تازہ ترینعلاقائی

سانگھڑ:قحط متاثرین کے لئے گندم کی تقسیم میں کرپشن کے خلاف فکسڈ اٹ کا مظاہرہ

سنجھورو(نامہ نگار)سانگھڑ قحط متاثرین کے لئے گندم کی تقسیم میں کرپشن کے خلاف فکسڈ اٹ کا مظاہرہ۔تفصیلات کے مطابق بیس روز قبل ریلیف سنٹر چٹاریوں گورنمنٹ پرائمری اسکول سوڈو خان ملاح سے اچھرو تھر کے قحط متاثرین کے لئے آئی ہوئی گندم میں مبینہ طورخورد برد کا انکشاف ہوا ہے جس کے خلاف فکسڈ اٹ کے نوجوانوں نے احتجاج کیا اس موقع پر فکسڈ اٹ کے مقامی کارکنان نور محمد،مومن خان، عامر مغل، نیاز بہن اسلم خان پٹھان ،فردوس اور لطیف نے الزام عائد کیا کہ سندھ گورنمنٹ کی جانب سے اچھرو تھر کے قحط متاثرین کے لئے امدادی گندم دی گئی تھی مگر مختیار کارسانگھڑ یونس کھوسو نے مبینہ طور پر بیس روز قبل ریلیف سنٹر سے سرکاری گندم کا ٹرک مقامی بیوپاری کے زریعے اوپن مارکیٹ میں فروخت کر دیا چوری کی گئی گندم جو پانچ لاکھ مالیت تھی مبینہ طور پر خیبرانی پولیس  نے پکڑ لیا جب کہ 550 شک چوری کی کاروائی کرتے ہوئے معاملہ مٹیاری عدالت کے حوالے کیا گیا مظاہرین کا کہنا تھا کہ اس سلسلے میں ڈپٹی کمشنر سانگھڑ نثار احمد میمن نے نوٹس لیتے ہوئے تین دن کے اندر انکوائری کا کہا تھا مگر بیس روز گزرنے کے باوجود انکوائری کے پہلو منظر عام پر نہ آسکے۔نورخان کا کہنا تھا کہ اچھر تھر کی عوام بھوک سے مر رہی ہے بچے خوراک کی کمی کی وجہ سے موت کی آغوش میں جارہے ہیں مگر انتظامیہ ٹس سے مس نہیں ہو رہی انھوں نے کہا کہ تین ماہ گزر جانے کے بعد بھی انتظامیہ نے متاثرین کو گندم کی تیسری قسط جاری نہیں کی ۔مظاہرین کا کہنا تھا کہ مختیار کار سانگھڑ نے متاثرین سے شناختی کارڈ کی کاپیاں لے کر فرضی خانہ پری کی  رکھی ہے ۔انتظامیہ اچھرو تھر کی بھوکی پیاسی عوام  کو ریلیو دینے کے بجائے زخموں پر نمک چھڑک رہی ہے مظاہرین نے چیف جسٹس سپریم کورٹ اور وزیر اعلٰی سندھ سے معاملے کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں  حضور اکرم ﷺ بحیثیت سربراہ خاندان

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker