شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / تازہ ترین / بھائی پھیرو:مذہبی و سیاسی جماعتوں کی طرف سے کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کیلیے ریلیاں،جلوس

بھائی پھیرو:مذہبی و سیاسی جماعتوں کی طرف سے کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کیلیے ریلیاں،جلوس

بھائی پھیرو(نامہ نگار)بھائی پھیرو کی مذہبی و سیاسی جماعتوں کی طرف سے کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کیلیے ریلیاں،جلوس، احتجاجی مظاہرے
تفصیلات کے مطابق بھارت کی جانب سے آرٹیکل370 اور 35اے کے خاتمے نیز کشمیر کی تقسیم پر سیاسی و مذہبی جماعتوں کی طرف سے احتجاجی مظاہرے اور ریلیوں کا انعقاد کیا گیا۔اس موقع پر مظاہرین نے بھارت کے خلاف پلے کارڈز،بینرز اورچارٹ اٹھا رکھے تھے جن پر کشمیریوں سے اظہار یکجہتی اور مودی حکومت کے خلاف نعرے درج تھے۔مجامع مسجد انوار غوثیہ المعروف اڈے والی مسجد بھائی پھیرو کے سامنے ملتان روڈ پر تمام ریلیاں اور جلوس اکھٹے جمع ہو کر ایک جلسہ عام کی شکل اختیار کر گئے۔ شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے جمعیت العلمائے پاکستان کے رہنما وں سید ذاکر حسین شاہ اور مشتاق نورانی نے کہا کہ مقبو ضہ کشمیر کی آئینی حیثیت کی تبدیلی کی بھارتی کوشش اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزی ہے، بھارتی اقدامات سے 2اٹیمی طاقتوں کے تعلقات خراب اور علاقائی سلامتی بھی متاثر ہوگی۔بھارت کی طرف سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے حوالے سے حالیہ غیر قانونی اقدام علاقائی امن اور سیکیورٹی کی صورت حال پر سنگین نتائج مرتب کرے گا۔جماعت اسلامی کے رہنما سردار نور احمد ڈوگر اور مقبول احمد کمبوہ نے کہا کہ ہم حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ پاکستان کشمیریوں کو اقوام متحدہ کے قراردادوں کے مطابق حق حود ارادیت کے حصول تک ان کی سفارتی، سیاسی اور اخلاقی حمایت جاری رکھے۔ عالمی برادری کے امتحان کا وقت شروع ہوچکا۔ مُہذب دنیا جو باتیں کرتی ہے ان پر عمل درآمد کرے۔انہوں نے کہا کہ ہم حق خودارادیت کیلئے جدوجہد پر کشمیریوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ جمعیت العلمائے اسلام کے رہنما مولانا عبدالعزیز نے کہا کہ کشمیر پاکستانیوں کے دلوں کی دھڑکن ہے۔ بھارت نے مکروہ اقدامات کرکے عالمی قوانین کی خلاف ورزی کی، بھارت کا مکروہ چہرہ دنیا کے سامنے بے نقاب ہوچکا ہے، مقبوضہ وادی میں سیاسی احتجاج پر طاقت کا بہیمانہ استعمال کیا جارہا ہے۔ بھارت نے کشمیر میں اہم سیاسی رہنماؤں کو نظر بند کر رکھا ہے، کاغذی کارروائی کشمیریوں کے مستقبل کا فیصلہ نہیں کرسکتی، پاکستان اور کشمیری کاغذی کارروائی کو مسترد کرچکے ہیں۔جمعیت اہلحدیث کے مولانا معاز خالد نے کہاکہ 72برسوں سے کشمیری حق خود ارادیت کے منتظرہیں مگربھارت نے اپنی نو لاکھ فوج کے ذریعے نہتے کشمیریوں کی آزادی کو سلب کررکھاہے۔کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات حاجی محمد رمضان نے کہا کہ برھان مظفروانی کی شہادت کے بعد سے اٹھنے والی تحریک آزادی وادی کے کونے کونے میں پھیل چکی ہے۔ہندوستانی مظالم کے باوجودکشمیری عوام سڑکوں پر نکل احتجاج کرتے نظر آتے ہیں۔بھارت اگر کشمیری عوام پر مظالم کے پہاڑ توڑ رہا ہے تو اس میں اصل قصور ان عالمی اداروں اور طاقتوں کا ہے جو مسلمانوں کے ساتھ دوہرا معیاراور معاندانہ رویہ اختیار کئے ہوئے ہیں۔حاجی محمد رمضان نے مزید کہاکہ بھائی پھیرو کی تمام مزہبی و سیاسی جماعتیں اور عوام کشمیریوں کے ساتھ اظہاریکجہتی کرتے ہیں اور ان کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ پاکستان کے عوام اپنے کشمیری بھائیوں کی جدوجہد آزادی کے ساتھ ہیں اور کسی موقع پر بھی انہیں تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان او رکشمیر دوجسم ایک جان ہیں جب تک ہمارے جسموں میں خون کا ایک بھی قطرہ موجود ہے ہم اپنے مظلوم بھائیوں کی مدد سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ انشاء اللہ وہ وقت دور نہیں جب کشمیر میں آزادی کا سورج طلوع ہوگا اور کشمیری عوام بھی دنیا کی دیگر قوموں کی طرح ایک آزاد فضا میں سانس لیں گے۔امریکہ اوریورپی ممالک کومسلمانوں کے حوالے سے اپنے دوہرے معیارات بدلنے ہوں گے

یہ بھی پڑھیں  حکومت یا حزب اختلاف،الطاف حسین کی ریفرنڈم کرانے کی ہدایت

What is your opinion on this news?