تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو:گنا کی فصل زمینوں میں گلنے لگی

بھائی پھیرو(نامہ نگار)گنا کی فصل زمینوں میں گلنے لگی۔شوگر ملوں سے سابقہ بقایا جات نہ ملنے اور شوگر ملیں نہ چلنے سے کروڑوں ایکڑ پر گندم کاشت نہیں ہوسکی ۔فصل کہاں لے جائیں،حکومت بند شوگر ملز بحال کرے۔کسان سراپا احتجاج۔ان خیالات کا اظہار ہیومن رائٹس امن کمیٹی پنجاب کے صدر رانا جہانداد خاں نے گنے کے کاشتکاروں کے ہمراہ صحافیوں سے گفتگو کرتے کیا۔انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں گنا کی فصل تو تیار ہو گئی مگر اس کے خریدار دکھائی بھی نہیں دیتے۔اس حوالے سے کسان تنظیموں کی جانب سے احتجاج کیا گیا۔انہوں نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ گنا کی فصل تیار ہو چکی ہے۔سابقہ حالات کی روایت کو برقرار رکھا گیا تو لاکھوں مالیت کی فصل زمینوں میں ہی گل سڑ کر تباہ ہو جائیگی۔جس کا خمیازہ عام کسان کو بھگتنا ہو گا۔جس سے کسان اس فصل کی کاشت سے متنفر ہو جائیں گے۔ملکی سطح تک اس کے منفی اثرات نمایاں ہوں گے۔ہم ہر فورم پر کسانوں کے حقوق کی جنگ لڑیں گے۔کسانوں کا مطالبہ تھا کہ وزیر اعظم عمران خان،وفاقی و صوبائی وزرائے زراعت،وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کسانوں کے استحصال کا نوٹس لیں اور لاکھوں مالیت کی فصل کو تباہ ہونے سے بچانے کے لیئے اقدامات کرتے ہوئے بند شوگر ملز کو بحال کیا جائے اور فوری اقدامات عمل میں لائیجائیں۔تاکہ کسان بھی ملکی تعمیرو ترقی میں کردار ادا کر سکیں۔انہوں نے کہا کہ سابقہ سیزنوں کے اربوں روپے شوگر ملوں کی طرف بقایا ہیں ۔کسان کنگال ہو چکے ہیں۔شوگر ملیں نہ چلنے اور بقایا جات نہ ملنے سے کروڑوں ایکڑ پر گندم کاشت نہیں ہوسکی۔انہوں نے کہا کہ جلد ہی ہزاروں کسان پتوکی شوگر مل کے باہر دھرنادیں گے اور سابقہ بقایاجات ملنے تک وہاں بیٹھے رہیں گے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button