تازہ ترینعلاقائی

حجرہ شاہ مقیم:کانسٹیبل قتل کیس،زیرحراست باپ بیٹے کو پولیس نے تشدد کے دوران بد فعلی پرمجبورکردیا

hujraحجرہ شاہ مقیم (نامہ نگار)کانسٹیبل قتل کیس میں زیر حراست باپ بیٹے سمیت چار ملزمان کو پولیس نے تشدد کے دوران بد فعلی پر مجبور کر دیا،تھانہ صدر پولیس کے شرمناک فعل پر بار ایسوسی ایشین کا عدالتوں کا بائیکاٹ،ڈی ایس پی دفتر کی تالہ بندی،شہریوں کا احتجاج،پولیس نے بوگس ایف آئی آر درج کر دی ،حقائق پر مبنی مقدمہ درج کیا جائے ،سیکرٹر ی بار کی پریس کانفرنس۔تفصیلات کے مطابق بجلی چوری کے خلاف جاری مہم کے دوران گزشتہ دنوں گاؤں 37ڈی میں دیہاتیوں نے محکمہ پولیس اور واپڈا اہلکاروں کو تشدد کا نشانہ بنایا تھا جسکے نتیجہ میں پولیس کنسٹیبل محمد احمد جاں بحق ہو گیا جسکے خلاف صدر پولیس دیپالپور نے کریک ڈاؤن کر کے درجنوں افراد کو حراست میں لے لیا تھا گزشتہ روز دن دیہاڑے ڈی ایس پی دیپالپور امتیاز احمد بھلی کی زیر نگرانی انسپکٹر مشتاق احمد نے تین کنسٹیبلان کے ہمراہ واپڈا اہلکار سرور سلیمی و دیگر کی موجودگی میں اپنے پیٹی بھائی کے قتل کے الزام میں زیر حراست ملزمان کو دوران تفتیش بد فعلی پر مجبور کر دیا جن میں والد مبشر کے ساتھ اسکے بیٹے جمشید کو بد فعلی پر مجبور کر دیا گیا جبکہ باپ کو اسکے بیٹے کے ساتھ گھناؤنا فعل کروایا گیا،جبکہ دیگر دو ملزمان افتخار اور زبیر کو بھی تھانہ حوالات میں دن دہاڑے باہمی بد فعلی کا نشانہ بنوایا گیا اس واقعہ کی خبر جنگل کی آگ کی طرح علاقہ میں پھیل گئی جسکے خلاف شہریوں میں سخت تشویش کی لہردوڑ گئی، ڈی پی او اوکارہ راجہ بشارت اطلاع پر کر تھانہ صدر پہنچ گئے اور پولیس گردی اور ماہ صیام میں پولیس کی اس مکروہ انتقامی کاروائی کی خود تحقیقات کیں اس موقع پر میڈیا اور سول سوسائٹی کے نمائندے رات گئے تک موقع پر موجود رہے ،پولیس تھانہ سٹی نے اس شرمناک واقعہ کا مقدمہ درج کر کے ذمہ دار انسپکٹر مشتاق احمد کو گرفتار کر لیا ،دریں اثناء بار ایسوسی ایشن دیپالپور نے اس واقعہ کو پولیس گردی اور انسانیت کی تذلیل قرار دیتے ہوئے عدالتوں کا مکمل بائیکات کر دیا ،وکلاء برادری نے پرزور الفاظ میں مذمت کی اور اسے بدترین انتقامی کاروائی قرار دیتے ہوئے ڈی ایس پی دفتر دیپالپور ،تھانہ سٹی دیپالپور کی مکمل تالا بندی کر دی بعد ازاں جنرل سیکرٹری بار ایسوسی ایشن دیپالپور چوہدری وحید احمد ایڈووکیٹ نے ایک پرہجوم پریس کانفرنس میں کہا کہ پولیس نے انسانیت کی تذلیل کرکے اس واقعہ کی فرضی ایف آئی آر درج کی ہے جس میں پولیس اور واپڈا ملازمین کو بچانے کی مذموم کوشش کی گئی ،جنرل سیکرٹری نے واضع کی اکہ اس سلسلہ میں ڈی ایس پی امتیاز احمد بھلی اور ایس ایچ او کے خلاف مقدمہ درج کر کے انھیں ملازمت سے برخاست کیا جائے ،انہوں نے بتایا کہ وکلاء اس واقعہ میں ملوث ذمہ داروں کو کیفر کردار تک پہنچانے تک عدالتی بائیکاٹ جاری رکھے گی اس سلسلہ میں وکلاء برادری ایک رٹ پٹیشن بھی دائر کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں  داؤدخیل : شیر شاہ سوری روڈ پر لگے بجلی کے پول عوام کے لیے وبال جان بن گئے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker