تازہ ترینعلاقائی

داؤدخیل:نوید کے قتل کو 3ماہ کا عرصہ ہوگیا،ابھی تک مرکزی ملزم پیش نہ ہوسکا، انصاف فراہم کیا جائے، اہل خانہ

داؤدخیل (ضیانیازی سے ) محمد نوید کے قتل کو 3ماہ کا عر صہ ہو گیا ،ابھی تک مر کزی ملزم اشرف پیش نہ ہو سکا ،وقوعے میں استعمال ہو نیوالی موٹر سائیکل بھی قبضہ میں نہیں لی گئی،ہماری کسی سے کو ئی دشمنی نہیں تھی ، بے دردی سے بے گناہ قتل کیا گیا ۔وزیر اعلیٰ پنجاب، آئی جی پنجاب،ڈی پی او میانوالی ہمیں انصاف فراہم کر یں۔اہل خانہ،تفتیش میرٹ پر جاری ہے انصاف کے تمام تقاضے پورے کر یں گے ،تفتیشی آفیسر کا میڈیا کے نمائندوں سے اظہار خیال۔تفصیلات کے مطابق، تھا نہ کالا باغ کے علاقہ کوٹ چاندنہ کی تاریخ میں 3ماہ قبل المناک ،سفاکانہ قتل ،مقتول 23سالہ محمد نوید کے والدمحمدعزیز،دادا محمد شریف،دادی وزیراں بی بی،والدہ رخسانہ بی بی نے پر یس کانفرنس کر تے ہو ئے کہا کہ محمدنوید کوظالموں نے تیز دھار آلے سے گلہ کاٹ کر انتہائی بے دردی کے ساتھ قتل کر دیا،ظلم کی انتہاء کی گئی کوٹ چاندنہ کی تاریخ میں بربریت کی نئی مثال قائم کی گئی،اس قتل کے بعد علاقے میں ابھی تک خوف ہراس پایا جاتا ہے۔اہل خانہ نے میڈیا کو تفصیل بتاتے ہو ئے کہا کہ وقوعے کی رات محمدنوید کادوست محمد اشرف ولد سرفراز قوم نصر خیل پٹھان سکنہ نئی آباد ی کوٹ چاندنہ اپنی موٹر سائیکل لے کر آیا اور کہا کہ میں اور محمدنوید نے پیر قدیر شاہ کی شادی پر دربار کوٹ چاندنہ پروگرام میں شرکت کر نے جانا ہے ،یہ کہہ کر دونوں موٹر سائیکل پر سوار ہو کر چلے گئے جب رات گئے تک نوید گھر نہیں لوٹا ۔تو ہمیں تشویش ہوئی ۔ہم نے ہر جگہ تلاش کیا ۔محمداشرف سے رابطہ کیا ان کے گھر گئے وہ باہر بھی نہیں آئے اور اندر سے لاعلمی کا اظہار کیا جس پر ہماری پر یشانی مزید بڑھ گئی ہم رات بھر نوید کو تلاش کر تے رہے،صبح نوید کی لاش کیمپ روڈ ریلوے پل کے قریب ملی جس کا تیز دھار آلے سے گلہ کٹا ہو ا تھا،منہ ،ہاتھوں ،کندھے اور پشت پر زخموں کے نشانات تھے۔انہوں نے کہا کہ،قتل کا مرکزی ملزم اشرف پی ایف سرگودھا میں ملازم ہے قتل کے بعد صبح سویرے گھر سے ڈیوٹی پر سرگودھا چلا گیا۔عرصہ تین ماہ گزر جانے کے بعد پیش نہ ہو سکا۔جبکہ دیگر تین ملزم سر فراز،شوکت،محمد اکرام اللہ گرفتار ہیں،ابھی تک وہ موٹر سائیکل بھی قبضہ میں نہیں لی گئی جو وقوعے میں استعمال ہو ئی۔پولیس کوشش کر رہی ہے ،ابھی تک کو ئی نتیجہ نہیں نکلا۔ والد محمدعزیز نے بتایا کہ ہم نے ڈی ایس پی سرکل سے ملاقات کی انہوں ہمیں انصاف کی فراہمی کا مکمل یقین دلایا مگر جب تک مر کزی اشرف پیش نہیں ہو تااس کو سر گودھا سے تھانہ کالاباغ نہیں لایا جاتا ہمیں انصاف نہیں مل سکتا،ہماری وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف،آئی جی پنجاب،ڈی پی او میانوالی سے اپیل ہے کہ ہمار ے بچے کو بے گناہ قتل کیا گیا ہے قاتلوں کو عبر ت ناک انجام تک پہنچانے، مرکزی ملزم اشرف کو تھانہ کالاباغ پولیس کے حوالے کرنے اور ہمیں انصاف دلانے میں کر دار ادا کر یں۔میڈیا کے نمائندوں نے جب اس قتل کے تفتیشی S Iفیض حمیدتھا نہ کالاباغ سے رابطہ کیا تو انھوں نے بتایا کہ ابھی تفتیش کسی نتیجے پر نہیں پہنچی،مگر ہم میرٹ پر تفتیش کر رہے ہیں ،مظلوموں کو انصاف دلانا ہم اپنا فرض سمجھتے ہیں ہماری کوشش جاری ہے کہ مرکزی ملزم اشرف گرفتار کیا جائے تاکہ تفتیش کو کسی نتیجے پر پہنچایا جاسکے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker