تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو:جماعت اسلامی بھائی پھیرو کی کشمیر اے پی سی میں دینی،سیاسی ،تاجر،و صحافتی رہنماؤں کی شرکت

بھائی پھیرو(نامہ نگار) جماعت اسلامی بھائی پھیرو کی کشمیر اے پی سی میں دینی،سیاسی ،تاجر،و صحافتی رہنماؤں کی شرکت ۔کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے ،حافظ سعید کو رہا کیا جائے جبکہ سید صلاح الدین کو دہشت گرد قرار دینے کی مذمت ۔شہدائے کشمیر کی قربانیاں رائگاں نہیں جانے دی جائیں گی۔جماعت الدعوہ اور تحریک آزادی کشمیر کے کی صدارت میں یکجہتی کشمیر اے پی سی میں مطالبہ۔تفصیلات کے مطابق جماعت الدعوہ اور تھریک آزادی کشمیر کی طرف سے بلائی گئی یکجہتی کشمیرآل پارٹیز کانفرنس کی صدارت عبدالحمید بھٹہ زونل مسول وسطی پنجاب جماعتہ الدعوہ پاکستان نے کی،جبکہ مہمان خصوصی عبدالغفار منصور چیئرمین تحریک آزادی کشمیر ضلع قصور تھے۔نقابت اور میزبانی کے فرائض ابو یاسر چیئرمین تحریک آزادی کشمیر فیکٹری ایریا بھائی پھیرونے سر انجام دیے دیگر مہمان گرامی میں محمدسلیم چیئرمین دیہی شرقی جماعتہ الدعوہ فیکٹری ایریا، ظفر اقبال چیئرمین فلاح انسانیت فاونڈیشن سرائے مغل ،میاں محمد آصف چیئرمین لیبر ونگ تحریک آزادی کشمیر فیکٹری ایریا بھائی پھیرو،طارق محمود چیئرمین فلاح انسانیت فاونڈیشن بھائی پھیرو جبکہ دیگر جماعتوں میں جماعت اسلامی کے امیر زون بھائی پھیرو مقبول حسین کمبوہ ،نائب امیر زون بھائی پھیرو ملک محمد صدیق فانی ،کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات حاجی محمد رمضان ،نوجوان رہنما عرفان کھچی ،پھولنگر پریس کلب کے زاہد منہاس ،راؤ تنویر،ڈاکٹرمحمد اشرف ،بھائی پھیرو پریس کلب کے سید بابر مشہدی اور تحریک انصاف اور دیگر سیاسی مذہبی جماعتوں نے شرکت کی۔ اے پی سی میں شرکا نے ایک متفقہ قرارداد کے ذریعے مطالبہ کیا حافظ سعید کو رہا کیا جائے اور سید صلاح الدین کو عالمی دہشت گرد قرار دینے کی عالمی سطح پر مزمت کی جائے ۔ حکومت اور اپوزیشن کشمیر کے مسئلہ پر ایک ہوجائیں اور اپنے ذاتی اور مقامی ایشوز کو بھول کر کشمیر یوں کے قتل عام کو رکوانے اور کشمیر کی آزادی کیلئے متحد ہو جائیں۔جب تک بھارتی فوج کشمیر سے نکل نہیں جاتی بھارت کے ساتھ ہر طرح کے تعلقات اور معاہدات معطل کئے جائیں۔یہ قومی مسئلہ ہے کسی ایک جماعت،حکومت یا اپوزیشن کا مسئلہ نہیں۔عبدالحمید بھٹہ زونل مسول وسطی پنجاب نے اپنے خطاب میں کہا کہ کشمیر ی تکمیل پاکستان اور پاکستان سے الحاق کیلئے بھارتی قابض فوج کی گولیوں بکتر بند گاڑیوں اور ٹینکوں کا پتھروں سے مقابلہ کررہے ہیں جبکہ ہمارے حکمران محض تماشائی بنے ہوئے ہیں۔جماعت اسلامی بھائی پھیرو زون کے امیر مقبول حسین کمبوہ اور نائب امیر ملک محمد صدیق نے کہا کہ ہم جماعت الدعوہ کو اے پی سی بلانے پر خراج رتحسین پیش کرتے ہیں۔ کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات حاجی محمد رمضان نے کہا بھارتی فوج نے ہزاروں نوجوانوں کوبے دردی سے شہید کردیا ہے، زخمیوں کو ہسپتالوں میں علاج کی سہولتیں نہیں دی جارہیں،انہوں نے کہا کہ انڈیا ہمارے دریاؤں پر بند باندھ کر ہمارے ملک کو صحرا میں بدلنا چاہتا ہے مجاہدیں کشمیر پاکستان کے بقا کی جنگ لڑ رہے ہیں ۔ عبدالغفار منصور چیئرمین تحریک آزادی کشمیر ضلع قصورنے کہا کہ سینکڑوں بچوں اور خواتین کو بھی بھارتی قابض فوج نے بدترین تشدد کا نشانہ بنایا اور انہیں گرفتار کرکے جیلوں میں بند کردیا گیا ہے،سینکڑوں لوگوں کی آنکھوں کی روشنی چھین لی گئی ہے۔نوجوان رہنما اور چئر مین سول سوسائٹی عرفان کھچی نے کہا کہ بھارت کے تمام تر ریاستی مظالم کے سامنے کشمیری عوام جرا ت اور استقامت کا پہاڑ بنے ہوئے ہیں اور عالمی برادری کو پیغام دے رہے ہیں کہ وہ آزادی کے مطالبے سے کسی قیمت پر دستبردار نہیں ہونگے۔پھولنگر پریس کلب کے زاہد منہاس،ڈاکٹر محمد اشرف،راؤ تنویر نے کہا کہ کشمیری پاکستان پر کٹ رہے ہیں انہوں نے کہا کہ حکومت کشمیر میں رائے شماری کیلئے اقوام متحدہ میں آواز بلند کرے اور اس حوالے سے عالمی ادارہ انصاف سے رجوع کیا جائے۔نے کہا کہ ہم پاکستانی قوم کی طرف سے سیدعلی گیلانی سمیت تما م حریت رہنماوں اور کشمیر ی قوم کو یقین دلاتے ہیں کہ پاکستان ان کے ساتھ کھڑا ہے اور کسی بھی صورت میں ہم انہیں تنہا نہیں چھوڑیں گے۔بھائی پھیرو پریس کلب کے سیکرٹری انفارمیشن سید بابر مشہدی نے کہا کہ ہمیں قرآن اور تلوار کا دامن تھام کر مظلوم کشمیریوں کی مدد کرنی چاہیے اور جہاد کے سبق کو دوباہ زندہ کرنا چاہیے انہوں نے کہا کہ حضرت امام حسین نے کربلا کے میدان میں حق پر ڈٹ جانے کادرس دیا ہے اور کشمیری اپنے حق کی جنگ لڑ رہے ہیں۔انہوں نے برہان مظفر وانی کی شہادت کو خراج تحسین پیش کیا۔طارق محمود چیئرمین فلاح انسانیت فاونڈیشن بھائی پھیرونے کہا کہ کشمیر ایک انسانی مسئلہ ہے ہم انڈین فوجوں کے ہاتھوں کشمیر میں ھقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کے مسئلہ پر پورے پاکستان میں مہم چلائیں گے۔ ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس اہم مسئلہ کو عالمی عدالتوں تک لیجائے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button