تازہ ترینعلاقائی

داؤدخیل میں سیوریج کے ابلتے گٹر گندگی کے ڈھیر داؤدخیل کی پہچان بن گئے

داؤدخیل (نامہ نگار) داؤدخیل میں سیوریج کے ابلتے گٹر گندگی کے ڈھیر داؤدخیل کی پہچان بن گئے ہر محلے میں سیوریج کی لائینیں بند ہیں گلیاں جوہڑوں کا منظر پیش کر رہی ہیں جبکہ گندگی کے ڈھیر سکول کے ساتھ لگے ہیں جس سے سکول اؤنے والی بچیوں کا شدید مشکلات کا سامنا ہے وہی گندے پانی اور ان گندگی کے ڈھیروں کی وجہ سے کئی جلدی ،اور سانس کی بیماریاں پھیل رہی ہیں میونسپل کمیٹی داؤدخیل کے سی او لمبی تان کر سو گئے ہیں دو دن داؤدخیل ہوتے ہیں اور باقی دن لاہور میں سکون کرتے ہیں جب کہ داؤدخیل شہر کا انظام درہم بھرم ہو چکا ہے اس وقت داؤدخیل کے محلہ شریف خیل ،سمال خیل ،سالار میں سیوریج کی لائینیں بند پڑی ہیں اہلیان محلہ اس وقت ذہینی مریض بن چکے ہیں جب کہ اس وقت بنک چوک سے محلہ سمال خیل چوک تک نئے تعمیر ہونے والے روڈ کی وجہ سے روڈ پر سیوریج کا پانی ان کے لیے وبال جان بن چکا ہے جبکہ گرلز ہائی سکول کے ساتھ گندگی کے ڈھیروں نے جہاں اہل محلہ کا جینا حرام کر دیا ہے وہی سکول آنے والی بچیو ں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے اور ان سیوریج کے گندے پانی اور گندگی کے ڈھیروں کی وجہ سے لوگ سانس ،اور جلدی بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں اور سیوریج کا گندہ پانی گلیوں میں تالابو ں کا منظر پیش کر رہاہے اور سی او داؤدخیل کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت پیش کر رہا ہے اہلیان داؤدخیل نے ڈی سی میانوالی سے مطالبہ کیا ہے کہ فوری طور سیوریج کا کام شروع کرا کے عوام کو عذاب سے نجات دلائی جائے اور گندگی کے ڈھیروں کا صاف کرایا جائے ورنہ اب عوام مجبورا احتجاج کرنے پر مجبور ہو جائے گی ۔۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button