تازہ ترینرپورٹس

بھارت نے ممبئی حملوں سے متعلق 15 صفحات پرمشتمل عدالتی کمیشن کی رپورٹ پاکستان کےحوالےکردی

راولپنڈی﴿نمائندہ خصوصی﴾بھارت نے ممبئی حملوں سے متعلق 15 صفحات پر مشتمل عدالتی کمیشن کی رپورٹ پاکستان کے حوالے کر دی۔میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان کی جانب سے ممبئی حملوں سے متعلق مختلف شخصیات کے بیان قلمبند کرنے کے لئے ایک عدالتی کمیشن بنایا گیا تھا جو کہ14 اپریل کو بھارت روانہ ہوا۔17 اپریل کو عدالتی کمیشن نے اپنی کارروائی کا آغاز کیا ۔عدالتی کمیشن میں ایف آئی اے کے پبلک پراسیکیوٹر چودھری ذوالفقار علی قریشی ،وکلائ صفائی ،انسداد دہشت گردی کے عملے کے علاوہ عدالتی عملہ بھی تھا جنہوں نے بھارت میں4 روز قیام کے دوران ممبئی حملہ میں تفتیشی افسر،2 ڈاکٹرز جنہوں نے ممبئی حملہ میں ہلاک ہونے والی لاشوں کے پوسٹ مارٹم کئے اور اس کے علاوہ اجمل قصاب کا اقبالی بیان ریکارڈ کرنے والی قانون مجسٹریٹ کا بیان قلمبند بند کرنے کے بعد یہ کمیشن گزشتہ روز واپس پاکستان آگیا جس کے بعد بھارت نے ممبئی حملوں سے متعلق رپورٹ پاکستان کے حوالے کی ہے ۔بھارت کی جانب سے ممبئی حملوں میں ملزم اجمل قصاب سمیت ،جماعت الدعوۃ کے امیر حافظ سعید اور حافظ عبد الرحمن مکی پر بھی رپورٹ میں یہ الزام عائد کیا گیا ہے کہ اجمل قصاب اپنے 10 ساتھیوں کے ہمراہ سمندری راستے سے بھارتی حدود میں داخل ہوا ۔قصاب نے پاکستان میں6 ماہ کی دہشت گردی کی تربیت حاصل کی ۔اجمل قصاب اور اس کے 10 ساتھی ممبئی حملوں میں ملوث تھے اور ممبئی حملوں کی کارروائی کے دوران پاکستان سے حافظ محمد سعید اور عبد الرحمن مکی ان کو فون پر خصوصی ہدایت دیتے رہے جبکہ دونوں کے فون نمبر پاکستان کو فراہم کر دیئے ہیں۔ یہ رپورٹ گزشتہ روز پراسیکیوٹر﴿ایف آئی اے﴾چودھری ذوالفقارکوپیش کی گئی جس کے بعد انہوں نے یہ رپورٹ راولپنڈی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت نمبر ایک میں جمع کرا دی ۔عدالت نے بھارت کی جانب سے دی جانے والی اس رپورٹ کو باقاعدہ طور پروصول کر کے مقدمہ کا حصہ بنا دیا ہے اور اس رپورٹ پر سماعت آج 28 اپریل بروز ہفتہ کو کریگی۔

یہ بھی پڑھیں  صدرسٹی پریس کلب اوکاڑہ (رجسٹرڈ) محمدمظہررشیدچوہدری نے سات رکنی ممبر شپ کمیٹی کااعلان کردیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker