بین الاقوامیتازہ ترین

سعودی عرب دھماکے ، خودکش حملہ آور پاکستانی تھا :سعودی حکام

جدہ (ڈیسک نیوز) سعودی عرب میں چوبیس گھنٹے میں چار خودکش حملے ہوئے ، مدینہ میں مسجد نبوی ﷺ کے قریب دھماکے میں چار اہلکاروں سمیت چھ افراد شہید ہوگئے ۔ واقعے کے بعد سیکیورٹی سخت کردی گئی ۔ جدہ میں امریکی قونصل خانے پر حملہ کرنیوالا پاکستانی تھا ، سعودی وزارت داخلہ نے دعویٰ کر دیا ۔ چوبیس گھنٹے کے دوران سعودی عرب میں چار خودکش حملے ہوئے ۔ مدینہ منورہ میں مسجد نبوی ﷺ کے قریب افطار کے کچھ دیر بعد ایک خودکش حملہ آور نے سیکورٹی چیک پوسٹ کو نشانہ بنایا ۔ سیکورٹی فورسز حملہ آور کو روکنے کی کوشش کی تو اس نے دھماکا کر دیا ۔ دھماکے کے وقت علاقے میں لوگوں کی بڑی تعداد موجود تھی ۔ دھماکے کے بعد سیکورٹی فورسز نے علاقے کو مکمل طور پر سیل کر دیا ۔ مسجد نبوی ﷺ کے قریب ہونیوالے دھماکے کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں پتہ چلا ہے کہ خودکش بمبار کی عمر اٹھارہ سال تھی اور اس کا تعلق طائف سے تھا ، وہ سعودی شہری ہے ۔ قطیف میں مسجد العمران کے قریب بھی خودکش حملہ ہوا جس میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ۔ جدہ میں بھی خود کش حملہ امریکی قونصل خانے کے قریب ہوا جس میں دو سیکورٹی اہلکار زخمی ہوئے ۔ سعودی وزارت داخلہ نے ٹویٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ امریکی قونصل خانے کی عمارت کے قریب خود کو اڑانے والا خود کش بمبار پاکستانی تھا ۔ عبداللہ گلزار خان گذشتہ 12 سالوں سے سعودی عرب میں مقیم تھا اور ڈرائیور کا کام کرتا تھا ۔ سعودی عرب میں چار خود کش دھماکوں کے بعد ملک بھر میں سیکورٹی سخت کر دی گئی ہے ۔ سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے حملوں میں ملوث عناصر کا پتہ چلایا جا رہا ہے –

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button