بین الاقوامیتازہ ترین

لبنان: سعدالحریری حزب اللہ کےساتھ حکومت بنانےپرآمادہ

بیروت(مانٹیرنگ سیل) شامی بحران کے تناظر میں ملک انتہائی مشکل دور سے گزر رہا ہے ، حزب اللہ کو سیاسی جماعت مانتے ہیں، الزام ثابت ہونے تک ملزم بے گناہ ہوتا ہے لبنان کے سابق وزیر اعظم سعد الحریری نے کہا ہے کہ وہ نئی اتحادی حکومت میں حزب اللہ کو سیاسی جماعت تسلیم کرتے ہوئے ان کے ساتھ حکومت بنانے کو تیار ہیں۔ واضح رہے کہ سعد الحریری کے والد رفیق الحریری کے قتل کا الزام حزب اللہ پر عائد کیا جاتا ہے تاہم ان کا کہنا تھا کہ الزام ثابت ہونے تک ملزم بے گناہ ہوتا ہے ، اسی لئے ہم حزب اللہ کے ساتھ ملکر اتحادی حکومت بنانے کے لئے تیار ہیں۔ سعدالحریری کا یہ بیان رفیق الحریری کے قتل کی سماعت کرنے والے بین الاقوامی ٹربیونل کی حالیہ سماعت اور وزیر اعظم نجیب میقاتی کی حکومت کے 9ماہ قبل استعفے کے بعد سامنے آیا ہے جس میں انہوں نے حکومت سازی کے لئے سرگرمی دکھانے کا عندیہ ظاہر کیا ہے ۔ سعدالحریری کا مزید کہنا تھا کہ اس سیاسی جماعت کے دیگر بہت سے اتحادی ہیں، ہم سب کو ساتھ ملا کر ملک چلانا چاہتے ہیں کیونکہ بین الاقوامی برادری کی جانب سے شام کا بحران حل کرنے میں شدید ناکامی کے تناظر میں لبنان انتہائی مشکل دور سے گزر رہا ہے ۔ دریں اثناء لبنان میں چوبیس رکنی کابینہ کی تشکیل کے سلسلے میں متعدد سیاسی جماعتوں کے درمیان مذاکرات جاری ہیں۔ کابینہ کی آٹھ وزارتیں حزب اللہ اور اس کے اتحادیوں جبکہ آٹھ وزرا ء سعد حریری اور ان کی اتحادی جماعتوں اور آٹھ وزارتیں میخائل سلیمان اور قائم مقام وزیر اعظم کے نامزد امیدواروں کو دی جائیں گی۔ یاد رہے کہ تین برس قبل رفیق الحریری قتل کیس کی سماعت کرنے والے بین الاقوامی ٹربیونل کی جانب سے حزب اللہ کے ارکان کے خلاف فرد جرم جاری کئے جانے کے بعد ملک کی طاقتور ملیشیا حزب اللہ نے سعد الحریری کی قیادت میں کام کرنے والی قومی وحدت کی حکومت کی بساط لپیٹ دی تھی

 

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button