تازہ ترینعلاقائی

ٹیکسلا:موٹروے پولیس کاوحدت کالونی سٹاپ پرہیوی گاڑیوں کی غیر قانونی پارکنگ کے خلاف کریک ڈاون

ٹیکسلا(ڈاکٹر سید صابر علی/ نا مہ نگار)نیشنل ہائی وے اینڈ موٹروے پولیس کاجی ٹی روڈوحدت کالونی سٹاپ پر ہیوی گاڑیوں کی غیر قانونی پارکنگ کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاون ،ٹریفک اور آمد و رفت میں خلل پیدا کرنے والے سیخ پا ، موٹر وے پولیس کو انتہائی سنگین نتائج کی دھمکیاں ،وردی میں ملبوس موٹر وے پولیس کے ایس پی او کے ساتھ مڈبھڑ، موٹروے نے حالات کی سنگینی کو بھانپتے ہوئے اپنے اعلیٰ افسران اور مقامی پولیس کو اطلاع کردی،پولیس نے موقع پر پہنچ کر واقعہ میں ملوث افراد کو گرفتار کر لیا، جبکہ موٹروے پولیس کے افسران ڈی ایس پی و دیگر موقع پر پہنچ گئے،پولیس نے موٹروے پولیس افسران کی درخواست پر ملزمان شیخ عادل ، محمد آصف اور چھ نامعلوم افراد کے خلاف زیر دفعات 341,186,353 اور 506(ii) کے تحت مقدمہ درج کر کے معاملہ کی تفتیش شروع کردی،حکومت کو بھاری ٹیکس ادا کرتے ہیں ،پھر بھی موٹر وے پولیس ناجائز طور پر ہمیں حراساں کرتی ہے، نہ وردی پر ہاتھ ڈالا اور نہ گالم گلوچ کیا ،شیخ عادل کی تھانہ ٹیکسلا میڈیا سے گفتگو ، قانونی چارہ جوئی کرنے پر بدمعاش بلا کرہمیں تھریڈ کیا گیا، ان کے پاس اسلحہ بھی تھا ، جی ٹی روڈ سے غیر قانونی پارکنگ کو ہٹانا ہمارے فرائض میں شامل ہے ،وردی کے بٹن توڑے ،سنگین نتائج کی دھمکیاں دیں،ہمارا کام قانون کی عمل داری ہے موقع پر موجود موٹرے وے پولیس کا موقف ،تفصیلات کے مطابق موٹر وے پولیس ٹیکسلا سرکل کے ایس پی او ندیم گل اور سب انسپکٹر ایوب معمول کی گشت پر تھے کہ وحدت کالونی جی ٹی روڈ سٹاپ پر روڈکنارے غیر قانونی گاڑیوں کی پارکنگ اور آمد و رفت میں خلل پیدا کرنے پر ایکشن لیتے ہوئے لاہوری اڈہ پر موجود گاڑیوں کے چالان کئے اور گاڑیوں کے ٹائروں سے ہوا نکال دی جس پرکنٹریکٹر نمرا اینڈ کو شیخ عادل موقع پر پہنچ گئے اور انکی موٹر وے پولیس کے ساتھ مڈبھڑ ہوگئی ،موٹر وے پولیس کے ایس پی او ندیم گل کا کہنا تھا کہ روڈ کنارے روز انہ یہ لوگ گاڑیاں کھڑی کرتے ہیں ،جس سے نہ صرف روڈ بلاک ہوجاتی ہے بلکہ آمد و رفت میں بھی خلل واقعہ ہوتا ہے،جب انھیں منع کیا گیا تو انھوں نے ہمیں تھریڈ کیا اور سنگین نتائج کی دھکمیاں دیں ندیم گل کے مطابق انھیں کہا گیا کہ جو حشر ہم نے سنگجانی ٹول پلازے پر موٹڑ وے پولیس کا کیا تھا اس سے بھی برا حشر تمھارا کریں گے اسی دوران انھوں نے بلند آواز کے ساتھ اڈہ پر موجود دیگر ساتھیوں کو بلایا جو مسلح تھے اور آتے ساتھ انھوں نے ہمارے ساتھ بدتمیزی کی اور سنگین نتائج کی دھممکیاں دیں جس پر ہم نے فوری طور پر مقامی پولیس کو فون کیا اور اپنے افسران کو واقعہ سے مطلع کیا، ادہر شیخ عادل کا کہنا تھا کہ وہ شریف شہری ہیں موٹڑ وے پولیس والے بلا وجہ انھیں آئے روز تنگ کرتے ہیں ، جبکہ ہم حکومت کو ہر سال تین لاکھ روپے ٹیکس دیتے ہیں80 ہزار انکم ٹیکس جبکہ جتنا گاڑیوں پر سامان لوڈ کرتے ہیں ایڈوانس دو فیصد ٹیکسلا کی کٹوتی ہوتی ہے،این ایچ اے کو فی ٹول پلازہ دو سو بیس روپے ادا کر رہے ہیں بجائے اس کے کہ این ایچ اے ہمیں سہولیات مہیا کرے الٹا ہمارے ساتھ سوتیلی ماوں جیسا سلوک رو ارکھا جاتا ہے،انھوں نے موٹر وے پولیس کی جانب سے لگائے گئے الزامات کو بے بنیا د قراردیتے ہوئے کہا کہ میں ایک سرکاری کنٹریکٹر ہوں اور ذمہ داری سے بات کر رہا ہوں ایسا کچھ نہیں ہوا جسے موٹروے پولیس بنیاد بنا کر ہمارے خلاف کاروائی کرنا چاہتی ہے،انکا کہنا تھا کہ یہ ضرور ہے کہ ہم نے انھیں گاڑیوں سے ہوا نکالنے پر منع کیا،ادہر شیخ عادل کے وکیل بھی موقع پر پہنچ گئے انکا کہنا تھا کہ موٹر وے پولیس نے جو لاکھوں روپے کا بلا وجہ نقصان کیا ہم انکے خلاف کورٹ میں جائیں گے،ہمارے کلائنٹ کو غیر قانونی طور پر حراساں کیا جارہا ہے ،جبکہ ملک کے شہری ہونے کے ناطے انکے بھی کچھ حقوق ہیں جنہیں موٹر وے پولیس نے اپنے برے رویوں سے سبوٹاژ کررکھا ہے اسی لئے لوگوں کا اعتماد موٹروے پولیس سے اٹھتا جارہا ہے،ادہر تصویر کا دوسرا رخ ٹیکسلا کے ایک شہری غلام ربانی کا کہنا تھا کہ ٹیکسلا میں غیر قانونی گڈز ٹرانسپورٹ کے اڈوں کی بھر مار ہے جس پر آج تک کوئی کاروائی نہیں کی گئی جبکہ ان سینکڑوں اڈوں کی موجودگی میں حکومت کو ریونیوکی صورت میں لاکھوں روپے کی پھکی دی جارہی ہے،کیونکہ یہ اڈہ مالکان پولیس کی ملی بھگت اور مقامی انتظامیہ سے مک مکا کر ٹیکس لاکھوں روپے ٹیکس بچاتے ہیں،قانونی طور پر تین چار کے علاوہ کوئی گڈز اڈہ قانونی تقاضے پورے کرتے ہوئے رجسٹرڈ نہیں ،گڈز ٹرانسپورٹ کی آڑ میں متعدد غیر قانونی کام ہورے ہیں، اس ضمن میں متعدد بار انتظامی افسران کو تحریری طور پر متنبہ کیا گیا مگر اس پر آج تک کوئی ایکشن نہیں ہوا،انھوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ اس پر بھرپور کریک ڈاون ہونا چاہئے تاکہ غیرقانونی خلاف ضابطہ حرکات میں ملوث مشکوک افراد کا قلع وقمع ہو،چیک اینڈ بیلنس کے ناقص نظام کی وجہ سے ایسے لوگوں پر کوئی ہاتھ نہیں ڈالتا ،انھوں نے اس تمام معاملہ میں مقامی انتظامیہ کے ملوث ہونے کا بھی قوی اندیشہ ظاہر کیا جو مجرمانہ غفلت کے مرتکب ہورہے ہیں،ادہر موٹر وے پولیس کے افسر ایس پی او ندیم گل جو کہ کیس کے مدعی ہیں کے مطابق تھانہ ٹیکسلا کا سب انسپکٹر ندیم کیانی ملزم شیخ عادل کی بھرپور سائٹ لے رہا تھا جبکہ ہم نے پولیس کو پکڑ کر ملزمان دیئے اس کے باوجود سب انسپکٹر ندیم کیانی کی ملی بھگت سے اثر ورسوخ کے حامل ملزم شیخ عادل کو فرار کرا دیا گیا جبکہ محمد آصف پولیس کی قید میں ہے ،معاملہ سے پولیس کی ملی بھگت آشکار ہوگئی ہے پولیس کی مجرمانہ غفلت اور ملزمان کی پشت پناہی پر موٹروے پولیس نے اعلیٰ حکام سے فوری نوٹس لینے اور سب انسپکٹر ندیم کیانی کے خلاف سخت محکمانہ کاروائی کا مطالبہ کیا ہے ،زرائع سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ یہ لوگ پولیس کو ماہانہ بنایدوں پر باقائدہ بھتہ دیتے ہیں جس کی وجہ سے مقامی پولیس نے اپنی آنکھیں موند رکھی تھیں اور یہ لوگ سر عام غیر قانونی کاروائیوں میں مصروف تھے ،پولیس کی آشیر باد نے انھیں حوصلہ پیدا کر رکھا تھا جس پر موٹروے پولیس نے انکا بھانڈا پھوڑ دیا، عوامی حلقوں کی جانب سے پولیس ، محکمہ این ایچ اے ، مقامی انتظامیہ مطالبہ کیا گیا ہے کہ غیر قانونی اڈوں کے خؒ اف بھرپور کریخ ڈاون کر کے انکی غیر قانونی سرگرمیوں کو اجاگر کیا جائے ، جبکہ غیر رجسٹرڈ گڈز ٹرانسپورٹ اڈوں کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے،

یہ بھی پڑھیں  پنجاب میں مزید 3 افراد میں ڈینگی وائرس کی تصدیق، مریضوں کی تعداد 37 ہوگئی

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. حقیقت میں قانون اور اخلاق دونوں کی کمزوریاں ہیں اور دولت بھی اڑے آتی ہے اور ساتھ ہی ہر طرف ناانصافیاں ہی نا انصافیاں ہیں جس کی وجہ سے یہ حالات پیدا ہو رہے ہیں اور اگر ہر آدمی اپنی ڈیوٹی صحیح طور پر ادا کرے تو یہ مسائل کبھی بھی پیدا نہیں ہوتے۔ ناجائز تجاوزات کے خاتمے کے ساتھ ساتھ پولیس کو بھی اپنی ڈیوٹی سخت کرنی چاہئے اور بدنصیبی سے ہر مسئلے میں سیاسی مداخلت نے حالات کو گندا کیا ہوا ہے۔ جس کہ وجہ سے دن بدن حالات خراب ہورہے ہیں۔ جس طرح پولیس اور وکیل اپس میں لڑ رہے ہیں دوسری طرف پولیس اور عوام اپس میں لڑ رہے ہیں ایک طرف مذہہبی گروپ اور حکومت اپس میں لڑی رہی ہے گویا کہ ایک جنگ ہے جو جاری ہے وجہ یہ ہے کہ حقوق کی پامالی ہو رہی ہے۔ اور انصاف کی دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں۔ دولت نے مسلمانوں کو تباہ و برباد کر دیا ہے۔ سیاسی نظام نے باقی معاملات پر تیل ڈالا ہوا ہے۔ کوئی شخص بھی اس معاملے میں مخلصانہ سوچ کا حامل نہیں ہے۔ جس کی وجہ سے حالات دگرگوں ہو رہے یں۔ اللہ تعالی ہم سب لوگوں پر اپنا کرم کرے اور ہمیں انساٖ کرنے کی توفیق عطا فرمائے

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker