تازہ ترینشیر محمد اعوانکالم

خدا گنجے کو ناخن نہ دے

جس طرح سائیکل چلانے والے کو پجارو پر بٹھا دیں تو وہ لازمی کسی دیوار سے دے مارے گا۔بالکل اسی طرح ایک غریب یا درمیانے درجے کے شخص کو اگر بے تحاشہ دولت مل جائے تو اسے سنبھالنا اور ٹھیک سے استعمال کرنا انتہائی مشکل ہے۔ عدالت کے نوٹس میں لانے کے لیے آج ایک ایسے شخص کی روداد لکھی جا رہی ہے جو چند ماہ میں جھونپڑی سے فائیو سٹار ہوٹل میں آگیا۔اپنی سوچوں میں اس نے نجانے کتنے ہیرے تراشے،کتنے تاج محل بنائے اورنہ جانے کتنے خواب بنے لیکن دولت کی دیوی نے چند ماہ میں ہی اسے طلاق دے دی۔اور ایک بار پھر سے وہ انہی ٹوٹی پھوٹی،کچی پکی سڑکوں پر جوتے گھسائیگا جہاں سے وہ ایک دم امیر آدمی بن گیا تھا۔
ضلع ساہیوال کے گاؤں 101/12_L کسووال میں عبدالحمید ارائیں رہتا تھا۔خراب مالی حالات کی وجہ سے کوئی خاص کاروبارنہیں تھا بلکہ اسکے گھر والے لوگوں کے کھیتوں میں کام کاج سے رزق حلال کماتے جب کہ وہ خودفورڈ گاڑی چلاتا تھا۔کچھ عرصہ پہلے اس نے لاہور میں کسی کوٹھی میں ملازمت کرلی۔جہا ں ڈرائیونگ کے ساتھ ساتھ وہ گھر کے کام کاج بھی کرتا تھا۔پچھلے چند ماہ سے اسکے مالی حالات یک دم بدلنے لگے۔اسکے چال چلن اور سوٹ بوٹ سے دولت کی بو آنے لگی۔گاؤں والا پرانا گھر گرا کر نیا بنوایا جس پر اچھی خاصی رقم خرچ کی۔گاؤں میں چونکہ ہر شخص ایک دوسرے کو ا چھی طرح جانتا ہے۔اس لیے گاؤں میں چہ مگوئیاں شروع ہو گئی۔ ہر کوئی قیاس آرائی کر رہا تھا کہ یہ بندہ اپنی مالکن سے فراڈ کرتا ہے یا چوری کرتا ہے یا اس نے کسی امیر سے شادی کر لی ہے۔حالانکہ سب جانتے بھی تھے کہ اس لڑکے کا ماضی بے داغ ہے۔ ابھی چند ماہ پہلے عبدالحمید صاحب نے نئے ماڈل کی سیلون کار لی اور ساتھ ہی گاؤں میں ٹھیکے پر چند ایکڑ زمین بھی لی۔(ٹھیکے سے مراد ایک سال کے لیے کسی کی زمین پرکاشت کرنا اور اس کے بدلے میں ایک سال کا طے شدہ معاوضہ ادا کرنا۔)اگرچہ ان تبدیلیوں نے اسے میدا آرائیں سے چوہدری عبدالحمید بنا دیا لیکن سیلون کو دیکھ دیکھ کر لوگوں کو ا ورزیادہ گدگدی ہونے لگی اور انکی آنکھوں میں شکوک کے ڈورے اور بھی واضح ہونے لگے۔اور آخر تین ماہ پہلے پولیس نے اسے حراست میں لے لیا۔سب سوچ رہے تھے کہ شاید گاؤں کے کسی شخص نے پولیس سے اپنے شکوک کا اظہارکیا ہے۔لیکن پولیس کو درحقیقت شہر کے ایک سنیار (گولڈ سمتھ) نے بتایا تھا کہ یہ شخص سونے کی اینٹ بیچ کر گیا ہے۔ اصل میں پولیس نے تمام جیولرز کو ہدایت کی تھی کہ اگر کوئی شخص سونا یا کوئی جیولری بیچتا ہے تو فورا پولیس کو آگاہ کیا جائے۔کیونکہ انہی دنوں چیچہ وطنی میں ایک بہت بڑی بنک ڈکیتی ہوئی تھی اور چور بنک کی الماریاں تک اکھاڑ کر لے گئے تھے۔
تھانے میں پہنچتے ہی پولیس نے اپنا روپ دکھانا شروع کیا اور چند منٹ بعد ہی عبدالحمید نے بتایا کہ میں نے کوئی چوری یا فراڈ نہیں کیا ۔یہ سب مجھے میری قسمت سے ملا ہے۔اس نے بتایا کہ وہ ایک مرحوم جنرل کے گھر ملازمت کرتا ہے۔جنرل مرحوم کی بیوہ نہایت سلیقہ شعار اور سخاوت پسند عورت ہے۔وہ تنخواہ کے علاوہ بھی اسکی مالی اعانت کرتی رہتی ہے۔ آج سے چوبیس سال پہلے جنرل صاحب ، سابق صدر پاکستان جنرل ضیاء الحق ،جنرل محمد حسین،جنرل اختر عبدالرحمن او ردیگر جرنل کے ساتھ اپنے وطن واپس آرہے تھے تو طیارہ فضا میں حادثے کا شکار ہو گیا۔اور تمام افراد اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔جنرل مرحوم نے آنے سے تین دن پہلے اپنی بیگم کو فون کر کے کہا کہ میں ایک بہت قیمتی تحفہ تمہارے لیے کارگو کر رہا ہوں لیکن تحفہ سے پہلے انکا جسد خاکی گھر پہنچ گیا۔بحرحال کچھ دن بعد کچھ سامان پہنچا جس میں ایک خوبسورت صوفہ سیٹ بھی تھا لیکن اس بیوہ عورت کے لیے اب یہ اشیاء اتنی اہمیت کی حامل نہ تھی۔وقت گزرنے ک ساتھ صوفہ پرانا ہو کر جگہ جگہ سے پھٹ گیا تھا۔بیگم صاحبہ نے کہا کہ حمید یہ صوفہ تم لے لو اسکی پوشنگ وغیرہ کروا کے اپنے کمرے میں رکھ لینا۔اپنے کمرے میں جب پوشنگ تبدیل کرنے کے لیے صوفہ کا کپڑا تارا تو اندر سے سونے کی اینٹیں جنکی تعداد س تھی۔ چونکہ مالکان بھی اس سے لا علم تھے ۔اس لیے یہ کوئی چوری نہیں ہے۔ قسمت کا کھیل ہے۔لیکن پولیس نے حسب روایت اسکی اچھی خاصی دھلائی کے بعد اسے جیل بھیج دیا۔اور اسکی گاڑی کے ساتھ ساتھ اس کی زمین بھی قبضہ میں لے لی۔حالانکہ بیگم صاحبہ نے تصدیق بھی کر دی کہ اس نے عبدالحمید کو صوفہ دیا ہے اور یہ کہ جنرل صاحب نے کسی قیمتی تحفے کا ذکر کیا تھا۔لیکن انکی وفات کے بعد یہ بات اسکے ذہن سے نکل گئی۔
اگرچہ عبدالحمید نے اخلاقی لحاظ سے غلط کام کیا ہے اور اسے ہر گز اخلاقی اقدار کو پامال نہیں کرنا چاہیے تھا۔لیکن اس کے باوجود یہ کسی بھی لحاظ سے چوری نہیں ہے۔کیونکہ سونے کے مالکان خود بھی اس راز سے نا آشنا تھے کہ چوبیس سال سے انکے پاس اتنا سونا موجود ہے۔اور صوفہ بھی عبدالحمید کو دیا گیااس سے اخلا قی جرم ضرورسرزد ہوا لیکن یہ کسی طور بھی چوری کے زمرے میں نہیں آتا۔اس لیے پولیس نے اسے بری طرح زودکوب کر کے زیادتی کی ہے۔دوسرا اسکی زمین پر قبضہ بھی غلط ہے اور اہم بات یہ کہ اس سونے اور کار کیا ہوا۔کیونکہ وہ لواحقین تک نہیں پہنچا۔عدالت کوچاہیے کہ وہ اس سلسلے میں ٹھوس معلومات حاصل کرکے مال مالکان تک پہنچائے اور عبدالحمید کو کم از کم رہائی دے۔مالکان کو بھی عبدالحمید سے نرم رویہ اختیار کرنا چاہئے کیونکہ اسی کی وجہ سے یہ سب انکو ملے گا۔ورنہ تو وہ بے خبر تھے۔بلکہ اعلی ظرفی تو یہ ہے کہ کچھ حصہ اسے بھی دیں۔او ر عبدالحمید صاحب کو پولیس کی مہمان نوازی اور علاقہ میں ہونے والی رسوائی کے پیش نظر آئندہ یہ بات یاد رکھنی چاہیے کہ ایمانداری بہترین حکمت عملی ہے۔

یہ بھی پڑھیں  بر منگھم:محی الدین ٹرسٹ برطانیہ و نور ٹی وی کے زیر اہتمام پیر ثانی لا ثا نی سرکار کے عرس پاک کی تقریبات کا انعقاد

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. nice sir g .ap k cullom phr k bhoot maza aataaa hai kun k ap k cullom say insaan bhoot kuch sekhta hai 
    ore ap k cullom say bhoot sari mallommaat hasil hotiu hain

  2. bhoooooooooot great ap jasy log he ab humary pakistan ko in crept hukmaraanon sy bacha skty hain.humari public to so gai hai howi hai ap na public ki ankheen kholni hain .ore 
    INSHA ALLAH apki ya mehnt rang lay ge

  3. Bohat Khoob. Hamare Irad girad aise bohat se kahaniyan bikhri pari hain. Or jiss tarah se aap ne ese paish kiya  Es se agahi bhi hoi or maloomat main azafa bhi . Good Job

  4. Bohat Khoob. Hamare Irad girad aise bohat se kahaniyan bikhri pari hain. Or jiss tarah se aap ne ese paish kiya  Es se agahi bhi hoi or maloomat main azafa bhi . 

  5. KYA BAT HY MALIK SHB VERY TOMANDUS SIR JI AEMANATDARI BETEREEN HIKMATE AMALI HY AUR AIK BAT IS COLUM AIK BAT NOTE KERNY WALI YE JO KAM ABDUL HAMEED SHB NY KIYA HY YE WAIKAY HI CHOORI KY ZUMRAY MAY NAHI AATA YOU ARE RIGHT AUR IS COLUMN SY HAMAY YE BHI SABAK MILTA HY KY HAMAY KISI KY JAZBAT KY SATH HERGIZ KEHLNA NAI CHAIYE KUHDARA AGAR AIK ADMI AP PER TAHY DIL SY TRUST KERA HY TO IS KY BADLY USY ITNI BERI SAZA MAT DY KY WO KISI DOSRAY PAY TRUST KERNA HI CHOR DY

  6. شیر اعوان صاحب جب سے آپ نے پاک نیوز لائیو کو جوائن کیا ہے تب سے میں آپ کے کالم کو دل سے پڑھتا ہوں۔ اور اچھا پڑھنے کو ملتا ہے۔جناب اپنے کام کو جاری رکھیں۔
    وسیم نذر چیف ایڈیٹر پاک نیوز لائیو

  7. Aap ki tehreeron mai sanjeedgi ka pehlo numaya hai, intehai sabaq aamoz waqia hai agar , mujhe khushi hai k hamare noujawan tajziakar riwayati masail se hatt ke bhi kuch tehreer kernay lagay hain. ap ka kaam qabil-e-tareef hai. MashaAllah

  8. great sir  i appropriate your this column..you have a massive knowledge about our society .we hope you ll give your effort to aware our youth from the reality.we need such type of person ..keep it up ..thanks        

  9. main column bht kam parta hu
    q k mujay achy nhe lagty lakin  ap ka column to bht he acha tha…………….par k bht acha laga

  10. ore rahi baat us sonay ki aeinto0n ki,, tu ch sb ki bhi galati shamil hay us maeinke us nay begum sahiba ko btaya nahin us sonay ki aeint ka… bahar haal ch hameed ko kum se kum saza melnay cahey ,, ore if he is in jail then,, if free tu police se guzarish hay ki woo apna hissa (rishwet) leye begair usko ko reha ker dein / ya teng na keriennn

  11. i appreciate ur work,,,,,mainy buhat sy colmn phly b read kiye mger hr kici mai kisi aek topic per hi likha hota yaha ager dekha jay aek topic mai4,5 batiey ap ny show ki hai jo k parhny waly k leye acha b hy or kuch naya b

  12. sir acha topic ha or achi naseehat ha.aik bat achi lagi ka padhta waqat dilchasbi badhti ja rahe thi ka end kya ho ga.sir is ka elawa hakumat ka bara main likhain jo halat chal raha hain un ka mutaliq kun ka log aj kal hukmat ka mutaliq ko padhna chata hain.
    regards
    muhammad ali khan

  13.  sher muhammad  awan shahb ap ka yeh coloumn  parh kar baught khushi howe hum tu china main hain aor pakistan  kay halat  suntay rehaty hain  aor ap ko is jasay aor baught say coloumn likhnay houn gaye jis say hamari qaum jag jaye   allah inshallah ap ko baught taraqi day ga 

  14. ASlamo alai kum …sher sab ap ka colum parr k boht acha lga …….ap  ny to ye kisa saiwaal ka likha hai per shaid bht sy aisy kisay hn gy… ber hal Allah ap ko or kamyyab kry… aisa colum likye jo hmari young generation k liye ho or faida mand ho thanku

  15. Dear brother its also an excellent try to highlight a common cause. But in fact its the matter of honesty. 
    The real things haven’t changed. It is still best to be honest and truthful, to make the most of what we have, to be happy with ….simple pleasures, and have courage when things go wrong

  16. A.O.A ser zaberdast ser ap ne ye colum bht acha likha he ser ALLAH ap ko or kamyab kery nd ser ao aisy colum likhy jo hmari new janration ke liy ho nd us se koi se kch sabeq sikhy nd un k liy faida mand ho

  17. sir boht nice hy kai baat hy aap ki aap ko saloot karny ko dil karta hy hakoomat ko lazmi action lena chaye  inshallah hakoomat ko kherat a jaye gi  oa me ne ye tabsara para hy to sir g kia batahoi aap ko ye to bohat acha howa hy is k sath aap jesa sir me ne aaj tak kabi nai deka  all the best sir  you are greate sir )satudent swedish room nomber.ET2 rol no.4142206

  18. Bohat acha kalum hai sir isi tarhan ap liktin jain inshallah jo ap ka 
    maqsad hai woh jald pora ho jaey mai dua krn ga
    ap student  of swdish rwp
      

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker