بین الاقوامیتازہ ترین

امریکہ اور طالبان کے درمیان تاریخی معاہدہ آج ہوگا

دوحہ(ڈیسک نیوز)افغانستان میں امن کے لئےپاکستان کی کوششیں رنگ لے آئیں،امریکا اور افغان طالبان کے درمیان تاریخی امن معاہدے پر دستخط آج ہوں گے۔تفصیلات کے مطابق قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امریکا اور طالبان افغانستان میں امن کے قیام کے لیے تاریخی معاہدے پر آج دستخط کریں گے جس کے نتیجے میں دہائیوں سے جاری جنگ کا خاتمہ ہو جائے گا۔غیر ملکی خبر ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اس اتفاق رائے کی کامیابی پر آگے بڑھنے کے لیے امریکا اور طالبان کے درمیان معاہدہ متوقع ہے اور طالبان اور افغان حکومت کے درمیان مذاکرات بھی بہت جلد شروع ہوجائیں گے۔افغانستان میں دو دہائیوں سے جاری جنگ کے خاتمے کے لیے امریکا اور طالبان کے درمیان گزشتہ ایک برس سے مذاکرات جاری ہیں جن میں درمیان میں تعطل بھی آیا، لیکن پھر دوبارہ آغاز ہوا اور اب ایک ہفتے کی جنگ بندی کی کامیابی کی صورت میں معاہدے کو حتمی شکل دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔تقریب میں پاکستان سمیت پچاس ممالک کے نمائندوں کو شرکت کی دعوت دی گئی ہے،گذشتہ روز دوحہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا تھا کہ افغانستان امن اور مفاہمت کی جانب بڑھ رہا ہے،کل کا معاہدہ انٹرا افغان مذاکرات کی راہ ہموار کرے گا اورکل کا دن افغانستان اور افغان عوام کیلئے بڑ ا دن ہے۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ امن معاہدے پر دستخط کی تقریب میں پاکستان کو دعوت دی گئی، اس سارے عمل کا حصہ بننا پاکستان کے لیے بڑا اعزاز اور مخلصانہ کوششوں کا اعتراف ہے، بھارت نے افغان امن معاہدے میں رکاوٹیں کھڑی کرنے کی کوششیں کیں لیکن اس کے باوجود اگر یہ معاہدہ ہو جاتا ہے تو یہ بہت بڑی کامیابی ہوگی۔دوسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جمعہ کے روز افغان عوام پر زور دیا کہ وہ نئے مستقبل کے موقع سے فائدہ اٹھائیں، ان کا کہنا تھا کہ طالبان کے ساتھ معاہدہ افغانستان میں جاری جنگ کے خاتمے کی راہ ہموا کرے گا۔ تمام افغان قوتوں کو اس موقعے کوغنیمت سمجھنا چاہیے،وزیر خارجہ مائیک پومپیو طالبان کے ساتھ امن معاہدے پر دستخط کی تقریب میں شرکت کریں گے۔ٹرمپ کا کہنا تھا کہ طالبان کے ساتھ معاہدے کے بعد افغانستان میں تعینات 12 یا 13 ہزار امریکی فوج کی تعداد کم کرکے 8 ہزار 600 کردی جائے گی۔ اگر طالبان نے معاہدے کا احترام کیا تو امریکی فوج افغان سے مرحلہ وار مکمل طور پر نکل جائے گی۔خیال رہے کہ امریکی صدر نے یہ بیان ایک ایسے وقت میں دیا ہے جب دوسری طرف طالبان اور امریکا کے درمیان آج 29 فروری کو ایک تاریخی معاہدہ طے پانے جا رہا ہے۔واضح رہے کہ افغانستان میں گزشتہ اٹھارہ برس سے جنگ جاری رہے اور اس وقت امریکا کے تیرہ ہزار اور نیٹو کے ہزاروں فوجی موجود ہیں جو گیارہ ستمبر دوہزار ایک میں امریکا میں ہونے والے حملے کے بعد شروع ہوئی تھی۔

یہ بھی پڑھیں  دبئی ٹیسٹ ، نیوزی لینڈ کاپاکستان کو جیت کیلئے 261رنز کا ہدف

یہ بھی پڑھیے :

What is your opinion on this news?

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker