شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / تازہ ترین / بھائی پھیرو۔ٹیکسٹائل مل کے مزروروں کے تنخواہیں نہ ملنے پر مظاہرے دوسرے روز بھی جاری

بھائی پھیرو۔ٹیکسٹائل مل کے مزروروں کے تنخواہیں نہ ملنے پر مظاہرے دوسرے روز بھی جاری

بھائی پھیرو(نامہ نگار)بھائی پھیرو۔نواحی ٹکسٹائل مل کے درجنوں مزروروں کے تنخواہیں نہ ملنے پر مظاہرے دوسرے روز بھی جاری۔ انتظامیہ مزدوروں کی لاکھوں کی تنخواہ ہڑپ کرگئی واجبات کی ادائیگی کے لئے مطالبہ کرنے والے مزدوروں کو دھکے دیکر فیکٹری سے نکال دیا ورکروں نے تنخواہوں کی عدم ادائیگی پر شدید احتجاج کرتے ہوئے انتظامیہ کے خلاف زبردست نعرے بازی کی۔سٹی پولیس پر امن احتجاجی مزدوروں کوزبردستی اٹھا کر تھانہ لے گئی۔تفصیلات کے مطابق بھائی پھیرو کے نواح میں واقع دیوان ٹکسٹائل مل کے درجنوں مزدور سالہا سال کی تنخواہیں نہ ملنے پر دوسرے روز بھی سراپا احتجاج بن کر مل گیٹ پر دھرنا دیکر بیٹھ گئے اور نعرے بازی کرنے لگے۔ ملز انتظامیہ نے تنخواہیں اور دیگر واجبات دینے سے انکار کردیا ورکروں کے اسرار پر ملز انتظامیہ نے ورکروں کو دھکے اوردھمکیاں دیتے ہوئے فیکٹری سے نکال دیا۔ ورکروں کو چار چار پانچ سال کے لاکھوں روپے کے واجبات نہ دینے پر گھروں میں فاقوں نے ڈیرے ڈال رکھیں اور بچے معمولی ادویات تک نہ ملنے پر سسک سسک کر مرنے پر مجبور ہوگئے ہیں احتجاجی مظاہرے کے دوران مزدوروں نے ہاتھوں میں پلے کارڈو کتبے اٹھارکھے تھے جن پر ملزانتظامیہ کے خلاف مختلف قسم کے نعرے بھی درج تھے ورکر احتجاج کے دوران اپنے مطالبات کے حق میں اور فیکٹری انتظامیہ کے ناروا سلوک پر نعرے لگاتے رہے ایک مزدورعلی رضا نے صحافیوں کو بتایا کہ جب تک واجبات کی ادائیگی نہیں ہو جاتی ہم احتجاج جاری رکھیں گے آصف حسین نے بتایاکہ انتظامیہ نے تنخوہیں مانگے پر ہم پر نوکری بند کرکے ظلم کی انتہا کردی ہے مدثرنے بتایا کہ تنخواہ مانگنے پر فیکٹری انتظامیہ نے دھکے دیکر فیکٹری سے نکال دیا اور دھمکیاں مل رہیں ہیں کہ ہم اپنے غنڈوں کے زریعے تمہیں سبق سکھا دیے گے عبدالشکور نے بتایا کہ تنخواہیں اور ایڈوانس نہ ملنے پر بھوکے مر رہے ہیں گھروں میں فاقے پڑے ہوئے ہیں شاہد اقبال نے کہا کہ ظالم ملز انتظامیہ نے تنخواہیں نہ دیکر ہم غریبوں سے روٹی کا نوالہ تک چھین لیا ہے گھر وں کو جانے کے لئے کرایہ تک نہیں ہے فیکٹری کے باہر ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں شہبازنے کہا فیکٹر ی میں کام کرنے کے دوران کمپریسرکی ٹینکی پھٹنے سے میری ٹانگ ٹوٹ گئی فیکٹری انتظامیہ نے کوئی تعاون نہ کیا اپنی مددآپ کے تحت علاج کروایا سات بچوں کو باپ ہوں اب تنخواہ نہ ملنے پر سانس لینا اورزندگی کے ایام پورے کرنا پہاڑنظر آتا ہے لیبر راہنمابوٹا شاداب نے کہا کہ مزدوروں کے واجبات اورتنخواہیں نہ دی گئیں تو عدالت عالیہ کا دروازہ کھٹکھٹاؤں گا۔انہوں نے کہا کہ پولیس نے پر امن مجبور مظاہرین کو زبردستی احتجاج سے روک کر سرمایہ دار مل مالکان کا ساتھ دیا ہے اگر ہمیں انساف نہ ملا تو ہم لاہور جاکر وزیر اعلی ہاوس کے باہر خود سوزی کر لیں گے۔جب صحافیوں نے حقائق جاننے کے لئے ڈیوٹی پر مامورسیکیورٹی گارڈ سے مل انتظامیہ سے ملانے کا کہا تو انہوں نے مل انتظامیہ سے ملانے سے انکار کر دیا۔

یہ بھی پڑھیں  عمران خان کی جیتنے کے بعد کی تقریر

What is your opinion on this news?