تازہ ترینعلاقائی

ٹیکسلا:مریضوں کے لئے بھی بہتر علاج معالجے کا سبب بنتا ہے، ڈاکٹر سید اسد علی

ٹیکسلا(نا مہ نگار )پاکستان اکیڈمی آف فیملی فزیشن ٹیکسلا /واہ/حسن ابدال چیپٹر کے صدر ڈاکٹر سید اسد علی نے کہا ہے کہ اس طرح کی ورکشاپس کا انعقاد ڈاکٹرز اور انسٹیوٹس کے درمیان باہمی رابطے ہموار کرتا ہے اور مریضوں کے لئے بھی بہتر علاج معالجے کا سبب بنتا ہے،ڈاکٹر محمد سیف الحق نے کہا کہ مرض کی بروقت تشخیص اور مناسب علاج سے مرج کو ابتدائی سٹیج پر ہی کنٹرول کیا جا سکتا ہے ان خیالات کا اظہار انھوں نے پاکستان اکیڈمی آف فیملی فزیشن اور بقائی انسٹی ٹیوٹ برائے علاج زیابیطس کے اشتراک سے ڈاکٹرز کی راہنمائی کے لئے مقامی ہوٹل میں منعقدہ ورکشاپ سے خطاب کے دوران کیا ،تقریب میں پاکستان اکیڈمی آف فیملی فزیشن کے ممبران کے علاوہ دیگر پرائیویٹ و سرکاری ہسپتالوں کے ڈاکٹرز صاحبان نے بھی شرکت کی،ورکشاپ میں کراچی سے خصوصی طور پر آنے والے ڈاکٹر سیف الحق نے ذیابیطس کے مرض پر لیکچر دیا، اور قومی و بین الاقوامی اعداد و شمار کی روشنی اور ریسرچ کے حوالوں سے ذیابیطس کے مریضوں میں پاؤں کی سوزش زخم اور اسکی علامات و علاج کے بارے میں بریفنگ دی،انھوں نے کہا کہ شوگر کی پہلی علامات میں پاؤں پر سوزش اور زخم کا بڑھ جانا ہے ، اس پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے،اگر ان علامات کو نظر انداز کیا جائے تو اسکے تباہ کن اثرات مرتب ہوتے ہیں،جس کی وجہ سے آخر کار مریض کے پاؤں کو کاٹنا پڑتا ہے، انھوں نے کہا کہ معالج کے ساتھ ساتھ عام عوام بالخصوص جن مریضوں کو شوگر کا مرض بھی لاحق ہو انکو چاہئے کہ وہ پاؤں کی خصوصی حفاظت کریں،اور اگر سوزش یا زخم کی علامات ظاہر ہونا شروع ہوں تو فوراً معالج سے رابطہ کریں،اس موقع پر ڈاکٹر الہی بخش، ڈاکٹر آئیون اعجاز بھٹی، ڈاکٹر برکی، ڈاکٹر رانا اجمل،ڈاکٹر احمد اقبال،ڈاکٹر اشتیاق احمد،ڈاکٹر میر اختر،ڈاکٹر نوید،ڈاکٹر سعیدہ،ڈاکٹر آسیہ اشعر،ڈاکٹر نیلم،ڈاکٹر رومانہ،ڈاکٹر مہوش،ڈاکٹر سحرش،ڈاکٹر معین، ڈاکٹر لطیف ، ڈاکٹر احسان سمیت دیگر ڈاکٹرز نے شرکت کی ۔نظامت کے فرائض جنرل سیکرٹری پاکستان اکیڈمی آف فیملی فزیشن واہ ٹیکسلا حسن ابدال چیپٹر ماہر چائیلڈ سپیشلسٹ ڈاکٹر الہیٰ بخش اعوان ادا کر رہے تھے،ایکسپرٹ اوپینین کے لئے سرجن نوید کی خدمات حاصل کی گئیں تھیں جنہوں نے شوگر کے مریضوں کے پاوں میں زخم کے حوالے سے جدید میڈیکل سے استفادہ حاصل کرنے اور اسکے بچاو، بر وقت تشخیص ، علاج پر مفصل روشنی ڈالی،انکا کہنا تھا کہ جب خون کی شریانیں سکڑ جائیں تو بلڈ سرکولیشن متاثر ہوتی ہے،اصل تشخیص شریانوں کا بروقت معانہ کرنا اور بلڈ سرکولیشن کو بحال کرنا ہے جس کے لئے مینول طریقے سے بھی اس عمل کو چیک کیا جاسکتا ہے،انکا کہنا شوگر کے مریضوں کے زخم ٹھیک نہ ہونے کی بنیادی وجہ شریانوں کا بند ہونا ہوتا ہے جب انھیں کھول دیا جائے تو زخم جلدی ٹھیک ہوجاتا ہے ،تمام جی پی ایز کو اس بات کا ادراک رکھنا چاہئے ، جس سے شوگر کے مریض صحت کی جانب گامزن ہوتے ہیں

یہ بھی پڑھیں  جمبر: نیشنل ہائی اے اینڈ موٹر وے پولیس کے زیر اہتمام یوم یکجہتی کشمیر کی ریلی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker