پاکستانتازہ ترین

سینیٹ:اپوزیشن نےنئےمالی سال کابجٹ ایک بار پھر مسترد کر دیا

اسلام آباد(پاک نیوز)سینیٹ میں اپوزیشن نے نئے مالی سال کے بجٹ کو ایک بار پھر مسترد کر دیا اوربجٹ پر نظر ثانی کا مطالبہ بھی کردیا۔چیئرمین صادق سنجرانی کی زیر صدارت سینیٹ کا اجلاس ہوا،سینیٹرسراج الحق نے بجٹ پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ تاریخ میں پہلی بار ایسا بجٹ آیا ہے جس پر سب کا اتفاق ہے کہ مسترد کیاجائے،یہ بجٹ حکومت نےخود تیارنہیں کیا۔سراج الحق نے کہا کہ آئی ایم ایف آنٹی کرسٹین کے بیان بعد ایک منتحب ایم این اے اسد عمر کو ہٹاکر غیر منتحب شحص کو لگایا گیا،اس بجٹ میں تعلم، توانائی، صحت اور ترقی کیلئے کوئی سمت نہیں ہے،تعلیم اور صحت کے بجٹ 20فیصد کٹوتی کی گئی،سربراہ جماعت اسلامی نے مطالبہ کیا کہ چِینی کی قیمت میں اضافے پر کمیشن بنایا جائے۔مشاہد اللہ خان نے کہا کہ بجٹ سے پہلے سے لگی ہوئی ہے،2017ء میں معیشت  آئی سی یو میں نہیں تھی،پاکستان سٹاک ایکسچینج کا شمار دنیا کی پانچ بہترین سٹاک ایکسچینج میں ہوتاتھالیکن اب حالات یہ ہیں کہ ملک کو آئ ایم ایف کے آگے گروی رکھ دیا گیا۔سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ افراط زد بہت زیادہ ہوگئی ہے،اسد عمر نے بھی بجٹ پر تنقید کی ہے،اس وقت ملک میں سب سے بڑا مسئلہ صحت کا ہے،بجٹ میں صحت کیلئے کچھ نہیں رکھا گیا ہے۔سینیٹر اورنگزیب خان نے کہا کہاحتساب اس ملک میں ہونا ضروری ہے، 24ہزار ارب کے قرضے کس نے لئے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ دس سال میں لینے والے قرضوں کی تحقیقات ہونی چاہئے۔بجٹ پر بحث میں  طاہر بزنجو نے بھی حصہ لیا،سینیٹ اجلاس پیر کی سہ پہر ساڑھے چار بجے تک ملتوی کر دیا گیا

یہ بھی پڑھیں  بورے والا ہومیو ڈاکٹر ز ایسوسی ایشن کے وفد کی ڈاکٹر بی اے خرم سے تعزیت

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker