تازہ ترینعلاقائی

24دسمبر کو کسان بورڈ وسطی پنجاب کے کاشت کار واہگہ بارڈر پر احتجاجی مظاہرہ کریں گے

kissan boardلاہور (پ ر) آج کسان بورڈ وسطی پنجاب کے عہدے داران کا ایک مشاورتی اجلاس زیر صدارت چوہدری نور الہٰی تتلہ صدر کسان بورڈ وسطی پنجاب مرکزی دفتر لاہور میں منعقد ہوا۔ جس میں حکومت کی طرف سے بھارت کو پسندیدہ ملک قرار دینے، آزادانہ تجارت اور وسط ایشیائی ریاستوں تک راہ داری دینے جیسے فیصلوں پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔ مشاورتی اجلاس میں خصوصی دعوت پر مرکزی صدر کسان بورڈ پاکستان سردار ظفر حسین خان، سینئر نائب صدر چوہدری نثار احمد، نائب صدر سرفراز احمد خان، مرکزی سیکرٹری کسان بورڈ ملک محمد رمضان روہاڑی، صوبائی سیکرٹری کسان بورڈ وسطی پنجاب سردار اشفاق ڈوگر، ضلعی و تحصیلی صدور، سیکرٹری صاحبان نے شرکت کی۔ تمام شرکا نے متفقہ طور پر اس بات کا فیصلہ کیا کہ حکومت کے اس اقدام کے خلاف 24دسمبر کو واہگہ بارڈر پر احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا۔ کشمیر اور پانی پر غاضبانہ قبضہ کرنے والے دشمن ملک کے ساتھ آزادانہ تجارت پاکستانی مفاد میں نہیں جب کہ بھارت کے مقابلے میں پاکستانی کسان 321ارب روپے زرعی مداخل پر زائد خرچ کرتا ہے۔ بھارت کے ساتھ مجوزہ تجارتی معاہدہ اور راہداری کی سہولت پاکستان اور زراعت کے لیے زہر قاتل ثابت ہو گا۔ قائدین کسان بورڈ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارت کو پسندیدہ ملک قرار دینے کے معاہدے اور راہداری کی سہولت دینے سے باز رہے اور اس امید کا اظہار بھی کیا کہ حکومت شہداء کے خون سے غداری نہیں کرے گی اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ تمام تصفیہ طلب مسائل کے حل تک بھارت کے ساتھ کسی قسم کی تجارت نہ کی جائے۔

یہ بھی پڑھیں  آل پاکستان مسلم لیگ نے عام انتخابات کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker