بین الاقوامیتازہ ترین

جوزف بائیڈن حلف اٹھا کر 46 ویں امریکی صدر بن گئے

نیو یارک(ڈیسک نیوز) ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں کی طرف سے مظاہروں کے بعد سخت سکیورٹی حصار میں جوزف بائیڈن نے امریکا کے 46 ویں صدر کا حلف اٹھانے کے بعد کہا ہے کہ سب کا صدر ہوں، کوئی تفریق نہیں کروں گا۔ متحد ہو کر دہشتگردی اور وباء کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔ اختلافات کو جنگ میں نہیں بدلنا چاہیے۔عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق نومنتخب صدر کی تقریب حلف برداری کے موقع پر دارالحکومت واشنگٹن میں ہائی الرٹ ہے جہاں 25 ہزار فوجیوں کو تعینات کیا گیا ہے جب کہ اس بار تقریب میں شرکت کے لیے صرف ایک ہزار افراد کو مدعو کیا گیا۔ تقریب میں شرکت کرنے والوں میں زیادہ تر کانگریس ارکان اور دیگر نمایاں شخصیات شامل ہیں۔جو بائیڈن کی اہلیہ جل بائیڈن، نائب صدر کاملا ہیرس کے شوہر ڈگلس ایمہوف، سابق صدر باراک اوباما ان کی اہلیہ، سابق صدر جارج ڈبلیو بش اور ان کی اہلیہ، سابق صدر بل کلنٹن اور ان کی اہلیہ نے بھی شرکت کی۔تقریب کے آغاز سے قبل گلوکارہ لیڈی گاگا نے قومی ترانہ پڑھا جس کے بعد جو بائیڈن سے چیف جسٹس جان رابرٹ نے حلف لیا اور صدارتی دستاویزات پر دستخط کے بعد خطاب کیا۔ نائب صدر کاملا ہیرس بھی سپریم کورٹ کی ایسوسی ایٹ جسٹس سونیا سوٹمائر سے حلف لیا۔بائیڈن کے حلف لینے سے قبل گلوکارہ جینیفر لوپیز اور گلوکار گارتھ بروکس میوزیکل پرفارمنس پیش کیں جب کہ تقریب کے اختتام پر اپسکوپل چرچ کے پادری سلویسٹر بیمن دعا کروائی۔ حلف اٹھانے کے بعد پہلے خطاب میں نو منتخب امریکی صدر کا کہنا تھا کہ چیف جسٹس رابرٹس اور نائب صدر کملا ہیرس، سپکر نینسی پلوسی ، مائیک پینس سمیت دیگر کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ آج کا دن جمہوریت کی کامیابی کا دن ہے۔ کچھ روز کیپٹیل ہل پر حملے نے جمہوری بنیادیں ہلا دی تھیں۔ آج اشخاص کی نہیں جمہوری عمل کی فتح ہوئی، جمہوریت بہت قیمتی ہونے کے ساتھ نازک بھی ہے۔جوزف بائیڈن کا مزید کہنا تھا کہ امریکا کو بہت چیلنجز کا سامنا ہے۔ ہم نے جنگوں اور مشکل حالات میں مل کر مقابلہ کیا۔ کورونا کے باعث امریکا میں بیروزگاری بڑھی، معیشت متاثر ہوئی۔ ہمارا ملک عظیم لوگوں کا ملک ہے، اپنی پارٹی کے پہلے دو صدور کی گرانقدر خدمات کو سراہتا ہوں۔نو منتخب امریکی صدر کا کہنا تھا کہ آج پورے امریکا کو پھرسے متحد کرنے کا دن ہے، امریکا عظیم لوگوں کا ملک ہے، ہمارے درمیان بہترین روابط ہیں، میں امریکی آئین کی طاقت پر یقین رکھتا ہوں۔ ہمیں نفرت، تعصب، نسل پرستی، انتہا پسندی کا مقابلہ کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ تاریخ، عقیدے اور دلیل کے ساتھ ہم امریکیوں کو متحد کریں گے، آج کا دن وہ ہے جب ہمیں ریاست ہائے متحدہ امریکا بننا ہو گا، ہمیں اختلافات کو جنگ میں نہیں بدلنا چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں  ارے تم ہو کون،سب جانتے ہیں

 

یہ بھی پڑھیے :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker