تازہ ترینعلاقائی

ٹیکسلا میں بوڑھے پنشنرؤں کی موجودہ حکمرانوں سے فریاد

ٹیکسلا ( ڈاکٹر سید صابر علی/ نا مہ نگار)ٹیکسلا میں بوڑھے پنشنرؤں کی موجودہ حکمرانوں سے فریاد،زندگی کے آخری ایام سکھ اور چین سے گزارنے کے لیئے ہماری پنشن میں 50فی صد اضافہ کیا جائے ورنہ تحصیل ٹیکسلا میں لاکھوں بوڑھے پنشنر اپنے سرؤں پر کفن باندھ کر سڑکوں پر نکل آئیں گے جسکی تمام تر زمہ داری موجودہ حکمرانوں پر ہو گی حکومت نے اپنے حکمرانوں کو عیاشی کر نے کے لیئے 300فی صد اضا فہ کیا ہم بوڑھوں کی فریاد نواز لیگ کے حکمران نہ سنیں گئے تو کیا ہم قبر میں جا کر فرشتوں کو سنائیں گے بجٹ میں پنشن مہنگائی کے تناسب سے بڑھائی جائے اور ان غریبوں کو ہر دفعہ کی طرح اس مرتبہ بھی لولی پاپ نہ دیا جائے اور ان کے ارمانوں کا خون نہ کیا جائے بلکہ پنشن میں کم از کم پچاس فی صد ا ضافہ کیا جائے تا کہ پنشنرز اس مہنگائی کے دور میں دو وقت کی روٹی کھا سکیں ان خیالات کا اظہار راجہ محمد فضل نے گلبرگ کالونی اپنے آفس میں میڈیا کے نما ئندؤں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا راجہ محمد فضل کا کہنا تھا کہ دن بدن مہنگائی میں ا ضافہ ہو رہا ہے غریب غربت کی چکی میں پس رہا ہے امیر امیر تر ہو رہا ہے غریبوں کے بچے مہنگائی کے ہاتھوں تنگ آ کر خود کشیاں کر رہے ہیں ملک میں بے روزگاری،کرپشن،نا انصافی عروج پر ہے پیپلز پارٹی کے دور اقتدار میں 50فی صد تنخواہوں میں ریکارڈ اضافہ کیا گیا تھا جو کہ مہنگائی کے تناسب سے پھر بھی کم تھا مگر موجودہ حکمران سات یا دس فی صد کی رٹ لگائے ہوئے ہیں اگر وہ 50فی صد کا ریکارڈ نہیں توڑ سکتے تو کم از کم 50فی صد ہی تنخواہوں اور پنشن میں اضافہ کر کے عوام کو کچھ تو ریلیف دیں سات یا دس فی صد اضافہ اونٹ کے منہ میں زیرے کے مترادف ہے حکمران اپنی تجوریاں تو بھرتے ہیں اس ملک میں بسنے والے غریبوں کا نہیں سوچتے ہم موجودہ حکمرانوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ پنشن میں مہنگائی کے تناسب سے ا ضافہ کیا جائے تاکہ ہم بڑھاپے میں سکون کی زندگی بسر کر سکیں ٹیکسلا میں بوڑھے پنشنرز مردو خواتین کی وزیر اعظم پا کستان میاں نواز شریف،میاں شہباز شریف ،وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان،چیف جسٹس آف پا کستان سے اپیل کی ہے کہ ان بوڑھے پنشنروں کی فریاد پر بھی ہمدردانہ غور کیا جائے جو مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
error: Content is Protected!!