پاکستانتازہ ترین

موٹروے پولیس پیٹرول خردبرد کرنے کا سکینڈل منظرعام پرآگیا

motor wayرینالہ خورد (تحصیل رپورٹر)موٹروے بیٹ نمبر چودہ14این فائیو کے بعد پیٹرول خردبرد کرنے کا سکینڈل بھی منظر عام پر آگیا پیٹرولنگ آفسران پیٹرولنگ کی بجائے گاڑیاں کھڑی کر کے وقت گذارنے اور آرام کرتے رہتے ہیں ڈی ایس پی شفیق احمد جوئیہ کا موقف دینے سے انکاری۔تفصیلات کے مطابق گذشتہ 5سالوں کے دوران موٹروے پولیس بیٹ نمبر14میں گاڑیوں میں ڈالنے کے لئے آنیوالا ڈیلو آئل ایم ٹی او ،رانا عامر نے ایک پر ائیویٹ آٹو سٹور پر فروخت کر دیا تھا اور فروخت کنندہ ایم ٹی او بیٹ نمبر14رانا عامر نے فروخت کرنے جبکہ خریدار حافظ ارشد نے خرید نے کا اعتراف بھی کیا تھا۔آئل کے بعد پیٹرولنگ گاڑیوں میں ڈالوالے جانیوالے پیٹرول خردبرد کا سکینڈل بھی منظر عام پر آگیا ذرائع کے مطابق جب پیٹرولنگ آفسران پیٹرولنگ گاڑیوں میں ڈیوٹی کے لئے سوار ہو کر سیدھے پیٹرال پمپ پر جاتے ہیں اور پیٹرول پمپ پر موجود فلر سے کہتے ہیں گاڑی میں 15لٹر پیٹرول ڈال دو اور پندرہ لٹر کے پیسے ہمیں دے دو اور رسید 30لٹر کی بنا دوجبکہ پیٹرولنگ آفسران گشت کرنے کی بجائے اپنی گاڑیاں کسی پوائنٹ پر کھڑی کر کے آرام کرتے اور خوش گیپوں میں مصروف نظر آتے ہیں جسکی وجہ سے نیشنل ہائی وے پر موٹروے پولیس کی گرفت کمزور نظر آتی ہے۔جب اس ضمن میں ڈی ایس پی محمد شفیق جوئیہ اور ایم ٹی او رانا عامر سے موقف جاننے کے لئے رابطہ کیا تو انہوں نے موقف دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ایسا بالکل نہ ہے یہ صرف الزام ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button