تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو:کپڑے کی دوکان میں اچانک آگ لگنے سے تاجر کا لاکھوں روپے کا نقصان

aagبھائی پھیرو(نامہ نگار) مین بازار بھائی پھیرو میں کپڑے کی دوکان میں اچانک آگ لگنے سے تاجر کا لاکھوں روپے کا نقصان۔بلدیہ میں فائر بریگیڈ کی سہولت نہ ہونے کی وجہ سے بازار میں شام غریباں کا منظر۔ارد گرد کے تاجروں نے آگ لگنے کے خطرے کے پیش نظر اپنا سامان دوکانوں سے نکال لیا۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ رات مین بازار بھائی پھیرو میں ملک نذر حسین کی گارمنٹ کی دوکان میں اچانک آگ لگ گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے آگ کے شعلے آسمان سے باتیں کرنے لگے۔لوگوں نے بلدیہ بھائی پھیرو اور مقامی پولیس کو بار بار فون کئے لیکن بلدیہ میں فائر بریگیڈ کی سہولت میسر نہ ہونے سے اور بلدیہ کی پانی کی ٹینکی دیر سے آنے کی وجہ سے آگ نے پوری دوکان کو لپیٹ میں لے لیا۔پھیلتی ہوئی آگ سے جب ارد گرد کی دوکانوں کو بھی آگ لگنے کا خطرہ پیدا ہوگیا تو بازار کے دوکانداروں میں بھگدڑ مچ گئی اور بازار میں شام غریباں کا منظر پیدا ہوگیا۔لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت آگ بجھانے کی کوشش کی مگر آگ اتنی تیز تھی کہ بجھ نہ سکی ۔بالآخر کافی دیر کے بعد بلدیہ کی ٹینکی آئی اور بڑی مشکل سے آگ بجھائی مگر اتنی دیر میں آگ نے تاجر کے چالیس لاکھ روپے کے کپڑوں کو جلا کر خاکستر بنا دیا۔انجمن تاجراں کے رہنما حاجی محمد رمضان اور جماعت اسلامی کے مقامی امیر ڈاکٹر داؤد پرویز مغل نے خادم اعلی پنجاب سے بھائی پھیرو میں فائر بریگیڈ مہیا کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ان رہنماؤں نے کہا کہ اس صنعتی علاقہ میں آگ لگنے کے واقعات روز کا معمول ہیں مگر فائر بریگیڈ کی سہولت نہ ہونے کی وجہ سے ماضی میں درجنوں قیمتی جانیں ضائع ہو چکی ہیں اور اربوں کا نقصان ہوچکا ہے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button