تازہ ترینعلاقائی

پاکستان کے اساتذہ معاشی لحاظ سے ابتر زندگی گزارنے پرمجبور

bhai pheruبھائی پھیرو(نامہ نگار) پاکستان کے اساتذہ معاشی لحاظ سے ابتر زندگی گزارنے پر مجبور ہیں خاص طور پر پنجاب کے اساتذہ کے ساتھ ہمیشہ سوتیلی ماں کاسلوک کیا جاتا رہا ہے۔وفاق سمیت دوسرے صوبوں میں PSTاساتذہ کو سکیل نمبر 14، EST کو سکیل نمبر16،SST کو سکیل نمبر 17دیدیا گیا ہے لیکن پنجاب کے اساتذہ کو ابھی تک PSTکو سکیل نمبر 09،ESTکو سکیل نمبر 14اور SST کو سکیل نمبر 16ہی دیا جاتا ہے جو کہ پنجاب کے اساتذہ کے ساتھ امتیازی سلوک ہے۔اساتذہ پریشانی کے عالم میں یہ سوچنے پر مجبور ہوجاتے ہیں شائد وہ پاکستان کے شہری ہی نہیں۔پاکستان کے آئین کے مطابق تمام شہریوں کو برابر کے حقوق حاصل ہیں لیکن اساتذہ کے ساتھ امتیازی سلوک کیوں روا رکھا جارہا ہے۔اساتذہ کو اپنے سر کا تاج قرار دینے والوں نے بھی قوم کے معماروں کے لئے کچھ نہیں کیابلکہ 2009میں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے حکم پر ریگولر ہونے والے ایک لاکھ سے زائد ایجوکیٹرزاساتذہ کی گذشتہ آٹھ سالہ سروس کو یکسر ختم کر دیا گیا ہے اور آٹھ سالوں میں اساتذہ جوبجٹ میں ہونے اضافے لے رہے تھے ان کو ختم کرکے تنخواہین کم کردی ہیں۔سابقہ سروس شمار نہ ہونے سے ان اساتذہ کو PST کو ماہانہ دو سے چار ہزار، ESTکو چار سے آٹھ ہزار،SSTکو سات سے دس ہزار کا نقصان اٹھانا پڑ رہاہے جو کہ قوم کے معماروں کے ساتھ زیادتی ہے۔پنجاب بھر کے اساتذہ نگران صوبائی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ان کو وفاق کی طرز پر چودہواں، سولہواں اور سترہواں سکیل دیا جائے اور کنٹریکٹ سے ریگولر ہونے والے اساتذہ کی کی تنخواہوں سے کٹوتی بند کی جائے۔

یہ بھی پڑھیں  انسانی اعضاء کی بے حرمتی اور خورشید شاہ کی منطق

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker