تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو: مشہور جھنڈا بردارمیلہ ”جماعتاں‘‘گزشتہ رات رونقیں بکھیرنے کے بعد ختم

بھائی پھیرو(نامہ نگار)بھائی پھیرو۔ایشیا میں ایام کے لحاظ سے سب سے بڑا، مشہور جھنڈا بردارمیلہ ”جماعتاں‘‘ بھائی پھیرو میں گزشتہ رات رونقیں بکھیرنے کے بعد ختم ہو گیا۔سینکڑوں عارضی طور پر سجائی گئی دوکانوں پر خریدو فروخت کرنے والوں کا رش۔میلے کا سماں۔ مرد و خواتین پر مشتمل ہزاروں ملنگوں اور عقیدت مندوں کے قافلے شیر گڑھ کیلیے روانہ۔ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے،وجدانہ رقص،لوریاں۔ سیالکوٹ سے اٹھارہ فروری کو چلنے والے قافلے تیرہ مارچ کو آستانہ عالیہ حضرت داؤد بندگی کرمانی کے عرس میں شیر گڑھ پہنچین گے۔عقیدت مندوں کے قافلے رنگ برنگے جہازی سائز کے جھنڈے اُٹھائے سینکڑوں میل پیدل سفر کرتے شیر گڑھ پہنچیں گے۔ تفصیلات کے مطابق صدیوں پہلے شروع ہونے والا روایتی میلہ جماعتاں کا ہزاروں افراد پر مشتمل قافلہ سینکڑوں میل پیدل سفر کرتے ہوئے گزشتہ رات بھائی پھیرو پہنچ گیا۔ قافلہ میں شامل سینکڑوں افراد،عقیدت مندوں اور ملنگوں نے رنگ برنگے بڑے بڑے جہازی سائزکے جھنڈے اٹھا رکھے تھے جن کے ساتھ عقیدت مندوں نے منتیں مان کر طرح طرح کے کپڑے،کھانے پینے کا سامان،اور دیگر قیمتی تحفے باندھ رکھے تھے۔جبکہ ملنگوں کی ٹولیاں پاؤں میں گھنگرو باندھے ڈھول،سارنگی اور ہارمونیم کی تھاپ پہ رقص کر کے عوام سے داد وصول کر رہے تھے اور کئی لوگ انہیں نئے نئے نوٹ دیکر انکی حوصلہ افزائی کرکے اپنی عقیدت کا اظہار کر رہے تھے۔خواتین اپنے بچوں کو لوریاں دلوا کر دعائیں لے رہی تھیں اور بعض منچلے نوجوان بھی لوریاں لے کر لوگوں کی توجہ کا مرکز بنے ہوئے تھے۔بھائی پھیرو ملتان روڈ پر کھانے پینے سے لیکرضروریات زندگی کی ہر چیز اور بچوں کے کھلونوں کی عارضی دوکانوں کے بازار سج چکے تھے اور ہر طرف میلے کا سماں تھا۔رات کو قافلے درس بابا شیر بہادر میں ٹھہرے اور یہاں انہیں لنگر تقسیم کیا گیا۔رات بھر کھیل تماشے والے گویے میوزک پر لوک گیت اور فلمی گانے گا گا کر عوام کو محظوظ کرتے رہے۔ روایت ہے کہ یہ میلہ صدیوں پہلے شروع ہوا اور اس کے قافلے سینکڑوں میل دور ضلع گجرات سے پیدل چل کر کئی دنوں کی مسافت کے بعد راستے میں ہر پندرہ میل کے بعد پڑاؤ کرتے ہوئے ضلع اُوکاڑہ کے قصبہ شیر گڑھ کے دربار بابا داؤد بندگی تک پہنچتے ہیں جہاں پر یہ میلہ چھ دن تک جاری رہتا ہے، وہاں عقیدت مند نعت خوانی، قوالیوں، دھمالوں اور رقص کے ذریعے دربار پر اپنی عقیدت کا اظہار کرتے ہیں اور اس میلے میں لاکھوں کی تعداد میں لوگ شامل ہوتے ہیں۔ رات بھر کھیل تماشا کرنے والے گوئیے اور گلوکار گانا گا کر لوگوں کا دل بہلاتے ہیں اورگزشتہ رات کو یہ قافلہ شیر گڑھ کیلیے روانہ ہوگیا اور ایک رات بہڑوال میں قیام کرنے کے بعداٹھارہ مارچ کویہ میلہ دربار حضرت داؤد بندگی میں چھ دن قیام کے بعد اختتام پزیر ہوگا۔ اس طرح اٹھارہ فروری سے شروع ہونے والا ایشیا کی تاریخ کا ایام کے لحاظ سے سب سے بڑا میلہ چھتیس دنوں کے بعد اختتام پزیر ہو جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں  پرویزمشرف کوسندھ ہائیکورٹ نے اسمبلی رکنیت کے لیے نااہل قرار دے دیا گیا

یہ بھی پڑھیے :

What is your opinion on this news?

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker