تازہ ترینعلاقائی

حسینہ واجد بدصورت سیاست کی علامت ہیں ۔محمدناصراقبال خان

لاہور (پریس ریلیز )ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی صدرمحمدناصراقبال خان ،سیکرٹری جنرل محمدرضاایڈووکیٹ ،سینئر نائب صدورمحمدفاروق چوہان، ندیم اشرف ،تنویرخان،میاں زاہدلطیف،صدرمدینہ منورہ سرفرازخان نیازی،صدرساؤتھ ویسٹ یوکے وسیم احمدہاشمی ،صدر کراچی یونس میمن، صدرچنیوٹ راناشہزادٹیپو،منڈی بہاؤالدین مرزاخالد محمود اورصدرفیصل آباد ندیم مصطفی نے کہا ہے کہ حسینہ واجدانتقام ،عداوت اور بدصورت سیاست کی علامت ہے۔حسینہ واجد کے جماعت اسلامی کی قیادت کیخلاف انتہاپسندانہ اقدامات ا نتظامی نہیں انتقامی ہیں۔ بھارتی آشیربادپربنگلہ دیش کی محب وطن اورپاکستان دوست سیاسی قیادت کو موت کے گھاٹ اتاراجارہا ہے۔ مطیع الرحمن نظامی شہیدپاکستان پرقربان ہوگئے ،ان سمیت جماعت اسلامی بنگلہ دیش کے متعددرہنماؤں کاعدالتی قتل عالمی ضمیر کوجھنجوڑرہا ہے ۔ حسینہ واجد نے اپنا آمرانہ اقتدارکوطول دینے کیلئے بنگلہ دیش کوبھارت کی طفیلی ریاست بنادیا ۔ بھارت خاموشی کے ساتھ بنگلہ دیش کواپنے شکنجے میں لے رہا ہے ۔بھارت نوازبنگالی حکومت نے مطیع الرحمن نظامی نہیں انصاف اورانسانیت کوتختہ دارپرلٹکا یا ، بنگالی حکومت کی حالیہ بربریت پرپاکستان اورترکی سمیت دنیا بھر کے مسلمانوں میں غم وغصہ کی لہردوڑ گئی ہے۔وہ ایک اجلاس سے خطاب کررہے تھے ۔محمدناصراقبال خان نے مزید کہا کہ بنگلہ دیش میں پاکستان دوست سیاستدانوں کی سزائے موت پرہماری اسمبلیوں میں محض مذمت کی نام نہادقراردادکافی نہیں ،حسینہ واجد سے انتقام لیا جائے ۔ مطیع الرحمن نظامی شہید بیگناہ مگرضمیر کے قیدی تھے اورضمیر کے قیدی کسی کٹھ پتلی صدریاانتہاپسندوزیراعظم سے رحم کی اپیل نہیں کیا کرتے ۔انہوں نے کہا کہ مطیع الرحمن نظامی نے جرم بیگناہی کی پاداش میں خوشی خوشی جام شہادت نوش کرلیا مگر اپنے نظریات اور فلسفہ سیاست پرآنچ نہیں آنے دی ۔بھارت نوازحسینہ واجد ظلم وبربریت کے بل پربنگلہ دیش میں پاکستان سے محبت کرنیوالے زندہ ضمیر شہریوں کوہراساں نہیں کرسکتی ۔انہوں نے کہا کہ بنگالی قوم حسینہ واجد سے مطیع الرحمن نظامی سمیت جماعت اسلامی کے دوسرے رہنماؤں کی شہادتوں کاحساب ضرور لے گی ۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button