تازہ ترینعلاقائی

حکمران ہوش کے ناخن لیں اور انڈیا کے پانی چوری کے مسئلے کو بین الاقوامی فورموں پر اٹھائیں۔ کسان بورڈ پاکستان

لاہور ﴿پریس ریلیز ﴾کسان بورڈ پاکستان کی طرف سے مقامی ہوٹل میں دیے گئے افطار ڈنر میں شامل قومی روزناموں کے ایڈیٹروںاور زرعی رپورٹروں سے غیر رسمی گفتگوکرتے کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی سینئرنائب صدر سرفراز احمد خاںاور جنرل سیکرٹری ملک محمد رمضان روہاڑی نے صحافیوں کو بتایا کہ انڈیا درجنوں بند بناکر 2014تک ہمارا پانی بند کرکے ملک کو بنجر بنانے کے منصوبے پر عمل پیراہے۔انڈیا کی طرف سے ڈیموں کی تعمیر بین الاقوامی اصولوں کے سراسرمنافی ہے اورپانی کی کمی کا مسئلہ دہشت گردی سے بڑا مسئلہ ہے۔حکمران ہوش کے ناخن لیں اور انڈیا کے پانی چوری کے مسئلے کو بین الاقوامی فورموں پر اٹھائیں۔انہوں نے کہا بین الاقوامی قوانین کے مطابق ہمارے حصے کے دریائوں جہلم،چناب،اور سندھ پر بند باندھ کر انڈیا ہمارے بیس فیصد پانی کو چوری کر رہا ہے جبکہ مزید 62بند بنا کر 2014 تک ہمارے دریائوں کو خشک کر کے ہمارے ملک کو بنجر بنا کر صحرا میں تبدیل کر کے ہماری زرعی معیشت کو تباہ برباد کرنا چاہتا ہے۔انڈیا پانی کو بطور جنگی ہتھیار استعمال کر کے ہمارے ملک کو تباہ کرنے کے درپے ہے جبکہ ہمارے حکمران انڈیا کو موسٹ فیورٹ ملک بنا کر امن کی آشا کے گیتوں پر رقص کرکے،،بابر بہ عیش کوش کہ عالم دوبارہ نیست،،کا راگ الاپ رہے ہیں۔اسلام دشمن عالمی طاقتوں کے کہنے پر ہمارے نادان حکمران دہشت گردی کو سب سے بڑا مسئلہ سمجھ رہے ہیں حالانکہ ا نڈیا کی آبی جارحیت سے پیدا ہونے والی پانی کی کمی،اس وقت ہمارے ملک کیلیے زندگی اور موت کا مسئلہ ہے۔دہشت گردی سے مرنے والے چند ہزارانسانوں کی جانیں بھی بلا شبہ بڑی قیمتی ہیں مگر اگر انڈیا نے بند بنا کر ہمارے ملک کا پانی بند کر دیا تو ہمارے ملک کے کروڑوں انسان پینے کا پانی نہ ملنے اور خوراک نہ ملنے سے ہلاک ہوجائیں گے۔حکمرانوں کو چاہیے کہ وہ فوری طور پر آبی ماہرین ،زرعی ماہرین،سیاسی ماہرین اور دفاعی ماہرین کی گول میز کانفرنس بلا کر اس مسئلہ کو بین الاقوامی فورموں پر اٹھائیں۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button