تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو:شہربھرمیں عطائیوں نےایم بی بی ایس ڈاکٹر وں کے سائن بورڈ لگا کرعوام کولوٹنا شروع کردیا

bhai pheruبھائی پھیرو(نامہ نگار) شہر بھر میں عطائیوں نے پروفیسروں و ایم بی بی ایس ڈاکٹر وں کے سائن بورڈ لگا کر عوام کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنا شروع کردیا،نیم حکیموں نے جگہ، جگہ دلکش کلینکس بنا کر عوام کو جعلی کشتے کھلا کھلا کر اگلے جہان پہنچا دیا،نرسوں و دائیوں نے جگہ، جگہ زچہ بچہ سینٹر بنا کرکئی عورتوں کو دوران ڈلیوری موت کے گھاٹ اتاردیا،نشہء بیچنے والے میڈیکل سٹور وں کو کی کھلی چھٹی ،ڈی سی او قصور بے بس ،محکمہ صحت کے کرتا دھرتاؤں سے فوری طور پر نوٹس لینے کا مطالبہ ،شہری حلقوں میں بے چینی ۔تفصیلات کے مطابق شہر بھرمیں لاتعداد عطائی ڈاکٹروں ،نیم حکیموں ،نرسوں و دائیوں نے غیر قانونی کلینکس و ہسپتال بنا رکھے ہیں جہاں پر مہلک جان لیوا ،پچیدہ اور جنسی بیماریوں کا علاج سادہ لوح لوگوں کو گارنٹی کا لالچ دیکرکیا جاتاہے اور ان لوگوں سے بھاری معاوضہ وصول کرکے ان پر تجربات بھی کئے جاتے ہیں جبکہ تجربہ فیل ہونے پر کئی لوگ اپنی جانوں سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں اور اسی طرح نیم حکیموں کے جعلی کشتے کھانے سے کئی لوگ گردے فیل کرو اچکے ہیں اور کئی اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور انٹرینڈ دائیاں و نرسیں بھی جگہ جگہ کلینکس و زچہ بچہ ہسپتال بناکر کئی عورتوں کو دوران ڈلیوری موت کی وادی میں پہنچانے میں بہت اہم رول ادا کررہی ہیں اور کئی نیم حکیموں اور عطائی ڈاکٹروں نے تو اپنی دکانداری کو عروج پر پہنچانے کی خاطر کیبلز ،پمفلٹ،بورڈ ودیگر ذرائع سے پبلسٹی شروع کررکھی ہے یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ ان عطائی ڈاکٹروں و نیم حکیموں کے پاس میٹرک کی سند تک نہیں ہے مگر پھر بھی یہ محکمہ صحت کے عملہ کی ملی بھگت سے ہزاروں روپے رشوت دیکر کیٹیگریز حاصل کرکے اس مذموم دھندے میں دن رات مصروف عمل ہیں جبکہ رہی سہی کسر نشہء بیچنے والے میڈیکل سٹورں نے نکا ل رکھی ہے جہاں پر باآسانی نشہء دستیاب ہونے کی وجہ سے نوجوان اور طالب علم اپنا غم غلط کرنے کی خاطر ان میڈیکل سٹوروں کا رخ کرتے ہیں اور نشیلے ٹیکے و شربت حاصل کرکے مقامی قبرستانوں و گندی جگہوں پر بیٹھے ٹیکے لگانے و شربت پینے میں مصروف نظر آتے ہیں باوثوق ذرائع کا کہنا ہے کہ تحصیل ڈرگ انسپکٹر نے بھاری منتھلی کے عوض ان میڈیکل سٹور مالکان کو کھلی چھٹی دے رکھی ہے اور ان پر ہاتھ ڈالنے سے گریزاں ہے علاقہ بھر میں اتنا کچھ ہونے کے باوجود ضلعی انتظامیہ بے بس نظر آتی ہے؟ مقامی عوامی وسماجی حلقوں نے اس ساری صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے محکمہ صحت کے کرتا دھرتاؤں سے فوری طور پر نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں  نکاح اور جنسی خواہشات

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker