تازہ ترینعلاقائی

قصور:20گھنٹے کی لوڈشیڈنگ نے عوام کا جینا محال کردیا۔

load sheedingقصور( حافظ جاویدالرحمن سے ) قصور میں 18سے20گھنٹے کی غیر اعلانیہ لو ڈشیڈنگ نے قصور کے عوام کی چیخیں نکلوا دیں گھروں اور مساجد میں پانی کی عدم دستیابی کی وجہ سے اکثر لوگ نماز جمعہ نہ پڑھ سکے جبکہ گھریلو خواتین امور خانہ داری سے محروم رہیں تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز قصور شہر میں بجلی کی18گھنٹے کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ نے عوام کا بھرکس نکال دیا جبکہ گرمی کی شدت سے کئی افراد بے ہوش ہوگئے قصور شہر میں اس وقت روزانہ کے حساب سے بجلی صرف 2سے 3گھنٹے یومیہ کے حساب سے دی جا رہی ہے جس کی وجہ سے کاروباری حضرات اور دوکانداروں کے کاروبار ٹھپ ہو کے رہ گئے ہیں بجلی کی اس غیر اعلانیہ بندش سے سکولوں کے طالب علم اور کئی طالبات سکول نہ جا سکے جس کی وجہ ساری رات بجلی کے نہ ہونے کی وجہ اور صبح پانی کی عدم دستیابی سے سکول کیلئے تیار نہ ہو سکنا اس کے علاوہ گھریلو خواتین کو امور خانہ داری میں بھی بجلی کی لوڈ شیڈنگ نے متاثر کیا قصور کی مذہبی اور سماجی شخصیات کا کہنا ہے کہ قصور میں مسلم لیگ ن کی تاریخی فتح پاکستان پیپلز پارٹی کو ایک آنکھ نہیں بھائی جس کے باعث قصور کی عوام کو اس عذاب سے پریشان کیا جا رہا ہے جبکہ پیپلز پارٹی کے عہدایداران کا کہنا ہے کہ اور شیر کو ووٹ دو اب دیکھیں گے کہ کو ن تمہیں بجلی مہیا کرتا ہے اور کون لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کرتا ہے یہ سب کھوکھلے نعرے ہیں اور کھوکھلے وعدے ہیں 2یا 3ماہ میں جلد ہی تم لوگ اپنے ان نئے لیڈروں کا بھی احتساب کرو گے

یہ بھی پڑھیں  پی سی بی نے آل راؤنڈر اظہر محمود سے رابطہ کرلیا

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی پاکستان کا عوامی منشور:

    قومی مسائل کو جڑ سے ختم کرنا ہمارا مقصد ہے۔ بے روزگاری ختم کرنے کیلئے ہر
    یونین کونسل میں کارخانہ یا فیکٹری بنائیں گے اور ملک کو ترقی کی راہ پر
    گامزن کریں گے۔ ملکی دریاؤں کو آپس میں ملا کر پانی کی مقدار بڑھائیں گے
    اور پیٹرول کی بجائے پانی سے سستی بجلی تیار کر کے لوڈشیڈنگ ختم کریں گے۔
    کالا باغ ڈیم ہنگامی طور پر مکمل کریں گے۔ زرعی، گھریلو، تعلیم، صحت، پیٹرولیم،
    گولڈ، یوٹیلیٹی بلز کی قیمتیں بجٹ میں سال کیلئے مقرر کر کے مہنگائی پر
    کنٹرول کریں گے۔ صحت و علاج معالجہ، تدریسی و فنی تعلیم بالکل مفت ہو گی۔
    غیر ملکی اداروں و حکومتوں سے عوام کے نام پر قرض لینا ممنوع قرار دیں گے۔
    تمام عہدیداروں کے کوٹے ختم کریں گے۔ بیرون مل دوروں کی بجائے سفیروں سے
    کام لیں گے۔ بیس انتظامی یونٹ اور بیس وفاقی ادارے تشکیل دے کر قومی حلقہ
    کو تحصیل بنائیں گے۔ ہر عہدہ کیلئے قابل افراد کو چنیں گے۔ ہر ادارے میں
    آفیسر کم اور ورکر بڑھائیں گے۔ تعلیم اردو، انگلش، عربی میں ہو گی اور نصاب
    ملکی اداروں کی بنیاد پر ہو گا۔ حکومت ہر گریجویٹ طالبعلم کو روزگار مہیا
    کرے گی۔ عدلیہ آئین قرآن مجید کے مطابق فیصلہ کرے گی۔

    ماٹو: انصاف اتحاد ترقی
    نعرہ: نظام بدلنا کافی نہیں۔ نظام ٹھیک کرو

    کاش
    عوام الیکشن امیدواروں سے صرف بریانی کھانے پر اکتفا کرنے کی بجائے ان سے
    سوال کرتے کہ وہ کامیاب ہونے کے بعد کیا کریں گے۔ جو عوام الیکشن سے پہلے
    سوال کرنے کی ہمت نہیں کرتی حکومت سے وہ کونسا مطالبہ منظور کروا سکتے ہیں

  2. جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی پاکستان کا عوامی منشور:

    قومی مسائل کو جڑ سے ختم کرنا ہمارا مقصد ہے۔ بے روزگاری ختم کرنے کیلئے ہر
    یونین کونسل میں کارخانہ یا فیکٹری بنائیں گے اور ملک کو ترقی کی راہ پر
    گامزن کریں گے۔ ملکی دریاؤں کو آپس میں ملا کر پانی کی مقدار بڑھائیں گے
    اور پیٹرول کی بجائے پانی سے سستی بجلی تیار کر کے لوڈشیڈنگ ختم کریں گے۔
    کالا باغ ڈیم ہنگامی طور پر مکمل کریں گے۔ زرعی، گھریلو، تعلیم، صحت، پیٹرولیم،
    گولڈ، یوٹیلیٹی بلز کی قیمتیں بجٹ میں سال کیلئے مقرر کر کے مہنگائی پر
    کنٹرول کریں گے۔ صحت و علاج معالجہ، تدریسی و فنی تعلیم بالکل مفت ہو گی۔
    غیر ملکی اداروں و حکومتوں سے عوام کے نام پر قرض لینا ممنوع قرار دیں گے۔
    تمام عہدیداروں کے کوٹے ختم کریں گے۔ بیرون مل دوروں کی بجائے سفیروں سے
    کام لیں گے۔ بیس انتظامی یونٹ اور بیس وفاقی ادارے تشکیل دے کر قومی حلقہ
    کو تحصیل بنائیں گے۔ ہر عہدہ کیلئے قابل افراد کو چنیں گے۔ ہر ادارے میں
    آفیسر کم اور ورکر بڑھائیں گے۔ تعلیم اردو، انگلش، عربی میں ہو گی اور نصاب
    ملکی اداروں کی بنیاد پر ہو گا۔ حکومت ہر گریجویٹ طالبعلم کو روزگار مہیا
    کرے گی۔ عدلیہ آئین قرآن مجید کے مطابق فیصلہ کرے گی۔

    ماٹو: انصاف اتحاد ترقی
    نعرہ: نظام بدلنا کافی نہیں۔ نظام ٹھیک کرو

    کاش
    عوام الیکشن امیدواروں سے صرف بریانی کھانے پر اکتفا کرنے کی بجائے ان سے
    سوال کرتے کہ وہ کامیاب ہونے کے بعد کیا کریں گے۔ جو عوام الیکشن سے پہلے
    سوال کرنے کی ہمت نہیں کرتی حکومت سے وہ کونسا مطالبہ منظور کروا سکتے ہیں

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker