تازہ ترینعلاقائی

حجرہ شاہ مقیم :زناء کاری کے جرم میں گرفتار تھانہ شیر گڑھ کا تھانیدار اور خاتون رہا

downloadحجرہ شاہ مقیم (نامہ نگار)حجرہ شاہ مقیم :زناء کاری کے جرم میں گرفتار تھانہ شیر گڑھ کا تھانیدار اور خاتون رہا،علاقہ مجسٹریٹ نے مقدمہ بے بنیاد قرار دیکر خارج کر دیا،مفرور اشتہاری کو گرفتار کروانے سب انسپکٹرکے پاس گئی رنگ رلیاں منانے کا الزام غلط ہے ،خاتون زرین بی بی کا عدالت میں بیان۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ شب شیر گڑھ پولیس نے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر اوکاڑہ راجہ بشارت کے حکم پر مقامی تھانہ میں تعینات سب انسپکٹر محمد زمان سہو کی پرائیویٹ رہائش پر چھاپہ مار کر اسے ایک خاتون زریں بی بی ،اسکے نجی ملازم محمد احمد سمیت زناء حرام کاری کے جرم میں گرفتار کر کے مقدمہ درج کر لیا تھا ،پولیس کا موقف تھا کہ خفیہ عوامی اطلاع پر ریڈ کیا گیا مقدمہ کی کاروائی کو آگے بڑھاتے ہوئے پولیس نے گرفتار سب انسپکٹر محمد زمان سہو اسکے ملازم اور خاتون کو علاقہ مجسٹریٹ عامر رضا بیٹو کی عدالت میں جسمانی ریمانڈ ،میڈیکل لیگل رپورٹ اور ڈی این اے ٹیسٹ جیسی قانونی کاروائی مکمل کرنے کی خاطر پیش کیا تو رنگ رلیاں کیس کی خفیہ کہانی سامنے آ گئی جس میں فریقین کے موقف کے مطابق نہ ہی انھیں برہنہ حالت میں پکڑا گیا اور نہ ہی وہ رنگ رلیاں زناء حرام کاری کرتے پکڑے گئے جبکہ خاتون نے اپنے ساتھ زناء کاری سے صاف انکار کر دیا اور مقدمہ کو بے نبیاد قرار دیا جس سے اتفاق کرتے ہوئے عدالت نے مقدمہ خارج کرنے کا حکم جاری کرتے ہوئے سب انسپکٹر اسکے نجی ملازم اور خاتون کو رہا کر دیا، رہائی پانے والے پولیس سب انسپکٹر نے حجرہ پریس کلب میں ایک پر ہجوم پریس کانفرنس میں انکشاف کیا کہ علاقہ کے بعض با اثر افراد جعلی چیک کے ایک مقدمہ 135/13میں بے جا مداخلت کرتے ہوئے ملزم فریق کے حامی تھے جو کہ مقدمہ میں گناہ گار ٹھر ا تو ان با اثر لوگوں نے میرے خلاف منصوبہ بندی کر لی اور ڈی پی او اوکاڑہ کو غلط اطلاع فراہم کر کے مجھے ناجائز کاروائی کا حصہ بنوا ڈالا دوسری طرف رنگ رلیوں کے الزام سے رہائی پانے والی پچیس سالہ خاتون زرین بی بی نے بتایا کہ وہ تھانہ شہبورکے نواحی گاؤں 32فور ایل کے ایک شریف گھرانے کی فرداور تین بچوں کی ماں ہے،تھانہ شیر گڑھ اور تھانہ حجرہ شاہ مقیم کے مقدمات میں اشتہاری ملزم منیر احمد جو کہ اسے بلیک میل کر تا اور اسکے ساتھ زبردستی شادی کرنا چاہتا تھا گزشتہ روز وہ اوکاڑہ کورٹ سے اپنے بچوں کا خرچہ وصول کر کے نکلی تو اشتہاری منیر نے اسے روک کر اغواء کرنا چاہا اور دھمکیاں دیں اور فرار ہو گیا جس کی گرفتاری کی غرض سے وہ شیر گڑھ میں مقیم اپنی خالہ زاد ساجدہ بی بی کے گھر آگئی جسکی وساطت سے سب انسپکٹر محمد زمان سہو سے رابطہ کیا اور اسکے گھر ملزم کی شیر گڑھ میں موجودگی کی اطلاع دینے چلے گئے تھانیدار گشت سے جب واپس لوٹا تو چند افراد پولیس لیکر آگئے اور ہمیں نا جائز گرفتار کروا دیا خاتون نے ڈی پی او اوکاڑہ سے انھیں انصاف فراہم کرنے کی بھی اپیل کی اور کہا کہ ہمیں ناجائز مقدمہ میں ملوث کر کے ہماری عزت کا جنازہ نکال دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں  حج درخواستوں کی وصولی شروع

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker