پاکستانتازہ ترین

ڈینگی وبائی شکل اختیار کرگیا، کیسز میں مزید اضافہ

لاہور(رپورٹ)ملک بھر میں ڈینگی وبائی شکل اختیار کرگیا ہے جس کے باعث ڈینگی کیسز میں مزید اضافہ دیکھا جارہا ہے۔تفصیلات کے مطابق ملک بھر میں ڈینگی کی صورتحال دن بہ دن خراب ہوتی جارہی ہے جس کے پیش نظر یومیہ ہزاروں کیسز رپورٹ ہورہے ہیں۔محکمہ صحت سندھ کی جاری کردہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں سندھ بھر میں 387 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جن میں سے 33کیسز کا تعلق کراچی سے ہے۔محکمہ صحت سندھ کا کہنا ہے کہ ضلع کورنگی 117، ضلع وسطی 37، ضلع  شرقی 57، ضلع ملیر  2، ضلع غربی 12، ضلع جنوبی 13 اور کیماڑی 7کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔محکمہ صحت سندھ نے بتایا کہ رواں سال کراچی میں ڈینگی سے 33 افراد، حیدرآباد میں 1 اور میرپور خاص میں 1 شخص جان کی بازی ہار گیا ہے۔اس کے علاوہ رواں ماہ یکم ستمبر سے آج تک کراچی میں 5 ہزار 498 کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ گزشتہ ماہ اگست میں  کراچی بھر میں 1265 کیسز رپورٹ ہوئے۔محکمہ صحت سندھ کا مزید کہنا ہے کہ رواں سال سندھ بھر میں9 ہزار 172 رپورٹ ہوچکے ہیں۔دوسری جانب خیبر پختونخوا میں بھی ڈینگی کی صورتحال بگڑتی ہوئی نظر آرہی ہے، محکمہ صحت خیبرپختونخوا کی رپورٹ کے مطابق صوبہ بھر میں مجموعی کیسز کی تعداد 7 ہزار 728 تک پہنچ گئی جبکہ ایکٹیو کیسز کی تعداد 1ہزار 651 تک ہے۔محکمہ صحت نے بتایا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں پشاور سے 172 جبکہ مردان میں 52 کیسز سامنے آئے جبکہ اس وقت صوبے کے مختلف اسپتال میں ڈینگی کے 89 مریض زیر علاج ہیں۔محکمہ صحت کا مزید کہنا ہے کہ اب تک مجموعی طور پشاور سے سب سے زیادہ 2 ہزار 346اور مردان سے 2 ہزار 157 کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں جبکہ صوبے بھر میں ڈینگی سے 7افراد کی موت واقع ہو چکی ہے۔محکمہ موسمیات نے وارننگ جاری کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان میں ڈینگی مزید بڑھنے اور وباء کی شکل اختیار کر سکتا ہے۔محکمہ موسمیات کا کہنا تھا کہ بارشوں کے بعد درجہ حرارت کم ہو کر 26 سے 29 ڈگری اور نمی 60 فیصد رہے گی، یہ موسم ڈینگی لاروا کی افزائش بڑھا دے گا۔محکمہ موسمیات نے کہا کہ کراچی، لاہور، پشاور، راول پنڈی، اسلام آباد، حیدرآباد، لاڑکانہ، فیصل آباد، سیالکوٹ اور ملتان میں اگلے ماہ سے ڈینگی وباء کی شکل اختیار کر سکتا ہے۔محکمہ موسمیات نے اپنے الرٹ میں کہا کہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں بھی ڈینگی بڑھے گا۔محکمہ موسمیات کے مطابق درجہ حرارت 16 ڈگری سینٹی سے نیچے جانے پر ڈینگی کی افزائش رک جاتی ہے، ستمبر کے وسط سے ہی ڈینگی کے حملے کے لیے سازگار موسمی ماحول بن چکا ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button