پاکستانتازہ ترین

11مئی یوم حساب ثابت ہوا، مہذب قومیں اسی طرح احتساب کیا کرتی ہیں، نواز شریف

09NawazSharifلاہور(نمائندہ خصوصی) مسلم لیگ (ن) کے سربراہ میاں محمد نواز شرف نے کہا ہے کہ 11مئی یوم حساب ثابت ہوا، مہذب قومیں اسی طرح احتساب کیا کرتی ہیں، آج اعلان کررہا ہوں کہ پیپلزپارٹی اور ایم کیو ایم کراچی کے حالات ٹھیک کریں مرکز سے جو ممکن سپورٹ ہوئی فراہم کریں گے، ملک میں امن و امان کی خاطر طالبان کی مذاکرات کی پیشکش کو سنجیدگی سے لینا چاہیے بندوق گولیاں مسائل کا حل نہیں بلکہ مسئلے کا حل ٹیبل پر بیٹھ کر ہونا چاہیے، سیاست بہت ہو چکی اب ملکی مسائل حل کرنے کا وقت ہے، پچھلے حکمرانوں سے کیا گلہ کروں اگر کچھ کیا ہوتا تو قوم آج بجلی کی لوڈشیڈنگ کے عذاب میں مبتلا نہ ہوتی، ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ بجلی لوڈشیڈنگ میں عوام کو فوری عارضی ریلیف دینے کیلئے 500 ارب کا سرکلر ڈیبٹ آتا رہیں گے۔ انہوں نے گزشتہ روز الحمراء ہال میں نومنتخب ممبران قومی و صوبائی اسمبلی کے اعزاز میں مبارکباد کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سندھ، بلوستچان، کے پی کے اور پنجاب کے ممبران قومی و صوبائی اسمبلی کو انتخابات میں شانار کامیابی پر دل کی گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوں اور یہ کہنا چاہتا ہوں کہ پاکستان کے عوام نے ووٹ ڈالتے وقت کسی جگہ میچورٹی، کسی جگہ جذباتی اور کسی جگہ روایتی ہونے کا ثبوت دیا، ہماری کامیابی بڑے مارجن جبکہ ناکامی چھوٹے مارجن سے ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ پچھلی پارلیمنٹ نے 5سال مکمل کیے بہت سے لوگ کہتے تھے کہ حکومت فوری ختم ہونی چاہیے۔ اسمبلیوں سے استعفوں، پنجاب حکومت چھوڑنے اور سڑکوں پر مرکزی حکومت کے خلاف تحریک چلانے کی بات کی گئی لیکن سڑکوں پر آکر حکومتی تختہ الٹنے کا وقت گزر گیا۔ عوامی مینڈیٹ والی حکومت کو کارکردگی پیش کرنے کاموقع ملنا چاہیے، جنہوں نے پچھلے 5سال قوم کے سامنے کارکردگی پیش کی ان کے پردے کے پیچھے ترانے چلتے تھے۔ قومی اسمبلی کی 13 سیٹوں کے ضلع میں ایک لاکھ ووٹ بھی نہیں ملا۔ انہوں نے کہا کہ ہم آئین کے راستے پر چل کر مہذب قوم کہلانے کے لائق ہوتے جارہے ہیں۔ 11مئی حساب کا دن ثابت ہوا مہذب قومیں اسی طرح احتساب کیا کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جمہوریت کی مضبوطی، قانون کی بالادستی اور ججز بحالی کیلئے ہماری جدوجہد بھی شامل ہے۔ ہم نے انتخابی مہم کے دوران گالی نہیں نکالی، اشتہارات اخلاق کے دائرے میں مہذب، مثبت تھے جن میں ہماری ماضی اور موجودہ پنجاب کی حکومت کی کارکردگی دکھائی گئی۔ انہوں نے کہا کہ پرامن انتقال اقتدار پر بڑا خوش ہوں کاش 1947ء سے اب تک قوم اسی ڈگر پر چلتی رہتی۔ پاکستان 18 کروڑ عوام کا ملک ہے بیلٹ بکس کی شناخت کو انہوں نے جو پہچانا ہے یہ پہلا زینہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے یہ روایت 65سال ضالع کرنے کے بعد ڈالی ہے۔ ہم نے جہاں جس کا مینڈیٹ آیا اس کو خوشدلی سے تسلیم کیا، کے پی کے میں دوسری پارٹی کا مینڈیٹ ہے تو الیکشن کے دوسرے روز ہی ہی اعلان کیا کہ حکومت بنانا اکثریت والی پارٹی کا حق ہے۔ کچھ ساتھی چاہتے تھے کہ وہاں حکومت بنائیں لیکن ہم نے بہتر فیصلہ کیا۔ بلوچستان میں دوسری پارٹیوں سے ملکر حکومت بنا رہے ہیں۔ سندھ میں پی پی پی اور ایم کیو ایم کو مینڈیٹ ملا وہ حکومت بنائیں۔ انہوں نے اعلان کیا کہ پی پی پی اور ایم کیو ایم کراچی کے حالات ٹھیک کریں مرکز سے جو سپورٹ ہوئی کریں گے لیکن پھر وہاں خون خرابا، رشوت ستانی اور لاشیں نہیں گرنی چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت میں انصاف، میرٹ کی حکمرانی، رول آف لاء، آئین و قانون کی پاسداری ہونی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے دہشت گردی کی جنگ میں 40ہزار جانیں گنوائی، معیشت تباہ ہو گئی، تو پھر کیوں نہ مذاکرات کریں، طالبان کی مذاکرات کی پیشکش کو سنجیدگی سے لینا چاہیے بندوق اور گولیاں مسئلے کا حل نہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی اور بجلی بحران کا مسئلہ ٹھیک ہو گیا تو معیشت ٹھیک ہو جائے گی جس سے روزگار بڑھے گا مہنگائی کم ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ کہا جاتا تھا کہ کوئی پارٹی اکیلی حکومت نہیں بنا سکے گی، پیشن گوئیاں ہوئی کہ سپلٹ مینڈیٹ ملے گا 35 سیٹیں اس کو، 60 سیٹیں فلاں پارٹی کو اور 90 تک سیٹیں مسلم لیگ (ن) کو ملیں گی لیکن اللہ کا شکر ہے کہ اکثریت ملی اور آزاد ممبران نے کمی پوری کردی۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ 5 سال حکومت کیلئے بڑا امتحان ہے۔ 18 کروڑ عوام کی خدمت کا اللہ اس دینا دیں اور آخرت میں ضرور اجر دے گا۔ نواز شریف نے کہا کہ پچھلی حکومت نے 16ہزار ارپ رویے کے قرضے پہلے یہ کیسے اتریں گے؟ وسائل بالکل نہیں جبکہ قرضے اربوں، کھربوں کے ہیں، پچھلے قرضوں کو اتاریں یا بجلی ٹھیک اور ترقیاتی کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ 30 فیصد حکومتی اخراجات کو کم کردیں گے، موجودہ حالات پر قابو پانے کیلئے قرضے لینے پڑے تو لیں گے لیکن اپنی عیش عشرت کیلئے قرضے نہیں لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو ہمارے پہلے 100 دنوں کے پروگرام سے پتہ چل جائے گا کہ حکومت درست سمت میں جارہی ہے۔ نواز شریف نے کہا کہ این اے 68 کی عوام نے ایک لاکھ 40 ہزارووٹوں سے کامیابی دلوائی اپنے حلقے میں ایک بار بھی پنسل گیا صرف سرگودھا شہر میں جلسہ کیا۔ وہاں سے پہلی بار الیکشن لڑا۔ اب حلقے میں جاکر عوام کا شکریہ ادا کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ 95 ہزار ووٹوں کی مرکزی سے جیتا ہوں۔

یہ بھی پڑھیں  سرکاری ملازمین کو پنشن کی ادائیگی بینک اکاﺅنٹس کے ذریعے کرنیکا فیصلہ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker