تازہ ترینکالم

ریاضی کے قاعدے(ابن انشاء سے معذرت کے ساتھ )

ویسے ریاضی کے رو سے حساب کے چار بڑے قاعدے ہیں جمع 249تفریق249ضرب249تقسیم اور ہمارے سیاستدان تمام کے تمام ہی ماہر ریاضی دان ہی ہیں اور اُس کے لئیے انہوں نے ریاضت بھی بہت کی ہے کچھ سیاست دانوں نے ریاضی کے خودساختہ اور بہت قیمتی قاعدے بھی نکالے ہیں صوبائی 249لسانی249مذہبی اور تقسیم کو جوں کا توں ہی رہنے دیا گیا کیونکہ اس سب حساب کتاب کے بعد تقسیم ضروری ہوجاتی ہے
اس میں کچھ کہنہ مشق سیاست دان جمع ہوجاتے ہیں اور پھر عوام کو بلندوبانگ دعوؤں اور ہرطرح کے حربے سے اکٹھا کرنا شروع کردیتے ہیں اور جب وہ دیکھتے ہیں کہ ہمارا کام مکمل ہوگیا ہے پھر وہ تفریق کا عمل شروع کردیتے ہیں کچھ صوبائیت کے نام پر کچھ لسانیت کے نام پر اورذیادہ تر مذہب کے نام پر تفریق ڈالنے میں وہ کافی حدتک کامیاب ہوجاتے ہیں اور پھرآہستہ آہستہ وہ عوام پر کاری ضرب لگانا شروع کردیتے ہیں جس کے بعد تقسیم کاعمل شروع ہوجاتا ہے ۔
جمع
ویسے اگر بات جمع کی جائے تو جمع کرنا آج کل کے دور میں بہت مشکل کام ہے کیونکہ مہنگائی روز بروز بڑھتی جا رہی ہے اس لئے عام آدمی جمع کا قاعدہ تو بھولتا ہی جارہا ہے سوائے چند سیاست دانوں اور اعلٰی افسرشاہی کے یہ سب لوگ جمع کے حساب کو ازبر یاد رکھتے ہیں اور جیسے جیسے موقع ملتا جاتا ہے ویسے ویسے یہ لوگ جمع کرتے رہتے ہیں اور یوں صرف چند طبقات تک جمع کا قاعدہ زور شور سے جاری ہے ۔جن میں ان کا ہاتھ بٹانے کیلئے کچھ اہم ترین سرکاری دفاتر پیش پیش ہیں کیونکہ کسی بھی کام کے لئے فائل آگے بھجوانی پڑتی ہے تو اُس کے لئے بھی کچھ جمع کرکے کلرک بادشاہ کے سامنے رکھا جاتا ہے تو فائل اپنے آپ اپنی منزل مقصود تک پہنچ جاتی ہے اور جمع کا عمل جاری رہتا ہے ہاں البتہ یہ ہوجاتا ہے کہ بسا اوقات جمع کرانے والے کے پاس کچھ جمع نہیں رہتا یوں یہ حساب اہم قاعدہ جارہ رہتا ہے اور قوی اُمید ہے کہ جب تک ہمارے حکمران کے اندر خوف خدا نہیں پیدا ہوتا جب تک جمع کا یہ نیا قاعدہ اسی طرح سے جاری رہے گا

یہ بھی پڑھیں  ورلڈکپ19: پاکستان کابھارت کے خلاف ٹاس جیت کر فیلڈنگ کا فیصلہ

تفریق
یہ بھی حساب کا اہم ترین سبق ہے جو کہ نئے ریاضی کے قاعدے میں کافی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ جب تک آپس میں تفریق نہ پیدا کی جائے کچھ جمع نہیں ہوسکتا اس کے لئے ہمارے سیاستدانوں نے مختلف طریقے اپنا رکھے ہیں جس میں سب یہ بھول بیٹھے ہیں کہ ہم پاکستانی ہیں کوئی کسی کو سبق دیتا ہے کہ تو پنجابی ہے تو دوسرا کہتا ہے میں بلوچی ہے اور اُدھر سے دوسرا نعرہ لگایا دیا جاتا ہے میں پٹھان ہوں اور پھر ایک طرف سے آواز آتی ہے کہ میں سندھی ہوں اور یوں تفریق کا عمل شروع ہوجاتا ہے پھر اس میں مخصوص مذاہب کی جماعتیں بھی شامل ہوجاتی ہیں اور مذہب کے نام پر تفریق پیداکرنا شروع کردیتی ہیں اور ایک دوسرے پر کافر ہونے کے فتوے بھی جاری کردئیے جاتے ہیں تفریق کے بنیادی اصولوں میں سے صرف ایک عدد نکالنا مقصود ہوتا ہے باقی اعداد خودبخود نکالنا شروع ہوجاتے ہیں اور پھر نکلتے ہی چلے جاتے ہیں اور پاکستان میں تو تفریق کا عمل بہت ہی تیزی سے جاری ہے اور مخصوص افراد اپنے مخصوص مقاصد کے حصول کیلئے اس تفریق کے عمل کو جاری رکھے ہوئے ہیں ابن انشاء نے جمع تفریق کے حوالے سے ایک بہت ہی عمدہ بات لکھی ہے کہ( یاد رکھئے جو لوگ زیادہ جمع کرلیتے ہیں وہ ہی تفریق بھی کرلیتے ہیں انسانوں اور نسانوں میں مسلمانوں اور مسلمانو ں میں)
ویسے اس تفریق کے عمل کو ہوا دینے میں ہم سب لوگ برابر کے قصوار ہیں کیونکہ قران پاک میں ارشاد باری تعالیٰ ہے کہ تمام مسلمان اللہ کی رسی کو مضبوطی سے پکڑ لو اور آپس میں تفرقہ میں نہ پڑو ۔ اور صد افسوس کے ہم اللہ کے وضع کردہ اصولوں سے دور ہوتے جارہے ہیں اور اسی وجہ سے ہم لوگوں کے دل سیاہ پڑتے جارہے ہیں جس کی بنا پہ ہم سب ایک پاکستانی اور ایک مسلم کے سبق سے ہٹ کر تفریق میں پڑ گئے ہیں
اللہ ہم سب کو ہدایت نصیب فرمائے آمین

یہ بھی پڑھیں  بھائی پھیرو:ڈاکٹر داؤد پرویز کی رہائش گاہ پرپاکستان ادبی فورم کے زیر اہتمام محفل مشاعرہ

ضرب
ویسے توضرب کی اپنی بہت سی شاخیں ہیں جس پر لکھنے کیلئے جیسے کے ضرب کاری ۔ضرب شدید ۔ڈنڈے کی ضرب۔چھری کی ضرب وغیرہ وغیرہ اس کے علاوہ بھی اور بہت سی ضربیں ہیں جو وقتا فوقتاجاری رہتی ہے جیسا کے بجٹ کے بعد بھی منی بجٹ آتے رہنا اور غیرب عوام کی کمر پر کاری ضرب لگانا اور اگر عوام احتجاج کیلئے نکلے تو پولیس کی مدد سے ڈنڈے کی ضرب لگوانا اس لئیے عوام ان تمام ضربوں کے ڈر کی وجہ سے اب کہیں بھی اکٹھی نہیں ہوتی اور حکومت کی طرف سے تمام ضربیں قبول کرلیتی ہیں۔ویسے تو ضرب کی اور بھی بہت سی مثالیں ہیں جن کی ذیادہ تفصیل میں جانے سے ڈر ہے کہ میری قلم کو ہی ضرب نہ لگ جائے اس لئے ضرب کی اتنی تعریف کافی ہے

یہ بھی پڑھیں  نواز، زرداری پارٹنر شپ توڑ چکاہوں، عمران خان کا جلسہ سے خطاب

تقسیم
تقسیم یہ نئے حساب کا آخری اور سب سے اہم قاعدہ ہے سب سے زیادہ جھگڑا بھی اسی پر ہوتا ہے جمع تقسیم اور ضرب دینے کے بعد سب سے آخری عمل تقسیم کا ہوتا ہے اور اس پر پھرنہ ختم ہونے والے جھگڑا شروع ہوجاتا ہے جس کا اختتام اقتدار کے خاتمہ پر ہی ہوتا ہے ۔ویسے تقسیم کی اور بھی بہت سی مثالیں ہیں جیسے اندھوں کا آپس میں ریوڑیوں کا بانٹنا اقتدار کا بانٹنا من پسند افراد کو اعلیٰ عہدے بانٹنا رشوت بانٹنا
ویسے مل بانٹ کر کھانا اچھا ہوتا ہے دال تک جوتوں میں بانٹ کر کھانی چاہئے ورنہ عین ممکن ہے کہ جوتے پڑ جائیں

یہ بھی پڑھیے :

2 Comments

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker