تازہ ترینعلاقائی

نارووال:برما میں مسلمانوں کا قتل عام انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے

نارووال﴿پ ر﴾برما میں مسلمانوں کا قتل عام انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے ۔ مذہب کے نام پر انسانی جانوں کا ضیاع دہشت گردی ہے جس کی کوئی مذہب اجازت نہیں دیتا ۔پاکستان میں اقلیتیں محفوظ ہیں جبکہ عالمی برادری حامیانِ اسلام سے ظلم و زیادتی کا نوٹس نہیں لے رہی ۔اقوام متحدہ سمیت عالمی ادارے برما میں مسلمانوں کے قتل کا سختی سے نوٹس لیں ۔بین المذاہب امن کمیٹی مذاہب میں تصادم کی حوصلہ شکنی کرتی ہے ۔13اگست بروز پیر جشن آزادی سیمینار کر کے تمام مذاہب کے نمائندگان جذبۂ حب الوطنی کو فروغ دیں گے ۔ان خیالات کا اظہار صوبائی کوارڈینیٹر بین المذاہب امن کمیٹی پنجاب علامہ پیر محمد تبسم بشیر اویسی نے مرکز اویسیاں نارووال میں تمام مذاہب کے ذمہ داران کے نمائندہ اجلاس بسلسلہ جشن آزادی سے صدارتی خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ضلعی وائس چیئرمین بین المذاہب امن کمیٹی نارووال رتن لعل ۔جنرل سیکرٹری پادری ڈاکٹر ستار خاں ،ڈپٹی سیکرٹری پادری آر ۔ایم سلاس گل ۔ وائس چیئرمین سردار اندرجیت سنگھ ،سیکرٹری انفارمیشن محمد یعقوب اویسی ایڈووکیٹ اور فنانس سیکرٹری منور علی جعفری نے کہا پاکستان لاکھوں قربانیوں کے بعد معرضِ وجود میں آیا ۔آج استحکام پاکستان کے لئے بھی تمام مذاہب کو تحریک پاکستان کی طرح اپنی توانائیاں بروئے کار لانی چاہئیں ۔ برمی مسلمانوں کا قتل شدت پسندی اور عالمی امن کو تباہ کرنے کی گہری سازش ہے جس کی تمام مذاہب مذمت کرتے ہیں ۔مقررین نے کہا پاکستان ماہِ رمضان میں بنا ۔ اس سال ماہِ رمضان میں ہم جشن آزادی شایانِ شان طریقہ سے منا کر ثابت کریں گے کہ ہم پہلے پاکستانی ہیں اور بعد میں مذاہب سے وابستہ ہیں ۔ کیونکہ پاکستان ہے تو مذاہب ہیں ۔اجلاس میں ملک میں شدید لوڈ شیڈنگ ،لاہور میں حالیہ بم دھماکوں کی شدید مذمت کی گئی ۔ اجلاس میں پادری امجد جاوید ، لازر بشیر ،ایڈون ،فرانسس جیمس، ڈاکٹر مبارک ، عباس خان، حافظ محمد عرفان اسلام اور دیگر نے شرکت کی ۔

یہ بھی پڑھیں  حجرہ شاہ مقیم:دیوار کے تنازعہ پر چار افراد نے خاتون کو برہنہ کر کے بازار میں گھسٹا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker