پاکستانتازہ ترین

نواز شریف کی اختر مینگل سے ملاقات، مشترکہ جدوجہد کا عزم

اسلام آباد(ڈیسک رپورٹر) بلوچ قوم پرست رہنما سردار اخترمینگل نے کہاہے کہ بلوچوں کو اکھٹا لے کر چلنا ہے تو پاوٴں سے گھسیٹ کر نہیں ہاتھ پکڑ کرچلنا پڑے گا، ہم نے آئین اور قانون کے مطابق چلنا ہے، جبکہ مسلم لیگ نون کے قائد نوازشریف نے لاپتا بلوچ افراد کیلئے جدوجہد کا ساتھ دینے کا عزم ظاہرکرتے ہوئے آئین و قانون کی حکمرانی پر زور دیا ہے ۔ نوازشریف نے سینیٹر پرویزرشید کے ہمراہ آج اسلام آباد آکر سردار اختر مینگل سے ملاقات کی، اس موقع پر دیگر بلوچ رہنماء بھی موجود تھے۔ بعد میڈیا کو بریفنگ میں سردار اختر مینگل نے کہاکہ میڈیا کی طرح ارباب اختیار کو حالات کا سنجیدہ ادراک ہوتا تو آج مسائل نہ ہوتے، حالات بہتر کرنا ہیں تو 65 سال تک حکمرانی کرنے والی قوتیں عوام کو حاکم سمجھیں۔ انہوں نے کہا کہ وقتی تسلیاں رہیں تو پھر یہ بات اب نہیں چل سکے گی، بلوچستان کے حالات آج جس مقام پر ہیں، وہاں سے واپسی کے امکانات نظر نہیں آتے۔ سردار اختر مینگل نے کہا کہ سپریم کورٹ کی بہت مہربانی ہے کہ اس نے مسائل سنے،انہوں نے کہاکہ عدالت میں پیش کردہ میرے 6 نکات کو مجیب الرحمن کے نکات سے الگ نہ سمجھا جائے،بلوچوں کو پاکستانی سمجھا جاتا تو ان کو قتل، تشدد کا شکار نہ بنایاجاتا، وہاں 5 بار فوجی آپریشن نہ ہوتے،خون خرابے سے بہتر ہوگا کہ گلے مل کر خوش اسلوبی سے الگ ہوجائیں،نوازشریف نے صحافیوں سے گفت گو میں کہاکہ اخترمینگل کے والدعطاء اللہ مینگل نے قیام پاکستان ، آئین کی تشکیل میں کردار ادا کیا، ان وجوہات، زیادتیوں، مظالم اور حالات کے بارے میں سوچنا ہوگا،ہم سانحہ مشرقی پاکستان کو نہیں بھولے، معاملات کا سنجیدہ نوٹس لینا ہوگا۔ نواز شریف نے کہا کہ اکبر بگٹی کے قتل کا دن، ملک کیلئے بدترین تھا،لاپتا افراد کیلئے جدوجہد میں ہم بلوچ قیادت کے ساتھ ہیں، ہم نے آئین اور قانون کے مطابق چلنا ہے،قانون کی حکمرانی قائم کی جائے، ملزموں کو کٹہرے میں لایاجائے،اسکے بغیر ملک کا قائم رہنا ممکن نہیں۔ انہوں نے کہاکہ تمام صوبے قائم رہین اور ہم جدا نہ ہوں،ہمیں پہلے اپنے گھر کو ٹھیک کرنا چاہیئے، اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیئے۔

یہ بھی پڑھیں  اکھنڈبھارت کاخواب

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker