بین الاقوامیتازہ ترین

اسرائیل: یہودی النسل لڑکی کی مسلمان سے شادی پر احتجاج

مقبوضہ یروشلم (مانیٹرنگ سیل) اسرائیلی پولیس نے دو سو کے قریب مظاہرین کو احتجاج سے روک دیا۔ مظاہرین ایک مسلمان لڑکے کے ساتھ یہودی لڑکی کی شادی کی تقریب پر دھاوا بولنے کے لیے بڑھ رہے تھے۔اسرائیلیوں کے حقوق کے حوالے سے متحرک یہ مظاہرین ”مرگ برعرب” کے نعرے لگا رہے تھے۔ مبصرین کے مطابق اسرائیلی اور عرب باشندوں کے درمیان نفرت کی بھٹی غزہ پرمسلط کردہ جنگ سے ایک مرتبہ پھر بھڑک اٹھی ہے۔درجنوں پولیس اہلکاروں کے علاوہ ایلیٹ یونٹس کے اہلکاروں نے انسانی زنجیر بنا کر مظاہرین کو شادی ہال تک جانے سے تقریبا دوسو میٹر دور روک دیا۔ مظاہرین غزہ کی جنگ اور تین یہودی لڑکوں کی ماہ جون کے دوران ہونے والی ہلاکت کی بنیاد پر فلسطینی عوام کے ساتھ یہودی نفرت سے بھرے ہوئے تھے۔واضح رہے اس سے پہلے بھی ایک ایسے ہی یہودی اور مسلمان جوڑے کی شادی کے واقعے پر سخت احتجاج کیا گیا تھا۔ اس طرح کے احتجاج کی عمومی وجہ یہودی لڑکیوں کی عرب نوجوانوں سے شادیاں ہیں تاہم یہ کم کم ہی ہوتی ہیں۔دلہے نے اسرائیلی ٹی وی چینل ٹو کو بتایا کہ مظاہرین شادی رکوانے میں ناکام ہو گئے ہیں، اب ہم ساری رات ناچیں گے اور خوشیاں منائیں گے۔ عر ب دلہے نے کہا ہم بقائے باہمی پر یقین رکھتے ہیں لیکن مرگ بر عرب کے دھمکی آمیز نعرے اچھی بات نہیں۔خیال رہے کہ مظاہرین میں سے بہت سے نوجوانوں نے ملکہ نامی دلہن کی مذمت کے لیے سیاہ شرٹس پہن رکھی تھیں، ملکہ نے مسلمان سے شادی کرنے سے پہلے یہودیت چھوڑ کر اسلام قبول کیا ہے۔ جو یہودی مظاہرین کے لیے کسی صورت قبول نہیں ہے۔نوجوان مظاہرین نو مسلم دلہن کو یہودی ریاست کی غدار قرار دے رہے تھے۔ اس کے برعکس بائیں بازو کے نظریات رکھنے والے یہودیوں نے دلہا اور دلہن کے حق میں نعرے لگائے اور انہیں پھول پیش کیے۔ جبکہ دوسری طرف یہودی دلہا اور دلہن کے لیے بد دعائیں کر رہے تھے کہ تمہارے گاوں کو آگ لگ جائے۔اسرائیلی صدر ریوون ریون جنہوں نے پچھلے ماہ ہی شمعون پیریز کی جگہ صدارتی منصب سنبھالا ہے نے شادی کے خلاف مظاہرے پر اپنی فیس بک آئی ڈی استعمال کرتے ہوئے تنقید کی ہے۔بنجمن نیتن یاہو کی جماعت کے ایک رکن نے کہا ہے ” یہ حرکتیں ہمارے بقائے باہمی کو کمزور ثابت کرتی ہیں۔” تاہم لیہوا کے ترجمان نے کہا ” غیر یہودی سے شادی کرنا ہٹلر کے ظلم سے بڑا ظلم ہے
یہ بھی پڑھیں  ٹیکسلا:پرائس کنٹرول مجسٹریٹ کے واہ کینٹ کی مختلف مارکیٹوں میں چھاپے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker