تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو شہر اور گردونواح غیر قانونی لیبارٹیاں بیماریوں کا گڑھ بن گئیں

بھائی پھیرو(نامہ نگار) بھائی پھیرو شہر اور گردونواح غیر قانونی لیبارٹیاں بیماریوں کا گڑھ بن گئیں۔ غیر تربیت یافتہ عملہ اور نہ ہی موثر ساز و سامان استعمال،مریضوں کی فرضی رپورٹس بنانے کا انکشاف، لیباڑیوں میں میٹرک پاس ملازمین لیبارٹریاں چلانے میں مصروف، انتظامیہ کی عدم دلچسپی سوالیہ نشان بن گئی۔ محکمہ صحت کارروائی کرنے سے گریزاں، بھائی پھیرو شہر اور گردونواح میں سینکڑوں کی تعداد میں غیر قانونی لیبارٹریاں قائم ہو گئیں ہیں، شہریوں کا اعلیٰ حکام سے نوٹس لینے کا مطالبہ، تفصیلات کے مطابق انتظامیہ نے بھائی پھیرو شہر کے مختلف علاقوں میں قائم غیر قانونی لیبارٹریز کو کھلی چھٹی دے رکھی ہے، جس کے باعث بھائی پھیرو شہر بھر میں جگہ جگہ قائم غیر قانونی لیبارٹریز شہریوں کو غلط رپورٹس جاری کرکے بیماریوں میں مبتلا کرنے میں مشغول ہیں۔لیبارٹریوں میں موجود میٹرک پاس غیرتربیت یافتہ عملہ من مرضی کی رپورٹس جاری کرنے میں مگن ہے، شہریوں نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ بھائی پھیرو شہر میں انسانی جانوں سے کھیلنے کا گندا دھندا جاری ہے،درجنوں غیر قانونی لیبارٹریاں کھلے عام کام کررہی ہیں، ماہر پیتھالوجسٹ کے بجائے لیب ٹیکنیشنز رپورٹ بناتے ہیں،خلاف قانون کام کرنے والوں سے باز پرس کرنے والا کوئی نہیں۔بھائی پھیرو میں مختلف شعبوں کی طرح محکمہ صحت کے حکام بھی غفلت کی نیند سور ہے ہیں،شہر میں درجنوں لیبارٹریز خلاف قانون کام کررہی ہیں، لیکن ان سے باز پرس کرنے والا کوئی نہیں۔علاج معالجے کے لیے جدید آلات سے لیس لیبارٹریزمرض کی درست تشخیص میں معاون ہوتی ہیں، لیکن بھائی پھیرو شہر میں قائم درجنوں لیبارٹریزماہرپیتھالوجسٹ کے بغیرچلائی جارہی ہیں،جہاں صرف لیب ٹیکنیشن موجود ہیں جو اکثردرست رپورٹ نہیں بنا تے، یہی نہیں بلکہ بھائی پھیرو کے بعض بڑے اسپتالوں کی لیبارٹریزمیں بھی ماہرپیتھالوجسٹ تعینات نہیں۔بھائی پھیرو شہر میں سینکڑوں کی تعداد میں لیبارٹریز ہیں،جن میں نان کوالیفائیڈ بندے بیٹھے ہیں جنہیں خود پتہ نہیں کہ رپورٹ کس چیز کی ایشو کی جارہی ہے،جس کا واضح مطلب ہے کہ وہ لوگوں کو دھوکا د ے رہے ہیں اور ان کے ساتھ کھیل رہے ہیں۔قابل زکر بات یہ ہے کہ مذکورہ لیباٹریوں میں نہ کوئی موثر سازو سامان موجود ہے اور نہ پتھالوجسٹ ڈاکٹر کام کررہے ہیں،اکثر و بیشتر پیرا میڈیکل سٹاف نے پتھالوجسٹ ڈاکٹرز کا روپ دھار کر سادہ لوح شہریوں کو مختلف رپورٹس جاری کرکے بیماریوں میں مبتلا کرنا شروع کر رکھا ہے، شہریوں نے پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن سے مطالبہ کیا ہے کہ بھائی پھیرو شہر اور گردونواح میں قائم غیر قانونی لیبارٹریوں کے خاتمے کے لئے چیک اینڈ بیلنس کے عمل کو فعال بنانے کے احکامات جاری کریں تاکہ ضلع بھر میں قائم خود ساختہ لیبارٹریوں کا خاتمہ ممکن ہو سکے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button