علاقائی

لاہور:خشک سالی سے ڈیرہ اسماعیل خاں اور نواحی اضلاع میں لاکھوں ایکڑ فصلیں تباہ ہو چکی ہیں،صدر کسان بورڈپاکستان

لاہور﴿پریس ریلیز﴾ کسان بورڈ پاکستان کے صدر سردار ظفر حسین نے ڈیرہ اسمائیل خاں اور لکی مروت میںصوبہ سرحد کے دورے کے دوران کاشتکاروں کے کئی اجتماعات سے خطاب کر تے کہا کہ ملک بھر میں کھاد کی بلیک مارکیٹنگ، گنے کے کاشت کاروں سے کم ریٹ پر خریداری، ناجائز کٹوتی، شوگر ملز کی من مانیوں، زرعی ٹیوب ویلز پر اوور بلنگ، ڈیزل اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ، نہری پانی کی غیر منصفانہ تقسیم کی وجہ سے زراعت تباہی سے دوچار ہے ۔سستا گنا خریدنے والی حکمران طبقہ کی شوگر ملوں نے چند دنوں میں چینی کی فی بوری قیمت میں چھ سو روپے فی بوری اضافہ کر کے اب عوام کو بھی لوٹنا شروع کردیا ہے ۔انہوںنے کہا کہ حکومت نے اپنے وزرا اور من پسند لوگوں کو ڈیلر شپ دیکر اور ان کے ذریعے بلیک مارکیٹنگ کر کے سرکاری خزانہ اور کسانوں کے تین سو ارب روپے ہڑپ کر لیے ۔ اسی طرح حکومتی وزرا، ایم این اے، ایم پی ایز کی شوگر ملوں نے لوٹ مار کا بازار گرم کر رکھا ہے۔ انہوں نے عدلیہ سے مطالبہ کیا کہ ان ناانصافیوں پر فوری ایکشن لیا جائے۔خشک سالی کی وجہ سے چنے کی ہزاروں ایکڑ فصل تباہ ہو رہی ہے حکومت کو لفٹ اریگیشن سسٹم لگا کر فوری طور پر سوکھتی فصلوں کو بچا کر پریشان حال کسانوں کے دکھوں کا مداوا کرنا چاہیے۔کپاس،چاول،گنے ،ہلدی ،آلو،تمباکو کے کاشتکاروں کو لوٹنے والے تاجر اور صنعتکار حکمرانوں نے اب گندم کے کاشتکاروں کو لوٹنے کا پروگرام بنا لیا ہے ۔جند ہفتوں بعد سندھ اور جنوبی پنجاب میں گندم کی فصل پکنے والی ہے مگر ابھی تک حکومت نے گندم پالیسی کا واضع اعلان نہیں کیا۔لگتا ہے کہ گندم کے کاشتکاروں کو بھی کپاس،چاول،اور گنے کے کاشتکاروں کی طرح لوٹا جائے گا۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ کاشتکاروں کو لوٹنے والوں کی کھربوں روپے کی کرپشن کا عدلیہ ازخود نوٹس لے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker