تازہ ترینعلاقائی

محکمہ توسیع زراعت کی نجکاری نہیں ہونے دینگے، کسان تنظیمیں

بھائی پھیرو(نامہ نگار)بھائی پھیرو۔محکمہ توسیع زراعت کی نجکاری نہیں ہونے دینگے، کسان تنظیمیں۔نجکاری سے جعلی ادویات،کھاد،بیج بنانے والا مافیا بے لگام ہو کر کسانوں کو دونوں ہاتھوں سے لوٹے گا۔تفصیلات کے مطابق علاقے بھر کی کسان تنظیموں کے رہنماوں کسان بورڈ پاکستان کے سیکرٹری اطلاعات حاجی محمد رمضان،کسان موومنٹ کے مرکزی چئیرمیں میجر حبیب میو،انجمن کاشتکاراں کے چوہدری عبداللہ بلوچ اور دیگر کئی کسان رہنماوں نے اپنے اپنے بیان میں کہا محکمہ زراعت توسیع کو حکومتی سطح پر کسانوں کی بہتری کے لیے ترتیب دیا گیا تھا جس کے تحت کسانوں کو زراعت انسپکٹرز اور فیلڈ اسسٹنٹس گاوں گاوں جا کر فصلات سے بہتر پیداوار کے حصول کے لیے معلومات فراہم کرتے تھے اور پیسٹی سائیڈز ادوایات کی جگہ مختلف جڑی بوٹیوں کے زریعے سے خود آرگینک طریقہ سے مختلف فصلات سے رس چوسنے والے کیڑوں اور دیگر مہلک بیماریوں سے بچا کے لیے اسپرے تیار کر کے پیداواری صلاحیت میں اضافہ کے ساتھ ساتھ پیسٹی سائیڈز کمپنیوں کی مہنگی اور غیر میعاری ادویات کے استعمال سے بھی چھٹکارا یقینی ہوتا ہے پر عملدرآمد کرواتے تھے۔اسی طرح مارکیٹ میں جعلی زرعی ادویات،جعلی کھادیں اور جعلی بیج چیک کرکے کسانوں کو ان مافیاز سے بچانے کیلیے بھی یہ محکمہ اپنا رول اچھے طریقے سے سر انجام دیتا تھا۔ چنانچہ ملکی سطح پر پیسٹی سائیڈز کمپنیوں،جعلی زرعی ادویات،جعلی کھادیں اور جعلی بیج بنانے والوں کیلیے یہ محکمہ زراعت ایک ننگی تلوار تھا۔اس لیے ان کمپنیوں کو اس محکمہ کی موجودگی کانٹے کی طرح چھبنے لگی اور چند بااثر کمپنی مالکان جنکے سیاسی شخصیات سے گہرے تعلقات ہیں نے تمام کمپنیوں کو اکٹھا کر کے محکمہ زراعت توسیع کو ناکام بنانے کے لیے حکومتی سطح پر سیاسی شخصیات سے کچھ لو اور کچھ دو کی پالیسی پر اتحاد کر کے ہم صلاح مشورہ ہو کر حکومت کو محکمہ زراعت توسیع کو خ ختم کرنے پر آمادہ کرکے اس محکمہ کی نجکاری کرنے کا فیصلہ کروا دیادیا۔ کسان رہنما حاجی محمد رمضان نے نے مزید کہا کہ محکمہ زراعت توسیع کا قیام حکومت کا کسانوں کے لیے ایک احسن اقدام تھا کیونکہ ایک تو اس سے ناقص اور مہنگی زرعی ادوایات،جعلی کھادوں اور جعلی بیجوں سے چھٹکارا ملااور دوسری جانب ہماری فصلات کی پیداواری صلاحیت میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہوا ہے یہی بات پیسٹی سائیڈز کمپنیوں اور مافع مافیازکے مالکان کو برداشت نہیں ہو رہی یہ نہیں چاہتے کہ ملک ترقی اور خوشحالی کی راہ پر گامزن ہو اور اس وقت یہ مفاد پرستوں کا گروہ مل کر رات دن اس کوشش میں ہے کہ محکمہ زراعت توسیع کو ملکی سطح پر پرائیویٹ کروانے میں کامیاب ہو سکیں اور محکمہ زراعت توسیع کو نجکاری کی جانب دھکیل کر ہم پھر سے غیر میعاری زرعی ادویات،جعلی بیج،جعلی کھادیں من مانے ریٹوں پر فروخت کرکے ملک میں کسانوں سے لوٹ مار کریں،کسان تنظیموں کے رہنماوں نے کہا کہ ہم محکمہ زراعت توسیع کی کسی صورت نجکاری نہیں ہونے دیں گے اور ان مافیاز کو کسانوں کو لوٹنے کی اجازت نہیں دیں گے۔کسان رہنماوں نے وزیراعظم عمران خان سے اپیل ہے کہ چند مفاد پرستوں کی باتوں میں آ کر محکمہ زراعت توسیع کو اگر پرائیویٹ کر دیا تو یہ پیسٹی سائیڈز کمپنیوں کے مالکان کسانوں کا بری طرح سے استحصال کریں گے جس سے ملک کا معاشی گراف مزید نیچے گرے گا۔

یہ بھی پڑھیں  دیپالپور:چیف لیسکو کی طرف سے ایس ڈی او دیپالپور کیلئے گولڈمیڈل کا اعلان

یہ بھی پڑھیے :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker