تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو:سرحدی علاقوں میں سیکورٹی اورانٹیلی جینس اداروں کی کارکردگی میں شہری دفاع کے محکمہ کا بہت اہم کردار ہے،عابد قریشی

بھائی پھیرو(نامہ نگار) سرحدی علاقوں میں سیکورٹی اور انٹیلی جینس اداروں کی کارکردگی میں شہری دفاع کے محکمہ کا بہت اہم کردار ہے جوکہ موجودہ حالات میں پوری طرح فعا ل نہ ہے ۔ضلع قصورکوسرحد ی علاقہ ہونیکے ناطے محکمہ شہری دفاع اور تنظیم شہری دفاع کی فعالیت کو اہم رول جائے ۔ جبکہ عملاً ایسا کچھ نہیں ہو رہا ہئے ۔ ان خیالات کا اظہار آج جمعیت کسان فیڈریشن کی صوبائل مجلس عاملہ کے خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی چیرمین آرگنائزر عابد قریشی نے کہا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ سرحدی علاقوں میں محکمہ شہری دفاع کی تنظیم انتہائی اہمیت کی حاصل ہے ۔جبکہ قصور ضلع میں یہ محکمہ خواب غفلت کا شکار ہے اور عملاً اس تنظیم کا وجود کاغذوں میں اور چند نفاد پرست اور خوشامدی عہدے داروں پر مشتمل ہے ۔ جو آپس میں ایک دوسرے کی خوشامد کے علاوہ کچھ بھی نہیں کرتے ۔ موجودہ تنظیمی ڈھانچہ 1970سے پہلے کا ہے جبکہ تب آبادی ڈیڑھ لاکھ سے بھی کم تھی اور قصور کو صرف تحصیل ہیڈ کواٹر کا درجہ حاصل تھا جبکہ موجودہ آ بادی چھلاکھ سے زیادہ اور قصور کو ضلع کا درجہ حاصل ہوئے بھی چالیس سال ہو چکے ہیں ۔ اور مزید تین تحصیلوں کا اضافہ بھی ہو چکا ہے ۔قصور سرحدی شہر ہونے کی وجہ سے حالت جنگ میں ہے لیکن شہری دفاع کا محکمہ اور اس سے وابستہ لوگ غفلت کی نیند سوئے ہوئے ہیں اور گھر بیٹھے تنخواہیں وصول کر رہے ہیں ۔ ہم حکام بالا سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس صورتحال کا جانبداری سے جائزہ لیا جائے اور شہری دفاع کے علاوہ بوائے سکاوٹس اور گرل گائیڈ ز کو بھی فعال کیا جائے ۔ اس موقع پر مہمان خصوصی کرنل عباس خان نے اظہار خیال کرتے ہوے کہا کہ شہری دفاع پورے ملک میں متحرک نہ ہے بلکہ نکما ترین محکمہ ہے جس کا کوئی بھی پرسان حال نہیں ہے ۔ صوبائی سطح پر کم بجٹ مہیا کیا جاتا ہے اور نہ ہی اس کی کارکردگی کا جائزہ لیا جاتا ہے نہ ہی اس کی جانچ پڑتا ل کا منظم اور موثر طریقہ ہے صرف چند مخصوص دنوں کے لئے افسران رانمائی کروا کر غائب ہو جاتے ہیں ۔ ، دہشت گردی اور سیکورٹی معاملات میں شہری علاقوں میں اس محکمہ کو فعال کیا جائے ۔ اور مقامی فوجی حکام اس کی سرگرمیوں سے آ گاہ ہوں انہوں نے مطالبہ کیا ہے کہ پورے ملک میں تقریباًپچیس لاکھ ریٹائرڈ فوجی اور افسر ہیں ۔ انہیں بھی شہری دفاع کے معاملات میں محکمانہ طور پر مستقل پالیسی کردار سونپا جائے اور ان کے تجربوں سے فائدہ اُٹھایا جائے ۔ اس اجلاس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ شہری دفاع کے عہدے داران اور رضا کاروں کے لئے دفاتر اور دیگر تمام مناسب سہولتوں کا اہتمام فوراً کیا جائے سیاسی مداخلت بھی بند کرائی جائے

یہ بھی پڑھیں  اسلام آباد، پشاور، لاہوراورکراچی میں بارش سے موسم خوشگوار

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker