تازہ ترینصابرمغلکالم

کھجور

sabir mughalرب کریم نے سورہ رحمٰن میں فرمایا ۔اور تم رب کی کون کون سی نعمت کو جھٹلاؤ گے۔مومنوں کے لئے جنت میں میووں کی بھی بشارت دی گئی جو پھل (FRUITS)کی شکل میں ہوں گے،دنیا بھر میں اس وقت انواع و اقسام کے پھل موجود ہیں،تحقیق کے مطابق دنیا کے پہلے دس مزیدار پھلوں میں آم ،اسٹرابری،تربوز،انناس ،سیب،بلیو بیری ،رس بھری،آڑو ،انگور اور کیلا شامل ہیں، اسی طرح پسندیدہ ترین پھلوں میں بالترتیب ا سٹرابری،آم،تربوز،انگور،کیلا،اورنج،انناس،اور رس بھری ہیں،نایاب اور مزیدار پھلوں کی پہلی دس قسموں میں ۔Achee ۔ہے جو جنوبی افریقہ میں پایا جاتا ہے جواندر سے سفید اور پیلا ہوتا ہے،اسے بطور سبزی بھی استعمال کیا جاتا ہے اس کے بیج بعض نشہ آور ادویات میں بھی استعمال ہوتے ہیں اسی وجہ سے امریکی محکمہ فوڈز انڈ ڈرگز نے اس پر پابندی لگا رکھی ہے۔2 ) ( Ranibuton۔کٹھا اور میٹھایہ پھل جنوبی اور مشرقی ایشیا ء میں ملتا ہے،اس کا ذائقہ کافی حد تک انگور سے ملتا ہے یہ خون کے سیلز کو مضبوط اور جسم میں کاپر پیدا کرتا ہے،) 3 (ُ Phyalis ۔یہ پھل جنوبی ایشیا میں عام مل جاتا ہے اس کی نسل مٹر کی فصل سے ہے ،وٹا من B اور Cاس میں وافر مقدار میں موجود ہوتے ہیں(4) Jabuticaba۔یہ پھل جنوبی برازیل میں پر پرل کلر ہوتا ہے جس کی لمبائی ایک انچ تک ہوتی ہے،(5) Africon Homed Cucober۔اسے دنیا کا پرانا ترین پھل بھی کہا جاتا ہے 3ہزار سال قبل افریقہ میں اس کی دریافت ہوئی ،(6) Durian۔یہ پھل انڈونیشیا ، ملائشیا ،تھائی لینڈ،چائنا،جاپان اور سنگا پور میں عام ہے ایشیا کے بعض جنوبی علاقوں میں اسے پھلوں کا بادشاہ بھی کہا جاتا ہے اس کو گودا بہت ذائقے دار بلکہ بو سخت ناگوار ہوتی ہے ، (7) Miracle Fruit۔یہ چھوٹا سا پھل جنوبی افریقہ میں ملتا ہے زیادہ تر اسے طبی مقاصد کے لئے استعمال کیا جاتا ہے کینسر کے لئے یہ بہت مفید ہے، (8) Mangosleen۔مغربی مارکیٹ میں عام طور پر جبکہ انڈونیشیا اور ساؤتھ ایشیاء کے بعض ممالک میں بھی پایا جاتا ہے ،کہا جاتا ہے وٹامن Cکی سب سے بڑی مقدار اس پھل میں ہوتی ہے ،ادویات میں اس کا استعمال بہت زیادہ ہے،(9) Cherimoya۔یہ پھل ارجینٹینا اور چلی کے مغربی علاقوں پایا جاتا ہے یہ بہت مہنگا اور لذیذ پھل ہے، انسانی صحت کے لئے بے حد مفید ہے، (10) Cupuo۔امازون کے جنگلات میں پائے جانے والے اس پھل کی لمبائی 8انچ اور وزن دو کلوگرام تک ہوتا ہے۔پاکستان کے قومی پھل ۔آم ۔اور امرودہیںآم کو پھلوں کے بادشاہ کے نام سے بھی پکارا جاتا ہے ،آ م انڈیا اور فلپائن کا بھی قومی پھل ہے،امریکہ کا قومی پھل خوبانی۔آسٹریلیا،جرمنی اور انگلینڈکا سیب۔کمبوڈیا کا کیلا۔بنگلہ دیش کا کٹھل ۔چین کا Jubue۔ملائیشیا کا Ramboton۔آذربائیجان اور ایران کا انار۔آم کے حوالے سے پہلے دس ممالک میں بالترتیب انڈیا،چائنا،تھائی لینڈ،پاکستان ،میکسیکو،انڈونیشیاء ،برازیل،بنگلہ دیش،فلپائن اور نائجیریا۔کیلا پیدا کرنے والے پہلے دس ممالک میں انڈیا،یوگنڈا،چائنا،فلپائن،ایکوڈور،برازیل، کولمبیا،کیمرون اور تنزانیہ،انگور کی پیداوار میں چائنا،اٹلی،امریکہ،سپین،فرانس،ترکی،چلی،ارجنٹینا،انڈیا اور ایران پہلے نمبروں پر ہیں،اورنج پیدا کرنے والے پہلے پانچ ممالک برازیل،امریکہ،انڈیا،چائنا اور میکسیکو،آڑو کے لئے ترکی،ایران،ازبکستان،اٹلی،الجیریا، پاکستان ،فرانس،میکسیکو،یوکرائن اور جاپان ٹاپ ٹین ہیں،کھجور پیدا کرنے والے ممالک میں مصر دنیا بھر میں پہلے نمبر پر ہے جبکہ سعودی عرب،ایران،متحدہ عرب امارات،الجیریا،عراق،پاکستان ،اومان تنسانیہ اور لیبیا کا نمبر بعد میں آتا ہے،کھجور پیدا کرنے والے دیگر اہم ممالک میںآسٹریلیا ،سپین،شمالی افریقہ،ساحل ریجن آف افریقہ،افغانستان،بنگلہ دیش،اسرائیل،چین،فجی،کیلیفورنیا،میکسیکو،ہیٹی، مراکو ،یمن کویت،مراکش،قطر،ریاست ہائے متحدہ امریکہ،ترکمانستان،بحرین،موریطانیہ،صومالیہ،سوڈان اورچاڈشامل ہیں،پاکستان کے علاقوں خیر پور،سکھر،تربت،پنجگور،گوادر،ڈیرہ غازی خان،ڈیرہ اسماعیل خان،مظفر گڑھ،ملتان،جھنگ ،بہالوپور کھجور کی کاشت کے حوالے سے نمایاں ہیں،پاکستان میں کجھور کا 85فیصد خشک کھجوریعنی چھوہارا میں تبدیل کیا جاتا ہے، پاکستان میں اس کے علاوہ آڑو، ناشپاتی ،سیب،انگور،خوبانی،آلو بخارا،سردا،کنوں،مالٹا ،کیلا،تربوز اور خربوزہ وغیرہ بھی بے حد مقبول ہیں،ان تمام پھلوں کے باوجود کھجو دنیا کا واحد پھل ہے جو سب سے مقدس ماہ میں جہاں بھی مسلم کمیونٹی رہتی ہے وہاں سب سے زیادہ استعمال کیا جاتا ہے،اس کا استعمال مذہبی ،ثقافتی لحاظ سے اہم اور بنیادی شئے کے طور پر کیا جاتا ہے ،باالخصوص رمضان المبارک میں اس کی اہمیت تمام مسلم ممالک میں نمایاں ترین طور پر اجاگر ہو کر آتی ہے،مسلم گھرانوں میں افطاری کے وقت کوئی ایسا دستر خوان نہیں ہو گا جہاں کھجور موجود نہ ہو، اسے عام ہندوستانی اور پاکستانی زبان میں کھجورجبکہ انگریزی میں اسے DATEکے نام سے پکارا جاتا ہے،قرآن کریم میں کھجور کو نخل اور رطب کے نام سے بھی پکارا گیا ہے،کھجور کے پھل گرمیوں میں لگتے اور گرمیوں میں ہی پکتے ہیں،سورۃ البقرہ میں ارشا دباری تعالیٰ ہے۔کیا تم میں سے اسے کوئی پسند رکھے گا کہ اس کے پاس ایک باغ ہو کھجور وں کا اور انگوروں کا۔ایک اور جگہ ارشاد ہے۔اور وہی ہے جس نے پیدا کئے باغ (کھجور)اور کچھ زمین پر بچھے ہوئے کھیت جن میں رنگ برنگ کے ذائقہ دار پھل ہیں۔حضرت عائشہؓ فرماتی ہیں۔جس گھر میں کھجوریں ہوں اس گھر والے کبھی بھوکے نہیں رہیں گے،،کھجور زیادہ تر مصر اور خلیج فارس کے علاقوں میں پائی جاتی ہے،دنیا کی سب سے اعلیٰ قسم کی کھجور ۔عجوہ۔جو سعودی عرب کے مقدس ترین شہر مدینہ منورہ اور اس کے مضافات میں ہی جاتی ہے،کھجور کی دیگر اہم اقسام میں بیض،برنی،برحی،غبر،حلوہ،جبیلی،کبیحکہ،خلاص،خضری،خضاب ،مبروم،مکتومی،مسکاتی،لبانتۃ،رابعتہ،رشودیہ،سویرا،شلابی،ذاوی،مرتانۃ ،سکری،سلطانہ،لونہ،میضیی شقری،ساریہ ،شیشی شامل ہیں۔کھجور کے درخت اکثر مذاہب میں مقدس مانے جاتے ہیں،مسلمانوں میں اس کی اہمیت کی انتہا یہ ہے کہ حضور نبی اکرمﷺ نے تما م درختوں میں سے اس درخت کومسلمان کہا ہے،کھجور کے درخت کو خوشی کا پھل بھی کہتے ہیں،کہتے ہیں حضرت موسیٰ ؑ کی قوم پر آسمان سے کھانا اترتا تھا اسی میں جنت کے پھل ہوتے انہوں نے قدر نہ کی تو اللہ تعالیٰ نے یہ نعمت اتارنا بند کر دی ان میں کھجور بھی تھی۔احادیث کے مطابق اگر جنت کا کوئی پھل موجود ہے تو وہ ۔عجوہ ۔کھجور ہے جو جادو سے نجات،آنکھوں کے امراض،جنون،پاگل پن اور دل کے امراض کے لئے شفا ہی شفا ہے،یہ واحد پھل ہے جو حضور نبی اکرم ﷺ کی مرغوب ترین غذا تھی اس کا درخت بھی آپ ﷺ نے اپنے دست مبارک سے لگایا ،حدیث مبارکہ کے مطابق ۔جو شخص صبع کے وقت ۔عجوہ۔کھائے اس کو اس دن جادو اور زہر نقصان نہیں پہنچا سکتا(صحیح بخاری ۵۷۷۹)،قرآن مجید اور تمام مقدس کتابوں میں اس کا ذکر ملتا ہے،قرآن مجید میں 20مرتبہ اور بائبل میں40مرتبہ کھجور کا ذکر ہے،طبی تحقیقات کے مطابق کھجور ایک ایسی منفرد اور مکمل خوراک ہے جس میں ہمارے جسم کے لئے تمام غذائی اجزاء مثلاًوٹامننز،سوڈیم،پوٹاشیم،شوگر،کاربوہائیڈریٹس،میگنیشیم،فاسفورس،آئرن اور پانی وغیرہ اس میں پائے جاتے ہیں،کھجور میں فولاد پیدا کرنے کی مقدار 10.6فیصد ہے جو دیگر سبزیوںیا پھلوں کی نسبت بہت زیادہ ہے،رمضان المبارک میں افطار کے وقت کھجور کا انتہائی زیادہ استعمال اس کی افادیت کا واضح ثبوت ہے،چونکہ دن بھر فاقہ کے بعد جسم میں توانائی کم ہو جاتی ہے اس لئے افطاری ایسی مکمل اور سلیم غذا سے کرنے کی ضرورت ہوتی ہے جو زیادہ سے زیادہ طاقت اور توانائی فراہم کر سکے،کھجور یہ تمام مقاصد فوری پورا کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے،کھجور کو کھانے سے منہ کی بدبو جاتی رہتی ہے،اسے پانی میں بھگو کر اس کا یہ پانی پینے سے جگر کی اصلاح ہوتی ہے،بخار،چیچک،تپ دق ،کینسر ،گردوں اوردل کے امراض کے لئے بھی بے حد مفید ہے،نظر میں بہتری اور رات کے اندھے پن میں کو شفاعت نصیب ہوتی ہے،اس کے علاوہ بھی کھجور کے فوائد لاتعداد ہیں

یہ بھی پڑھیں  بھائی پھیرو:دنیا میں آنے کامقصد پورا کرنے کا وقت اگرہا تھ سے نکل گیا تو پچھتاوے کے سوا کچھ با قی نہیں رہے گا ،پیر نقیب الرحمن

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker