم کریں تاکہ کاشتکار آسانی سے اپنے دودھ پالنے والے جانوروں کی ریسائیکل کرسکیں۔  ان بچھڑوں اور انوکھی نسلوں کے ذبح کرنے پر پابندی لاگو کی جانی چاہئے اور اس کیلئے پنجاب حکومت میں پہلے سے چلنے والے الاؤنس الاؤنس کو مختص کیا جانا چاہئے۔ حکومت یوٹیلیٹی بلوں پر سبسڈی کی شرح فراہم کرے۔ صوبائی سطح پر فوڈ اتھارٹیز کو فوری طور پر دودھ کی تیاری کے تمام علاقوں میں تربیت کا اہتمام کرنا چاہئے تاکہ بیٹر سیفٹی سسٹم ہو۔  ڈی سی ایف اے پاکستان تجویز کرتا ہے کہ موجودہ صورتحال پر قابو پانے کے لئے اور دودھ کی مصنوعی قلت کی کھوج  جانچ کی جائے  مڈل مین کو اس نظام سے ہٹایا جائے اور براہ راست تقسیم کا نظام متعارف کرایا جائے اور اسی حکومت کے لئے تکنیکی اور مالی مدد فراہم کی جائے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ اگر ڈیری سیکٹر کو مذکورہ بالا مدد فراہم کی جاتی ہے تو وہ کوڈ – 19 کی بنیادی حالت میں کھانے کی اہم وجوہ کی اہم حالت میں دودھ کے شعبے کو اپنے کاروبار کو برقرار رکھنے کے لئے ہی نہیں بلکہ دیہی، شہری روزگار، جانوروں کے کاروبار اور زراعت کا بھی انتظام کرے گا۔  اناج، تیل کے بیج اور دالوں کا دودھ، ملاوٹ جیسے سامان پر روشنی ڈالی گئی ہے اور وہ ممالک جو پیداوار میں خود کفیل ہیں چیلنجوں کا مقابلہ کرنے میں محفوظ ہیں۔آپکا خیر اندیش محمد شاکر عمر گجر صدر -ڈی سی ایف اے پاکستان۔

یہ بھی پڑھیے :

What is your opinion on this news?

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker