تازہ ترینعلاقائی

راولپنڈی:موت کے گھاٹ اتارے جانے والی بچی کے کیس کا معاملہ حل

murderراولپنڈی (رحیم عباسی نامہ نگار)تھانہ ایئر پورٹ کے علاقے میں پانچ دن قبل پراسرار طور پر موت کے گھاٹ اتارے جانے والی سات سالہ بچی کے کیس کا معاملہ حل کر لیا گیا۔ جسے مقتولہ کی پھوپھو کی دس سالہ بیٹی نے سینٹرل جیل اڈیالہ میں پابند سلاسل والد کے کہنے پر دوپٹے کا پھندہ ڈال کر موت کے گھاٹ اتارا، جسے گرفتار کر کے کاروائی شروع کر دی گئی ہے، واقعات کے مطابق 27اور 28اگست کو ڈھوک چوہدریاں کے علاقے میں سات سالہ سلمی دختر ذولفقار کی گلے میں پھندہ پڑی لعش برآمد ہوئی تھی، جسے نامعلوم افراد نے موت کے گھاٹ اتار کر ویرانے میں پھینک دیا تھا، جس کا مقدمہ پولیس نے ذولفقار کی مدعیت میں درج کیا تھا۔ اس حوالے سے ایس ایچ او انسپکٹر سید اظہر شاہ نے بتایا کہ بچی کے قتل کا مقدمہ درج کر کے کاروائی شروع کی، ایک بچی سنبل جس کی عمر دس سال ہے جس کے والد منشیات کیس میں ملوث ہونے پر سنٹرل جیل اڈیالہ میں بند ہے اور بچی اپنے ماموں ذولفقار کے پاس رہتی تھی، جس کے والد کا انتقال ہو چکا ہے، جو جیل میں اپنی والدہ کے پاس جاتی رہتی تھی جس کو والدہ نے کہا کہ اس کے ماموں ذولفقار نے جیل سے نکالنے کے لیے کچھ نہیں کیا، اس لیے تم اس کی بیٹی اور اپنی کزن کو سبق سکھاؤ،جس پر سنبل اپنی کزن کو لے کر ایک ویران جگہ پر چلی گئی اور سلمہ کے گلے میں دوپٹہ ڈال کر کھینچا جس سے وہ دم توڑ گئی، اور ماموں کو جا کہ بتایا کہ تین افراد نے سلمی کو مار دیا جن کو وہ نہیں جانتی ۔ جب پولیس نے مختلف بہانوں سے سنبل سے پوچھا تو اس نے سب کچھ بتا دیا، جسے گرفتار کر لیا گیا اور مزید کاروائی شروع کر دی گئی۔

یہ بھی پڑھیں  ہم نے گزرے سال 2015 میں کیا کھویا ؟۔۔۔کیا پایا؟

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker