تازہ ترینفن فنکار

گلوکارمجيب عالم کوبچھڑے8برس بیت گئے

لاہور(نمائندہ سپورٹس) پاکستانی فلمی صنعت کے عروج ميں مجيب عالم کے گيت فلموں کی کامیابی کی ضمانت سمجھ جاتے تھے۔ ان کے گائے ہوئے گیت آج بھی سماعت کو بھلے لگتے ہیں۔2جون 2004 کو يہ سريلا فنکار اپنے آخری سفر پر روانہ ہوا مگر اپنے گيتوں کا سرمايہ يادوں کی  صورت ہمارے درميان چھوڑگيا۔  مجیب عالم ساٹھ کے عشرے میں  گلوکاری کے افق پر نمودار ہوئے تو مداح  آپ کی سریلی  آواز کے سحر سےکھو سے گئے۔ ابتدا ميں مجيب عالم کی آواز محمد رفيع سے متاثر محسوس ہوئی ليکن پھر جلد ہی انھوں نے اپنا رستہ الگ کيا اور فن کی دنيا ميں منفرد مقام بنايا۔ مجيب عالم کا زمانہ پاکستانی فلمی صنعت کےعروج تھا۔ موسيقی کے افق پر بھی احمد رشدی اورمہدی حسن جيسے ستارے جگمگا رہے تھے مگر فن سے ديرينہ وابستگی نے آپ کو منفرد مقام ديا۔ وہ خوش مزاج اور زندہ دل آدمي تھے ليکن فلمي صنعت کے زوال نے ان کے دل سے جينے کی امنگ چھين لی اور محض 56برس کی عمر ميں ايک حساس فنکاربےثبات دنيا سے ہميشہ کےليے منہ موڑليا۔

یہ بھی پڑھیں  پاکستان میں کورونا کے زیر علاج مریضوں کی تعداد 8873 رہ گئی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker