پاکستانتازہ ترین

نیپرا اپنی کمزوریوں کے باعث عوام کا استحصال نہیں کرسکتی،چیف جسٹس افتخارچوہدری

cheif-justiceاسلام آباد(بیوروچیف)چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ نیپرا اپنی کمزوریوں کے باعث عوام کا استحصال نہیں کر سکتی، حکومت کہتی ہے کہ عوام قربانیاں دے، پہلے حکومت خود بھی تو کوئی قربانی دے،لوڈ شیڈنگ کے باعث عوام سڑکوں پر آتے ہیں تو حکومت سے کنٹرول نہیں ہوتا۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں تین رکنی بنچ لوڈ شیڈنگ کیس کی سماعت کر رہا ہے۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا کہ جنہوں نے عوام سے ووٹ لیا انہیں سپورٹ تو کرنا ہوگا، یہ ٹھیک ہے کہ ملک میں امن وامان کا مسئلہ ہے، پالیسی بنانا حکومت کو کام ہے، سیاسی مفادات کے لیے کسی کو نوازنے کے طریقے استعمال نہیں کرنے چاہئیں، ایک آدمی جو بچے نہیں پال پا رہا، اسے پاور پلانٹ سے کچھ لینا دینا نہیں۔ نیپرا کے وکیل راشدین کا کہنا تھا کہ حکومت بجلی کی کمی پوری کرنے کے لیے مختلف منصوبے بنا رہی ہے۔ جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ جب بھی کوئی نئی حکومت آتی ہے تو ایسی ہی باتیں کرتی ہے، نیپرا نے کام نہیں کرنا تو اسے بند ہی کر دیں، نیپرا ریگولیٹری اتھارٹی ہونے کے باوجود کچھ ریگولیٹ نہیں کر پا رہا۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا کہ کیپٹو پاور پلانٹ منظور نظر افراد کو دیئے گئے،سیٹھ ان پاور پلانٹس پر سات فیصد اضافہ وصول کرتا ہے، دوسری طرف سپریم کورٹ میں اظہر صدیق ایڈووکیٹ کی جانب سے درخواست دی گئی جس میں موٴقف اختیار کیا گیا کہ وزارت پانی و بجلی کے ماتحت نیپرا سمیت تمام اداروں میں ترقیاں میرٹ پر کی جائیں۔قائم مقام چیئرمین نیپرا خواجہ نعیم سمیت ممبران کی تقریاں کالعدم قرار دی جائیں، خواجہ نعیم کے عرصہ ملازمت کے دوران بجلی کی قیمتوں میں اضافہ سمیت تمام فیصلے کالعدم قرار دیئے جائیں ۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button