تازہ ترینکالممیرافسر امان

کتاب اطمینانِ قلب

اس میں شک نہیں کہ اطمینانِ قلب تو صرف اللہ کی یاد سے ہوتا ہے۔ پھر بھی علماء اکرام قرآن و حدیث کی روشنی میں اپنے اپنے طور پر اطمینانِ قلب کی تشریع کرتے رہتے ہیں۔ اسی سلسلے میں جناب حکیم مشتاق احمد اصلاحی صاحب کی کتاب”اطمینان قلب“ میں نے تحریک محنت پاکستان کے مکتبہ مسجد الفرقان ایچ ایٹ کمپیلکس میں واقع مکتبہ سے خریدی۔ جس کا حاصل مطالعہ قارئین کی نظر کر رہا ہوں۔
پہلے حکیم مشتاق احمد اصلاحی کا کچھ تعارف،مشتاق احمد کا شمار ایسی شخصیات میں ہوتا ہے جو نام ونمود کی بجائے قوم و ملت کی خدمت کو اپناشعار بناتے ہیں۔ حکومت ِوقت سے مراعات اور خطاب کے بجائے فرائض منصبی کو سب سے بڑا میڈل اور خدمت انسانیت کو گراں قدر ایوارڈ سمجھتے ہیں۔مشتاق احمد تحریک آزادی پاکستان، تحریک دستور پاکستان،تحریک جمہوریت، تحریک مصطفےٰ، تحریک ختم نبوتؐ اور تمام عوامی تحریکوں میں شامل رہے۔ کئی بار گرفتار ہوئے اور قید وبند کی تکلیفیں برداشت کیں۔ساری زندگی غلبہ دین کی جد وجہد میں گزاری۔ ان کی کئی کتابوں میں سے زیر نظر کتاب”اطمینان قلب“(انعام یافتہ پاکستان رائٹرز گلڈ) میں سے ایک ہے۔
یہ کتاب انسان کو زندگی کی حقیقت سے آگاہ کر کے روز مرہ کے مسائل سے بحث کرتی ہے۔آپ اس کتاب میں  بتائے طریقوں پر عمل کر کے اپنی زندگی کو کامیاب اور بامراد اور انمنٹ بنا سکتے ہیں۔ آپ اپنے اندر مسرت پیدا کر کے رکاوٹوں کو دور کر سکتے ہیں۔یہ کتاب آپ کے سامنے زندگی کے نئے انداز اور اطمنیان کے نئے راستے کھول سکتی ہے۔
پروفیسر خورشید احمد چیئرمین اسٹی ٹیوت آف پالیسی اسٹڈیز سابق وفاقی وزیر، ڈپٹی چیئرمین پلائنگ، کتاب کے پیش لفظ میں فرماتے ہیں کہ:۔ انسانی تاریخ کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ انسان دو مختلف تصور سے برسر پیکار رہا ہے۔ ایک مادی ترقی اور دوسری روحانی اور اخلاقی ترقی۔انسان نے مادی ترقی کو اعلیٰ مقصد قرار دے دیا گیا۔اس میں اتنا گرفتار ہوا کہ روحانی اور اخلاقی تنزل کا شکار ہو گیا۔ آج مغربی تہذیب کا یہ نقطہ نظر ہے۔ایک نام در و فلسفی نے اس کو اسطرح بیان کیا کہ:۔ ”ہم نے فضاؤں میں پرندوں کی طرح اُڑنا اور سمندروں میں مچھلیوں کی طرح تیرنا تو سیکھ لیا ہے لیکن زمین پر انسانوں کی طرح رہمنا نہ سیکھ سکے“اسی کو فلسفی شاعر علامہ شیخ محمد اقبالؒ ے اس طرح بیان کیا کہ:۔
دھونڈنے والا ساروں کی گزرگاہوں کا
اپنے افکار کی دنیا میں سفر کر نہ سکا
جس نے سورج کی شعاعوں کو گرفتار کیا
زندگی کی شب تاریک سحر کر نہ سکا
حکیم مشتاق احمد نے ان تمام باتوں کو اس کتاب میں جمع کر دیا ہے جس میں مادی، روحانی ا ور اخلاقی ترقی سے اطمینانِ قلب مل سکتا ہے۔ مرحوم سید اسد گیلانی ڈاریکٹر اسلامی اکیڈمی منصورہ مرکز لاہور، فرماتے ہیں کہ:۔ مشتاق احمد نے اس مشینی دور میں اطمینان ِقلب ایک ایسا مضمون منتخب کیا ہے جو اس دور کی ضرورت ہے۔یہ کتاب دور حاضر کے پریشان انسان کے لیے بہت ہی مفید ہے۔ اطمینان قلب کتاب کا منبع تعلق با اللہ اور توکل اللہ ہے اوریہی اطمینان قلب کا حقیقی سر چشمہ ہے۔فضیلۃ الشیخ امام نفیس احمد اصلاحی ڈائریکٹر اصلاح معاشرہ ٹرسٹ پاکستان رقم تراز ہیں کہ اس موجودہ دور میں ایسی کتابیں لکھے جانے کی ضرورت ہے۔فاضل مصنف نے انسان کی خودی کو بیدار کرنے کی کوشش کی ہے۔ انسان کو مایوسی سے نکال کر پاکیزہ اور اطمینان قلب کے ساتھ زندگی گزانے کی طرف رہنمائی کی ہے۔مصنف کتاب کے صفحہ ۹۱ تا۲۲ میں جماعت اسلامی پاکستان کے دستور سے کلمہ”لاالہٰ الا اللہ محمد رسول اللہ“ کی تشریع نقل کی ہے۔ جو ساری پریشانیوں کا حل ہے۔آگے لکھتے ہیں کہ انسان کے اندرطمینان قلب کی تلاش کی تلاش کا شعور اور احساس موجود ہے۔اطمینان قلب کی دولت ایک ایسی نعمت ہے جس کا مقابلہ دنیا کی کوئی چیز نہیں کر سکتی۔ لکھتے ہیں کہ آج امریکا اور یورپ دنیا کے متمول، ترقی یافتہ،اور مشغول ترین ممالک ہیں ہے۔ہر شخص کار،کوٹھی، وافر دولت اور کھانے پینے کی تمام چیزیں انہیں میسر ہیں۔لیکن اطمینان قلب نہیں۔ ان کے ڈاکٹر، فلسفی، ماہرینِ نفسیات اور دانشور چیخ اُٹھے ہیں اور اس کیفیت کے سدباب کی ان کو کوئی صورت نظر نہیں آتی۔بے چینی کا یہ عالم ہے کہ چند سال قبل ایک ششماہی میں صرف ریاست کیلیفورنیا کے پانچ لاکھ باشندوں نے بے اطمینانی اور مایوسی کا شکار ہو کر خود کشی کی۔ ان ممالک میں جنون اور پاگل پن جیسے امراض کی کثرت ہو رہی ہے۔ میشیگن یونیورسٹی کے پال ایچ ہارڈن اور فلوریڈا یونیورسٹی کے گیرل کے لسلی لکھتےہیں کہ:۔ ۰۱/ سال قبل امریکا کے تمام ہسپتالوں میں جتنے بستر تھے ان پر تقریباً نصف تعداد دماغی مریضوں کی ہوتی ہے۔اب یہ تعداد بڑھ کر۷۳فیصد ہوگئی ہے۔مصنف صفحہ نمبر ۷۲تا۹۲ میں لکھتاہے کہ:۔ مغرب میں غم کو ختم کرنے کے لیے ہزاروں ٹن مسکن ادویات(tranqualizer) بھی استعمال کرتے ہیں۔ امریکا میں ڈرگ ایک سال میں ۰۵۲میلن ڈالرز یعنی اڑھائی ارب روپیہ کی مسکن ادویات استعمال ہوتی ہیں۔ان ممالک کے ڈاکڑوں اور فزشنوں کا کہنا ہے کہ ان کے پاس روزانہ کئی مریض ایسے ہوتے ہیں جن کو بطاہر کوئی بیماری نہیں ہوتی، مختلف چیک اب کروانے کے بعد بھی ان کی کسی بیماری کا پتہ نہیں چلتا، مگر وہ کہتے ہیں کہ ہم بیمار ہیں۔ در اصل یہ کوئی جسمانی بیماری نہیں ہے بلکہ ان کی روح بے قرار و مددگار ہے اور اطمینان کی متمنی ہے۔امریکاکے مشہور ماہر اقصادیات و سشیالوجی فرنینڈ برگ اور مشہور ماہر نفسیات و دماغی امراض مارینا دونوں لکھتے ہیں کہ:۔جدید انسانی زندگی میں غم و الم اور پریشانیوں کا دائرہ وسیع ہوتا جا رہا ہے۔مادی ترقی حد کو پہنچ چکی ہے۔اس کے باوجود یہ انسانی تاریخ میں سب سے بڑھ کر بے اطمینانی، غمگینی اور ناخوشی کا دور ہے۔ہم میں سے ۰۵ تا ۰۶ فی صد لوگ اعتصابی اور نفسیاتی بیماریوں سے پریشان ہیں۔ ٹائم میگزین کی رپورٹ ظاہر کرتی ہے کہ:۔ تجارتی اداروں کے پچاس ہزار مینجرز کی صحت کا معائنہ کیا گیا۔ جن کی عمریں اوسطاً ۵۴ سال کی تھیں۔۵۲ فی صد کی صحت نارمل تھی باقی بیمار تھے۔ سوشلٹ ملک فن لینڈ میں تمام دنیاسے زیادہ قتل ہوتے ہیں۔امریکا میں ہر سال بیس ہزار سے زائد قتل ہوتے ہیں ۳۷۹۱ء میں پچاس ہزار زنا بالجبر کے واقعات ہوئے۔پھریہ تعداد دوگنی ہو گئی۔ ہر سال پچیس لاکھ مکانوں میں چوریاں ہوتی ہیں۔ ہرسال ذہنی پریشانیوں اور تفکرات سے چھٹکارہ حاصل کرنے کے لیے پچیس ہزار افراد خود کشی کرتے ہیں۔ہر سال تقریباً گیارہ لاکھ لوگ موت کا شکار ہوتے ہیں۔غموں میں مبتلا لوگ امراض قلب کا شاکار ہوتے ہیں۔ یورپی اور دوسرے ممالک کا بھی یہی حال ہے۔ اطمینان قلب کے لیے لوگ نشہ استعمال کرنے لگتے ہیں۔ ۱۷۹۱ء کی بات ہے راقم نے اخبار میں اخبار دیکھی کہ کسی یورپی ملک میں ایک ہزار شہریوں نے مل کر اجتماہی طور پر زہر پی کر خود کشی کی۔ان ہی دونوں اطمینان،قلب کی تلاش میں انگریز جوڑے پاکستان کے بڑے شہروں میں نشہ کی حالت میں گھومتے دیکھے گئے تھے۔ایس جوڑوں کو ہپی کا نام دیا گیا تھا۔ویسے بھی مغرب اور امریکا کا معاشرہ تنزل کا شکار ہے۔ اطمینان قلب کتاب کی پہلی اشاعت ۷۷۹۱ء میں ہوئی۔ اس وقت کے حالات قلم بند کیے گئے۔ قارئین اندازہ کر سکتے ہیں کہ اس وقت ۱۲۰۲ء میں اعداد شمار کیا ہونگے۔مصف لکھتا ہے کہ:۔ نفسیاتی علاج خدا کے ساتھ تعلق،اس کی عبادت اورخدا خوفی سے ممکن ہے۔شاعر اسلام اور فلسفی شاعر حضرت علامہ شیخ محمد اقبالؒ نے کہا کہ مغرب اللہ کی طرف سے ہدایت گم کر بیٹھا۔ اب اس کو اللہ کے آخری پیغمبر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی رہمنائی کی ضرورت ہے۔ اسی سے اس کو روحانی غذا مل سکتی ہے۔مصنف علامہ اقبال ؒکی کتاب بالِ جبرئیل یہ اشعار کوٹ کرتے ہیں:۔
لباب شیشہ تہذیب حاضر ہے مے لا سے
مگر ساقی کیاہاتھوں میں نہیں پیمانہ ا لاّ
دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کی تیز دستی نے
بہت نیچے سَروں میں ہے ابھی یورپ کا واویلہ
مصنف لکھتا کہ:۔ انسانی نفس امارہ برائی اور نفس لوامہ جس کا دوسرا نام ضمیر ہے۔ نیکی اور برائی کی تمیز سکھاتا ہے۔ نفس مطمئنہ صحیح راستے پر چلنے اور غلط راستے چھوڑنے دینے پر آمادہ اور مطمئن کرتا ہے۔ اطمینانِ قلب اسی سے حاصل ہوتا ہے جو کامیابی کی شاہ کلید ہے۔ کتاب”اطمینانِ قلب“میں مصنف نے قرآن وحدیث کی روشنی میں سارے لوازمات اکٹھے کر دیے ہیں۔ اس کے مطالعہ سے انسان اطمینان ِقلب حاصل کر سکتا ہے۔ اور یہی بڑی کامیابی ہے۔

یہ بھی پڑھیں  انسانی حقوق اور اسلام

یہ بھی پڑھیے :

جواب دیں

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker