تازہ ترینعلاقائی

نارووال: دہشت گردی کا تدارک قرآن و سنت کے نفاذ کے فروغ میں ہے۔پیر سید منور حسین

نارووال﴿پریس ریلیز﴾ چیئرمین پاکستان مشائخ کونسل مہر الملت حضرت پیر سید منور حسین جماعتی آستانہ عالیہ حضرت امیر ملت علی پور سیداں شریف نے مقامی ہوٹل میں پُر ہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کا تدارک اور ملت اسلامیہ کا اتحاد قرآن و سنت کے نفاذ اور تعلیمات اولیائ کے فروغ میں ہے۔پاکستان بنانے والے علمائ و مشائخ استحکام پاکستان کے لئے میدان میں نکلیں۔ امیر ملت عالم اسلام کا سرمایہ افتخار تھے ۔تحریک پاکستان میں لاکھوں روپے چندہ ،ہجرت کرنے والوں کی آباد کاری ،تحریک تحفظ ختم نبوت میں نمایاں دلیرانہ کردار اور خانقاہی نظام میں تعلیم و تربیت کو فوقیت دینا حضرت پیر سید جماعت علی شاہ محدث علی پوری رحمۃ اللہ علیہ کے سنہری کارہائے نمایاں ہیں جن کو حامیان اسلام و پاکستانی قوم تا قیامت خراج تحسین پیش کرتی رہے گی ۔ قائد اعظم محمد علی جناح رحمۃ اللہ علیہ کو خصوصی دعا کے ساتھ قیامِ پاکستان کی خوشخبری سنائی جس پر بانیٔ پاکستان ہمیشہ فخر کیا کرتے تھے ۔فخر الملت حضرت پیر سید افضل حسین شاہ جماعتی رحمۃ اللہ علیہ نے فیضان امیر ملت کے امین بن کر خوب خدمتِ اسلام کی ۔ 30اگست جمعرات صبح 9تا3آستانہ حضرت امیر ملت علی پور سیداں شریف پر عرس مبارک امیر ملت حضرت پیر سید جماعت علی شاہ محدث علی پوری رحمۃ اللہ علیہ اور ختم چہلم فخر الملت پیر سید افضل حسین شاہ جماعتی رحمۃ اللہ علیہ منعقد کر کے استحکام پاکستان اور تحفظ نظریات اولیائ کے عزم کا اعادہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا قوم کی اصلاح و فلاح کے لئے خانقاہوں کو ماڈل رول ادا کرنا ہو گا۔ خانقاہیں دکھی انسانیت کی پناہ گاہیں اور احیائے اسلام کے عظیم مراکز ہیں ۔دشمنانِ اسلام آستانوں اور درباروں کو دہشت گردی کا نشانہ بنا کر قوم کو انتشار و افتراق میں مبتلا کرنا چاہتے ہیں ۔آستانہ حضرت امیر ملت سے ہمیشہ اتحاد امت ،محبت پاکستان اور غلبۂ دین کی آواز بلند ہوئی ہے ۔آستانہ کو اسلاف کی تعلیمات سے ہمیشہ آباد رکھنے کے لئے با قاعدہ دستور العمل مرتب کر دیا گیا ہے ۔انہوں نے کہا دربار شریف کو ذریعہ روزگار بنانا حماقت ہے ۔ مخلوق خدا کی بھلائی کے لئے باقاعدہ ٹرسٹ اور علمی تشنگی کو بجھانے کے لئے مجلہ جات کا اجرائ کیا جائے گا۔ آستانہ عالیہ کے تمام تر انتظامی امور کو چلانے کے لئے باقاعدہ اسلاف کے طریقہ کار کے مطابق مجلس شوریٰ جو خاندانی افراد پر مشتمل ہو گی کو اختیارات دئیے جائیں گے ۔ دربار شریف کو ذاتی مفاد اور خاندان میں اختلاف کو ہوا دینے والوں کو منہ کی کھانی پڑے گی ۔ اولادِ حضرت امیر ملت ہی سجادگی کا حق رکھتی ہے۔جبکہ سجادہ نشینی وراثتی عمل نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا آج ملک و ملت کے لئے مشائخ عظام کو رسم شبیر ی ادا کرنے کی ضرورت ہے ۔ 30اگست 2012ئ ختم چہلم کے موقعہ پر حضرت امیر ملت محدث علی پوری رحمۃ اللہ علیہ کے سجادہ نشین کا فیصلہ خاندان امیر ملت (رح) کے افراد بالاتفاق کریں گے۔ سجادہ نشین اپنے آبائو اجداد کی طرح قرآن و سنت کے فروغ اور استحکام پاکستان کے لئے توانائیاں بروئے کار لائے گا۔ اس موقع پر دیگرعلمائ و مشائخ بھی موجود تھے ۔

یہ بھی پڑھیں  کرپشن ایک لعنت

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker