تازہ ترینکالممسز جمشد خاکوانی

پرویز مشرف کے کونوں کھدروں میں چھپے مداحین

mrs. jamshaidدس سال گذر گئے ہیں مجھے دیکھتے ہوئے پرویز مشرف کا نام ایک دن کے لیے بھی میڈیا سے حذف نہیں ہوا کوئی چینل کھولو کوئی اخبار اٹھا لو حتیٰ کہ خواتین کے ماہنامے میں بھی مشرف کے نام کی دو سطری خبر ضرور نکل آتی ہے اور یہ سب اس لیے ہے کہ میڈیا کی دال روٹی اسی ایک نام کے سہارے چلتی ہے حالانکہ میڈیا کی آزادی بھی اسی مشرف کی ہی مرہون منت ہے لیکن مشرف تو آزادی دے سکے مال نہ دے سکے خالی خولی آزادی کس کام کی ،یہ کام آنے والوں نے بطریق احسن پورا کیا لیکن کمال یہ ہے کہ اتنے وسیع پیمانے پر مشرف کے خلاف نفرت پھیلانے کے باوجود کہیں کونوں کھدروں میں مشرف کے مداحین باقی ہیں ۔ بلکہ مخالفین کے سینوں پر مونگ دل رہے ہیں کیا ہوا جو مشرف اپنے مداحین کو کچھ دے نہیں سکتے مداحین تو سچ کا ساتھ دے سکتے ہیں نا ؟بس غصہ اس بات پر آتا ہے کہ چھاج تو بولے چھلنیاں بھی بول رہی ہیں جن میں ہزاروں سوراخ ہیں۔رانا ثنا اللہ بھی بولنے جوگے ہیں جن کے سر پر ماڈل ٹاؤن کے چودہ مقتولوں کا بوجھ ہے وہ بھی کہتے ہیں مشرف واپس نہ آئے تو انٹر پول کے ذریعے واپس لائیں گے پہلے جو انٹر پول کے ذیعے واپس لائے گئے ہیں ان کا تو احتساب کر لیں جناب پیپلز پارٹی کی حکومت کی آدھی کابینہ اورافسران احتساب کے خوف سے باہر بیٹھے ہیں الزام تو فریال تالپور اور زرداری صاحب پر بھی کم نہیں ہیں پھر چور مچائے شور والا معاملہ ہی ہے سچی بات تو یہ ہے کہ حکومت اب خود ہی مشرف سے جان چھڑانا چاہ رہی تھی جب سے مصطفی کمال نے مشرف کے گھٹنے چھوئے ہیں سب اس خوف میں مبتلا ہو گئے تھے کہیں باقی بچ جانے والی باغی ایم کیو ایم مشرف کی چھتری تلے جمع نہ ہو جائے سو یہ کانٹا نکالنا پڑا احمد رضا خان قصوری تو کہتے ہیں جب نواز شریف نے مقدمے شروع کیے تھے وہ طاقتور تھے اب کمزور ہو گئے ہیں نیوز چینل اے آر وائی میں بات چیت کرتے ہوئے ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ سابق صدر مشرف اور سابق صدر آصف زرداری دونوں اکھٹے واپس آئیں گے پھر دیکھیں گے کس کا ٹرائل ہوتا ہے ۔
لگتا ہے لوگوں نے مشرف کیجانے سے پہلے ہی احتیاطً کالم لکھ رکھے تھے کہ حکومت وقت کی وفاداری پر حرف نہ آنے پائے کہ صبح صبح ہر اخبار میں ہر لکھنے والے نے حسب توفیق مشرف کے خلاف مذمت نامہ چھپوا دیا جیسے کسی کی ذاتی دشمنی ہوتی ہے حتی کہ ایک صاحب نے تو سچ مچ ذاتی دشمنی بھی نکال لی یہاں تک لکھ دیا کہ مشرف نے انکی بہو بیٹیوں کے گلوں سے ڈاکووں کے ذریعے زیور نچوا لیے تھے یا اللہ سابق آرمی چیف ملک کا سابق صدر جس کی ساری زندگی ملک کے خلاف دشمنوں سے جنگ لڑتے گذر گئی اتنا گھٹیا الزام لگانا معنی رکھتا ہے ایسا الزام تو زرداری پر بھی کوئی نہ لگائے گا جس کی ساری عمر جرائم میں گذر گئی نہ را کے مستند ایجنٹ الطاف حسین کے خلاف کسی نے زبان کھولی جس نے نہ کتنے ہزاروں قتل کرا دیے جو اپنی ہر تقریر میں باتیں کم دھمکیاں اور گالیاں زیادہ دیتا تھا ۔مشرف کے خلاف جتنے کالم کل اور آج چھپے ہیں اگر میں ہر کالم سے ایک ایک فقرہ بھی لکھنے لگوں تو کئی کالم بن جائیں گے لیکن میں سمجھتی ہوں مشرف کا صرف ایک جرم اس کے ہر عمل پہ بھاری ہے اور وہ ہے میڈیا کی آزادی ۔۔۔آج میڈیا وہ ذکوٹا جن بن چکا ہے جو کہتا ہے مجھے کام بتاؤ میں کس کو کھاؤں ؟کیا کروں؟اور کوئی جرم نہیں ہے اب یہ جن کسی کے قابو نہیں آ رہا ۔۔۔آج میں ایک وڈیو دیکھ رہی تھی جس میں ایک صاحب کہہ رہے تھے (مجھے ان کا نام معلوم نہیں ہو سکا)کہ ٹونی بوزین نے دماغ پر 112 کتابیں لکھی ہیں میں جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق کو ٹونی بوزین کے پاس لے کر گیا سراج الحق نے ٹونی بوزین سے کہا ہمارے ملک میں بہت ٹیررازم ہم کیا کریں؟ٹونی بوزین نے کہا ٹیررازم پاکستان میں؟کراچی شہر میں
22 ملیئن لوگ رات کو سوتے ہیں اور صبح 22ملیئن اٹھتے ہیں آپ ذرا لندن میں چل کر دیکھیں کتنے لوگ مرتے ہیں پاکستان سے زیادہ مرتے ہیں نظر نہیں آتا آپ کو اس لیے، امریکہ میں سالانہ پچاس ہزار لوگوں کا مرڈر ہوتا ہے لیکن کسی کو نظر نہیں آتا کہ سالانہ پچاس ہزار مرڈر پستول سے کر دیے اس لیے کہ وہاں بری خبریں اچھالی نہیں جاتیں سنگا پور میں دوبئی میں آپ گورنمنٹ کی اجازت کے بغیر کوئی بری خبر نہیں دے سکتے اس لیے آپ مزے سے وہاں رات کے چار بجے بھی گھومتے ہیں ہمارے ہاں ہر قسم کی خبروں کی آزادی ہے ہر بری سے بری خبر بارہ مصالحے لگا کر پھیلائی جاتی ہے ایسے میں اگر کسی بے بے خبر نے کعبہ والے واقعے میں مشرف کی کمانڈ کا لکھ دیا تو کیا قیامت آ گئی ہے آخر کسی نہ کسی نے تو کمانڈ کی ہو گی اچھا ہوتا اگر کمانڈ کرنے والے افسر کے نام کی وضاحت بھی ہو جاتی چلو ہماری نالج میں اضافہ ہو جاتالیکن مشرف دشمنی میں ہمارے عہد کے بقراط کوئی وار خالی نہیں جانے دیتے خیر مجھے ایسی باتوں کی کوئی پرواہ نہیں ہوتی دکھ اس بات کا ہے کہ مشرف کی آڑ میں پاکستان کے محافظ ادارے کی توہین و تضحیک کی جاتی ہے بلاول اور خورشید شاہ صاحب کو تھر میں بھوک سے مرتے ہوئے بچے تو نظر نہیں آتے نہ اپنے ابا اور وزیروں مشیروں کی کرپشن اور لوٹ مار نظر آتی ہے مگر مشرف کا ملک سے باہر جانا بہت بڑا جرم لگتا ہے کوئی ان سے پوچھے محترم زرداری صاحب چھ ماہ سے ملک بدر ہوئے بیٹھے ہیں جو فوج کی اینٹ سے اینٹ بجانے نکلے تھے اب کہتے ہیں مجھے ستائیس ٹیکے روزانہ لگتے ہیں میر ملک میں علاج نہیں ہو سکتا صحت مند ہو کر واپس آؤنگا وہ کس کھاتے میں بیٹھے ہیں ؟ چلو ہر ایک کو جھوٹا کہہ دو امریکہ تو ہر گیم میں خود شامل ہے اس سے تو زرداری صاحب چھپے ہوئے نہیں ہیں سوچنا تو یہ چاہیے کہ اللہ ہر چیز دیکھتا ہے اس کی پکڑ سے کوئی نہیں بچ سکتا ہر کوئی اپنے انجام کو پہنچے گا باقی جتنا مرضی زور لگا لیں مشرف کو لوگوں کے دلوں سے نہیں نکال سکتے!

یہ بھی پڑھیں  قصور:چوک قادرآباد میں زیرتعمیر مکان کی چھت گرنے سے5مزدورشدید زخمی ہوگئے

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker