علاقائی

ہندوستان کی حکومت نے دریائے چناب کو جوڑنے کے لیے اربوں روپے وقف کر کے پاکستان کو بنجر بنانے کے منصوبے پر عمل درآمد شروع کر دیا، صدر کسان بورڈ پاکستان

لاہور (پریس ریلیز ) سردار ظفر حسین خان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ہندوستان کی حکومت نے دریائے چناب کو جوڑنے کے لےے اربوں روپے وقف کر کے پاکستان کو بنجر بنانے کے منصوبے پر عمل درآمد شروع کر دیا۔ پاکستانی حکومت اور سپریم کورٹ اس کا نوٹس لیکر کالا باغ ڈیم سمیت دیگر ڈیم بنانے کا حکم دے اور پاکستان کوبنجر اور صحرا میں تبدیل ہونے سے بچائے ۔حکمرانوں اورانڈس واٹر کمیشن کے افسران کی نااہلی کی وجہ سے انڈیا پہلے ہی سینکڑوں بند بنا کرپاکستان میں بہنے والے تین دریاو¿ں کے 90%پانی پر قبضہ کر چکا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی سپریم کورٹ نے پہلے تیس متنازعہ دریا جوڑ نے کا حکم دیا اور اب انڈیا کی حکومت نے دریائے چناب کے پانی کا رخ موڑنے کے لےے اربوں روپیہ فنڈ مختص کر کے اس پر عمل درآمد شروع کر دیا ہے مگر پاکستانی حکومت ابھی تک خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ جب انڈیا وولر بیراج اور بگلیہار ڈیم تعمیر کرتا رہا تو انڈس واٹر کمیشن کے افسران خاموش بیٹھے رہے اور انڈیا کو ان دریاﺅں پر بند تعمیر کرنے کی سازش میں شریک ہو گئے۔ اب اگر پھر موجودہ حکمرانوں نے انڈیا کے پانی بند کرنے کے منصوبے کا سخت نوٹس نہ لیا تو پاکستان کے بہتے دریا خشک ہو جائیں گے اور پاکستان کی زمینیں بنجر ہو کر ایک صحرا کا منظر پیش کریں گی۔ کسان بورڈ پاکستان جلد ہی اس سلسلے میں پاکستان کی عدالت عالیہ سے رجوع کرے گا اور رائے عامہ کو ہموار کر کے احتجاجی پروگرام کو آخری شکل دی جائے گی۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ہندوستان کے پانی بند کرنے کے منصوبوں کے خلاف عالمی عدالت سے فوری طور پر رجوع کیا جائے اور سندھ طاس معاہدہ کے تحت انڈیا کو دریائے چناب، دریائے جہلم اور دریائے سندھ کا پانی بند کرنے سے باز رکھنے کے لےے ہر اقدام اٹھایا جائے۔

یہ بھی پڑھیں  ٹریفک پولیس کی پراسرار خاموشی آر ٹی ائے سیکرٹری چنیوٹ لاپتہ ہوگئے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker